دیامیر بھاشا سمیت کسی منصوبے کیلئے پیسے نہیں ریور راوی فرنٹ منصوبے سے اربوں ڈالر کیسے بنائے جائیں گے؟ن لیگ نے وزیراعظم کو عوامی غیض و غضب سے پہلے اقتدار سے الگ ہونے کا مشورہ دیدیا

  ہفتہ‬‮ 8 اگست‬‮ 2020  |  19:58

لاہور(این این آئی)پاکستان مسلم لیگ (ن) نے وزیر اعظم عمران خان سے استعفے کا مطالبہ دہراتے ہوئے کہاہے کہ اس سے پہلے عوام آپ کو غیض و غضب کا نشانہ بنائیں آپ خود ہی اقتدار سے الگ ہو جائیں،سی پیک کے ثمرات تباہ ہو رہے ہیں،بڑے بڑے دعوؤں کے باوجود عمران خان دو سال میں معیشت ٹھیک نہیں کر سکے تو پچاس سالوں میں بھی نہیں کرسکیں گے،دیامیر بھاشا ڈیم سمیت کسی قومی منصوبے کیلئے پیسے نہیں،ریور راوی فرنٹ منصوبے سے اربوں ڈالر سے کیسے بنائے جائیں گے؟اگرآپ کے پاس پیسے ہیں تو 10ارب روپے ہائیر ایجوکیشن کمیشن کو دیدیں،نیب


پی ٹی آئی کا ذیلی ادارہ ہے جس دن چینی چوروں، بی آر ٹی اور ادویات بحران کے ذمہ داروں کو پکڑا گیا تو اس دن کہیں گے ہوا کا رخ بدل رہاہے،آپ جھوٹے وعدے اورخواب دکھا کر حکومت میں آئے آپ سے حکومت نہیں چل رہی اس لئے بہتر ہے مستعفی ہو کر گھر واپس چلے جائیں،قائد اعظم کے پاکستان میں عمران خان کا فاشزم نہیں چلنے دیں گے،(ن) لیگ عوام کے حقوق پر پہرہ دے گی۔ ان خیالات کا اظہار مرکزی سیکرٹری جنرل احسن اقبال نے عطا اللہ تارڑ کے ہمراہ مرکزی سیکرٹریٹ ماڈل ٹاؤن میں ہنگامی پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا۔ احسن اقبال نے کہا کہ میڈیا نے پی ٹی آئی کی اتنی کردار کشی یا احتساب نہیں کیا جتنی (ن) لیگ کی گئی، ہم نے دھرنے یا ٹانگیں نہیں کھینچیں،ہمارے خلاف گھناؤنا کھیل کھیلا گیا،ہمارے خلاف دھرنے دئیے،بتائیں پی ٹی آئی کو کس نے کام کرنے سے روکا،اگر ہمیں ان کی طرح پانچ سال موقع ملتا تو ملک کی معیشت بہتر ہوتی،عمران خان نے قومی معیشت کو سات فیصد گرایااس کا حساب کون دے گا،ملکی تاریخ کے سب سے زیادہ قرضے لئے گئے ہیں،ملک کو قرضوں کی دلدل میں دھکیل دیا ہے لیکن ایک منصوبہ نہیں لگایا،اب ہمارے پانچ ہزار ارب کے راوی لاہور پراجیکٹ کا افتتاح کیا گیا، بتائیں اتنے پیسے کہاں سے آئیں گے؟،ہائیر ایجوکیشن کمیشن 10ارب روپے نہیں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سی پیک کیلئے چھ ارب روپے بجٹ میں رکھے گئے ہیں جو اس لحاظ سے دو سو سال میں مکمل ہوگا،دیامیر بھاشا ڈیم کیلئے 28ہزار روپے کے بجائے 16ارب روپے رکھے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بجلی گیس مہنگی اورتنخواہیں کم کرکے گڈ بیٹر نہیں کیا جا سکتا،ملکی تاریخ کاسب سے بڑا شٹ ڈاؤن ہوا ہے،ہم نے سٹارٹ اپ کیا،آج آپ جھوٹی تختیاں لگاکر عوام کو لولی پاپدے رہے ہیں،گندم اور آٹے کا بحران کس کی نالائقی اور کس کی کرپشن ہے،چینی کی قیمت سو روپے کس کی ملی بھگت سے ہو رہی ہے حالانکہ (ن) لیگ تو قیمت 52روپے فی کلو چھوڑ کر گئیت تھی، مہنگی چینی کا ذمہ دار کون ہے،حکومت آپ کی اور ادارے آپ کے ہیں،آپ کو حکومت نہیں چلانی آتی تیاری نہیں تھی صرف دھاندلی سازش سے وزیر اعظم بننے کا شوق تھا، عمران خان کا وزیر اعظم بننے کا شوق عوام کو مہنگا پڑا ہے،نوجوانوں سے مستقبل کی امید چھین لی گئی ہے کیونکہ معیشت کا پہیہ بند ہو گیاہے،سرمایہ کار حکومت کی پالیسی پر اعتماد نہیں کر رہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ کہنا کہ اپوزیشن نے فیٹف پر این آر او مانگا تھا یہ کہتے ہوئے آپ کو اس پر شرم آنی چاہیے،فیٹف پر حکومت کی چوری پکڑی ہے،فیٹف پر ملک پر ڈکٹیٹر کا قانون لانا چاہتے تھے،کسی کاروبار،بینکر کسی سول سوسائٹی کے لوگوں کو کاغذ کی پرچی پر جھوٹی رسید پر مسنگ پرسن کرسکتےتھے،اس لئے آپ نے کالے قانون کو واپس کیا،فیٹف کے لبادے میں گھناؤنی سازش کو بے نقاب کیا،کالے قانون پر حکومت کی چوری کو پکڑی جس پر ان کی چیخیں نکلی ہوئی ہیں،سازش ناکام ہو گئی وگرنہ فیٹف کے لفافے پر اپناکام کر لیتے۔ انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ (ن)قوم کے بنیادی حقوق کا مقدمہ لڑے گی، اگر عمران خان نے اپنا فاشزم نافذ کیا تو گلگت سے کراچی تک سیسہ پلائی دیوار بن جائیں گے،ہم عمران خان کی ڈکٹیٹر شپ قائم نہیںکرنے دیں گے ایک ایک پائی کے نقصان کا حساب لیں گے، تین سو ارب کے بجائے دو سو پینسٹھ ارب ڈالر تک جی ڈی پی تک لے آئے ہیں،معیشت سکڑتی ہے تو غریب مزدور و کسان سب سے زیادہ متاثر ہوتاہے،عمران خان سے حکومت نہیں چلتی تو خدارا حکومت چھوڑو،حکومت ٹیکس کی وصولی پر وہیں کھڑی جہاں (ن) لیگ چھوڑ کر گئی تھی،کتنی دیر کرپشن کا رونا روئیں گے،کرپشن کے کے ٹو آپ کی حکومت میں کھڑے کئے گئے ہیں،نیب کیہوا کا پتہ چلے گا جب شوگر مافیا پر ہاتھ ڈالا جائیگا،جس دن نیب بی آر ٹی پر پی ٹی آئی کو پکڑے گی تو پھر کہیں گے نیب نے ہواؤں کا رخ بدلا ہے،جس دن نیب دوائیوں اور آٹے چینی پر کرپشن پکڑے گی تو پھر کہیں گے تو پھر نیب کی بات ہو گی،نیب پر کسی کا اعتماد نہیں رہا، پی ٹی آئی کا ذیلی ادارہ بن چکا ہے،نیب مخالفین کے خلاف جھوٹے مقدمات بنارہاہے،نیب اندھا گونگا اور بہرہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ 2018 سے 2020 تک صنعتی تعاون کا دور تھا جن 9 اکنامک زونز بننے تھے اس سے غیر ملکی سرمایہ کاری اور روزگار آنا تھا لیکن ایسا کچھ نہیں ہواسی پیک کا اصل پھل صنعتی تعاون میں تھا اب چین کی ساری صنعتیں پاکستان کی بجائے دیگر ممالک میں جا رہی ہیں جس ملک میں افراط زر یا مہنگائی زیادہ اور گروتھ ریٹ کم ہو جائے تو اس میں کون سرمایہ کاری کرے گا۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

سرعام پھانسی

مجھے چند سال پہلے اپنے ایک دوست کے ساتھ اس کے گاﺅں جانے کا اتفاق ہوا‘ یہ پنجاب کے ایک مشہور گاﺅں کے چودھری ہیں‘ میں ان کے مہمان خانے میں ٹھہرا ہوا تھا‘ سردیوں کے دن تھے‘ میں صبح اٹھا تو مہمان خانے کے صحن میں پنچایت ہو رہی تھی‘میں نے کھڑکی کھولی اور کارروائی دیکھنے لگا‘ ....مزید پڑھئے‎

مجھے چند سال پہلے اپنے ایک دوست کے ساتھ اس کے گاﺅں جانے کا اتفاق ہوا‘ یہ پنجاب کے ایک مشہور گاﺅں کے چودھری ہیں‘ میں ان کے مہمان خانے میں ٹھہرا ہوا تھا‘ سردیوں کے دن تھے‘ میں صبح اٹھا تو مہمان خانے کے صحن میں پنچایت ہو رہی تھی‘میں نے کھڑکی کھولی اور کارروائی دیکھنے لگا‘ ....مزید پڑھئے‎