امارات کا اپنی شاہراہوں پر از خود چلنے والی کاروں کی جانچ کرنے کا اعلان

  بدھ‬‮ 10 ‬‮نومبر‬‮ 2021  |  16:24

دبئی(این این آئی)متحدہ عرب امارات نے اپنی شاہراہوں پر از خود چلنے والی کاروں کی جانچ کرنے کا اعلان کیا ہے۔ وہ از خود کاریں چلانے کا تجربہ کرنے والا مشرقِ اوسط میں پہلا اور دنیا کا دوسرا ملک ہوگا۔میڈیارپورٹس کے مطابق حاکم دبئی شیخ محمد بن راشد آل مکتوم نے یو اے ای میں یہ ایک اور نئی جدت متعارف کرانے کا اعلان کیا ۔ان کا کہنا تھا کہ اس طرز کی گاڑی کے بارے میں

ہماراہدف یہ ہے کہ یہ زیادہ محفوظ اور قابل اعتماد ہو۔انھوں نے ایک ٹویٹ میں کہاکہ آج میں نے دبئی ایکسپو 2020 میں کابینہ کے ایک اجلاس کی صدارت کی ہے۔اس میں ہم نے وزارت داخلہ کی یواے ای کی شاہراہوں پر ازخود چلنے والی کاروں کا تجربہ شروع کرنے کے بارے میں پیش کردہ درخواست کی منظوری دی ہے اور اس کی رپورٹ کونسل کو پیش کردی ہے تاکہ اگر وزارت داخلہ مجاز حکام کے ساتھ مل کراس ٹیکنالوجی کو اختیار کرتی ہے تواس کی مستقل منظوری دی جاسکے۔شیخ محمد بن راشد نے یواے ای میں ریٹائرڈ غیرملکیوں کو اقامت کی اجازت دینے سے متعلق قواعد وضوابط کی بھی منظوری دے دی ہے۔ان کے تحت غیرملکی ریٹائرمنٹ کی صورت میں یواے ای ہی میں مقیم رہ سکتے ہیں۔حاکم دبئی کا کہنا تھا کہ ہم اپنے ملک میں ہرکسی کو خوش آمدید کہتے ہیں۔انھوں نے مزید بتایا کہ کابینہ نے وفاقی حکومت میں خصوصی فنڈزکی پالیسی کی بھی منظوری دی ہے۔اس کے قواعد وضوابط کے تحت سرکاری ادارے اپنے ترقیاتی پروگراموں کیلیے ازخود فنڈز فراہم کرنے کا بندوبست کرسکتے ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ اس فیصلے کا مقصد کار سرکار کی پیداواریت اور لچک داری کو بڑھانا ہے تاکہ عوام کے لیے بہتر نتائج حاصل کیے جاسکیں۔



زیرو پوائنٹ

سانو۔۔ کی

سانو ۔۔کی پنجابی زبان کا ایک محاورہ یا ایکسپریشن ہے‘ اس کا مطلب ہوتا ہے ہمیں کیا فرق پڑتا ہے‘ ہمارے باپ کا کیا جاتا ہے‘ ہمارا کیا نقصان ہے یاپھر آئی ڈونٹ کیئر‘ ہم پنجابی لوگ اوپر سے لے کر نیچے تک اوسطاً دن میں تیس چالیس مرتبہ یہ فقرہ ضرور دہراتے ہیں لہٰذا اس کثرت استعمال کی وجہ ....مزید پڑھئے‎

سانو ۔۔کی پنجابی زبان کا ایک محاورہ یا ایکسپریشن ہے‘ اس کا مطلب ہوتا ہے ہمیں کیا فرق پڑتا ہے‘ ہمارے باپ کا کیا جاتا ہے‘ ہمارا کیا نقصان ہے یاپھر آئی ڈونٹ کیئر‘ ہم پنجابی لوگ اوپر سے لے کر نیچے تک اوسطاً دن میں تیس چالیس مرتبہ یہ فقرہ ضرور دہراتے ہیں لہٰذا اس کثرت استعمال کی وجہ ....مزید پڑھئے‎