اعظم نذیر تارڑ سے استعفیٰ سابق آرمی چیف قمرجاوید باجوہ کے کہنے پر لیا گیا، عمر چیمہ کا دعویٰ

  ہفتہ‬‮ 3 دسمبر‬‮ 2022  |  16:59

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)سینئر صحافی عمر چیمہ کا یوٹیوب چینل ٹاک شاک پر اپنے تازہ وی لاگ میں کہنا ہے کہ وفاقی وزیر قانون اعظم نذیر تارڑ نے اکتوبر کے آخر میں اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا تھا اور ان کے استعفے کو سپریم جوڈیشل کمیشن کے اجلاس میں چیف جسٹس کے نامزد کردہ ججز کے حق میں ووٹ دینے کے ساتھ جوڑا جا رہا تھا مگر اب یہ بات سامنے آئی ہے کہ

اعظم نذیر تارڑ کے مستعفی ہونے کی وجہ لاہور میں عاصمہ جہانگیر کانفرنس میں فوج کی اعلیٰ قیادت کے خلاف ہونے والی نعرے بازی بنی۔ اس نعرے بازی کے دوران اعظم نذیر تارڑ سٹیج پر موجود تھے اور تاثر یہی پایا جاتا ہے کہ انہوں نے کسی کو نعرے لگانے سے منع نہیں کیا۔ اس نعرے بازی کے بعد آرمی لیڈرشپ شدید غصے میں آ گئی اور اس وقت کے آرمی چیف جنرل باجوہ کی جانب سے حکومت کو لاہور سے تعلق رکھنے والے ایک (ن) لیگی رہنما کے ذریعے پیغام بھیجا گیا۔ حکومت نے من و عن یہ تو نہیں بتایا کہ اس پیغام میں حکومت سے کیا کہا گیا تھا تاہم وزیراعظم شہباز شریف نے وزیر قانون اعظم نذیر تارڑ سے کہا کہ وہ اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیں۔ وزیراعظم نے یہ بھی کہا کہ ایک مہینے میں فوج کی اعلیٰ قیادت تبدیل ہونے جا رہی ہے تو ہم اس موقع پر آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کے ساتھ کوئی جھگڑا نہیں کرنا چاہتے۔وزیر قانون اعظم نذیر تارڑ نے جواب دیا کہ مجھے مستعفی ہونے پہ کوئی اعتراض نہیں ہے اور انہوں نے فوراً استعفیٰ پیش کر دیا۔

اب 29 نومبر کو جنرل قمر جاوید باجوہ جب ریٹائر ہوگئے ہیں اور انہوں نے فوج کی کمان جنرل عاصم منیر کے سپرد کر دی ہے تو اسی شام وزیر اعظم شہباز شریف نے (ن) لیگی وزرا کا ایک وفد اعظم نذیر تارڑ کے پاس بھیج دیا۔ وزیراعظم نے اعظم نذیر تارڑ کو یہ پیغام دیا کہ ان کا استعفیٰ ابھی تک منظور نہیں کیا گیا اس لیے وہ استعفیٰ واپس لے کر دوبارہ اپنا عہدہ سنبھال لیں۔ چنانچہ انہوں نے ایسا ہی کیا ہے اور پھر سے ملک کے وزیر قانون بن گئے ہیں۔



موضوعات:

زیرو پوائنٹ

بشریٰ بی بی سے شادی

عون چودھری 2010ء سے 2018ء تک سائے کی طرح عمران خان کے ساتھ رہے‘ یہ رات کے وقت انہیں ملنے والے آخری اور صبح ملاقات کے لیے آنے والے پہلے شخص ہوتے تھے چناں چہ یہ عمران خان کی زندگی کے اہم ترین دور کے اہم ترین شاہد ہیں‘ مجھے چند دن قبل عون چودھری نے اپنے گھر پر ناشتے ....مزید پڑھئے‎

عون چودھری 2010ء سے 2018ء تک سائے کی طرح عمران خان کے ساتھ رہے‘ یہ رات کے وقت انہیں ملنے والے آخری اور صبح ملاقات کے لیے آنے والے پہلے شخص ہوتے تھے چناں چہ یہ عمران خان کی زندگی کے اہم ترین دور کے اہم ترین شاہد ہیں‘ مجھے چند دن قبل عون چودھری نے اپنے گھر پر ناشتے ....مزید پڑھئے‎