گلشن معمار میں زنجیروں سے جکڑے بچے سے متعلق اہم انکشاف، بچے کا والد منظر عام پر آ گیا

  اتوار‬‮ 17 جنوری‬‮ 2021  |  0:28

کراچی (این این آئی) گلشن معمار میں زنجیروں میں جکڑے بچے کے معاملے میں اہم پیش رفت ہوئی ہے، بچے کا والد منظر عام پر آگیا ہے۔ایس ایس پی ملیر عرفان بہادر نے میڈیا سے گفتگو میں بتایا کہ رحمت اللہ کو والد نے باندھا تھا، والد نے بچے کو پڑھنے کا کہا جس پر عبد الرحمان آج پھر گھر سے بھاگ پڑا، اس سے قبل رحمت اللہ کئی بارگھر سے بھاگ چکا ہے، جس کے باعث والد نے یہ اقدام اٹھایا۔پولیس نے والد کے بیان کے بعد بھی علاقہ مکینوں کے بھی بیانات قلبند کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ایس


ایس پی ملیر عرفان بہادر نے میڈیا کو بتایا تھا کہ گلشن معمار میں زنجیروں سے بندھا12 سال کا بچہ ملا ، بچے کے پیروں میں زنجیر باندھ کر تالے لگائے گئے تھے اور اس کے جسم پر زخموں کے بھی نشانات ہیں۔ایس ایس پی ملیر نے میڈیا کو بتایا کہ بچے نے اپنا نام سلیم رحمت اللہ بتایا ہے، بچے نے پولیس کو اپنے ایک عزیز کا فون نمبر بھی فراہم کیا ہے، بچے سے ملنے والے نمبر پر کال کی گئی ہے اور بچے سے متعلق اطلاع دے دی گئی ہے۔پولیس نے بچے کو تھانے منتقل کردیا ہے، جہاں واقعے سے متعلق مزید تفتیش کا آغاز کیا گیا تھا۔دوسر ی جانب کستان تحریک انصاف کراچی کی صدر وومن ونگ فضہ زیشان لاڑکانہ بھینس کالونی میں ڈیڑھ سالہ بچی کے کھلے گٹر میں گرنے سے ہلاکت کے معاملے پر کہا کہ لاڑکانہ میں ڈیڑھ سالہ بچی کے کھلے گٹر میں گرنے کا واقعہ انتہائی افسوسناک اور قابل مزمت ہے واقعے پر سندھ ہائیکورٹ کے فوری نوٹس کا خیر مقدم کرتے ہیں سال بدل گیا مگر سندھ کے حالات نہیں بدلے سندھ حکومت صوبے کے بدترین بلدیاتی نظام کو حل کرنے میں سنجیدہ نہیں ہے سندھ کے عوام اپنے پیاروں کے جنازے بھی گندے پانی سےلیکر گزرتے ہیں سندھ حکومت کے ڈی سیز اور ایڈمنسٹریٹر بھی کرپشن میں ڈوبے ہوئے ہیں صوبے میں عوام کی زندگیوں کو جانوروں سے بھی بدتر بنادیا ہے سندھ میں آئیندہ بلدیاتی انتخابات میں تحریک انصاف اکثریت سے کامیابی حاصل کرے گی صوبے کے عوام کو پیپلز پارٹی سے نجات دلانا ضروری ہے بچی کی ہلاکت پر اہل خانہ سے دلی تعزیت کرتے ہیں۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

آخری موو

سینیٹ کا الیکشن کل اور پلاسی کی جنگ 23 جون 1757ءکو ہوئی اور دونوںنے تاریخ پر اپناگہرا نقش چھوڑا‘ بنگال ہندوستان کی سب سے بڑی اور امیر ریاست تھی‘پورا جنوبی ہندوستان نواب آف بنگال کی کمان میں تھا‘ سراج الدولہ بنگال کا حکمران تھا‘ دوسری طرف لارڈ رابرٹ کلائیو کمپنی سرکار کی فوج کا کمانڈر تھا‘ انگریز کے ....مزید پڑھئے‎

سینیٹ کا الیکشن کل اور پلاسی کی جنگ 23 جون 1757ءکو ہوئی اور دونوںنے تاریخ پر اپناگہرا نقش چھوڑا‘ بنگال ہندوستان کی سب سے بڑی اور امیر ریاست تھی‘پورا جنوبی ہندوستان نواب آف بنگال کی کمان میں تھا‘ سراج الدولہ بنگال کا حکمران تھا‘ دوسری طرف لارڈ رابرٹ کلائیو کمپنی سرکار کی فوج کا کمانڈر تھا‘ انگریز کے ....مزید پڑھئے‎