آئندہ بھکاریوں کو بھیک دینے سے قبل یہ خبر ضرورو پڑھ لیں ۔۔۔ تہلکہ خیز رپورٹ آگئی

26  اکتوبر‬‮  2016

مظفرآبا د( آن لائن) دارلحکومت مظفرآباد میں بھیک مانگنے کے مختلف طریقے جدید دور کی طرح سامنے آگئے بھکاریوں نے مختلف گروپ تشکیل دے کر بھیک مانگنے کی آڑ میں مختلف جرائم میں ملوث ہونے کا انکشاف اس میں مشکوک بھکاری بھی شامل ہیں جو سڑکوں پر لیٹ کر اور کرالنگ کر کے بھیک مانگنے کی پریکٹس کررہیں ہیں دراصل یہ جسمانی طور پر مکمل فٹ ہیں اور ان بھیکاریوں نے قانون نافذ کرنے والے اداروں کی آنکھوں میں دھول جھونک کر اپنا الو سیدھا کر رہیں ہیں مظفرآباد شہر میں ہر دس منٹ میں تین بھکاری ایک دکان پر حاضری دیتے ہیں تفصیلات کے مطابق آزادکشمیر کا دارلحکومت مظفرآباد جس میں بھیکاریوں کی تعداد سینکڑوں میں پائی جارہی ہے موجود ہیں یہ بھیکاری خیبر پختون خواہ ،افغانستان ،کوئٹہ ،بلوچستان اور سندھ کے علاقوں سے آتے ہیں مظفرآباد کے مختلف ہوٹلوں اور رہائشی کالونیوں میں رہائش اختیا رکر کے روپ تبدیل کرنے کے بعد یہ لوگ بھیک مانگتے ہیں جبکہ ان میں ایسے بھیکاری بھی ہیں جو کہ اپنے آپ کو معذور اور بے کس ظاہر کرکے بھیک مانگتے ہیں اور ان کی بھیک مانگنے کی جگہ بھی مختصر اور وہ مقامات ہیں جہاں مختلف علاقوں سے آنے والے لوگوں کی ریل سیل زیادہ ہوتی ہے جیساکہ بینک روڈ ،اولڈ سیکرٹریٹ میں ان کو دیکھا جاسکتا ہے ان بھیکاریوں نے قانون نافذ کرنے والے اداروں کی آنکھوں میں دھول جھونک کر پتہ نہیں کیا مقاصد حاصل کرنا چاہتے ہیں یا پھر کسی ملک کے ایجنٹ ہیں ان لوگوں کا طریقہ کار بھیک مانگنے کا سڑکوں پر لیٹ کر جانا یا ایک جگہ پر بیٹھ کر ان کے جسم کے تمام عضاء مکمل او رمضبوط ہونے کے باوجود اپنے آپ کو معذور بنانے کی سرتوڑ کوشش کرتے ہیں یہ سلسلہ گزشتہ زلزلے کے فوری بعد شروع ہوا جو دس سال تک لگاتار چلتا آرہا ہے مگر آج تک قانون نافذ کرنے والے ادارے یا ضلعی انتظامیہ نے ان سے نہیں پوچھا کہ یہ بھیکاری ہیں ،جرائم پیشہ افراد ہیں یا پھر کسی ملک کے اہلکار ہیں سوالیہ نشا ن ہے ؟

موضوعات:



کالم



سرمایہ منتوں سے نہیں آتا


آج سے دس سال قبل میاں شہباز شریف پنجاب کے وزیراعلیٰ…

اللہ کے حوالے

سبحان کمالیہ کا رہائشی ہے اور یہ اے ایس ایف میں…

موت کی دہلیز پر

باباجی کے پاس ہر سوال کا جواب ہوتا تھا‘ ساہو…

ایران اور ایرانی معاشرہ(آخری حصہ)

ایرانی ٹیکنالوجی میں آگے ہیں‘ انہوں نے 2011ء میں…

ایران اور ایرانی معاشرہ

ایران میں پاکستان کا تاثر اچھا نہیں ‘ ہم اگر…

سعدی کے شیراز میں

حافظ شیرازی اس زمانے کے چاہت فتح علی خان تھے‘…

اصفہان میں ایک دن

اصفہان کاشان سے دو گھنٹے کی ڈرائیور پر واقع ہے‘…

کاشان کے گلابوں میں

کاشان قم سے ڈیڑھ گھنٹے کی ڈرائیو پر ہے‘ یہ سارا…

شاہ ایران کے محلات

ہم نے امام خمینی کے تین مرلے کے گھر کے بعد شاہ…

امام خمینی کے گھر میں

تہران کے مال آف ایران نے مجھے واقعی متاثر کیا…

تہران میں تین دن

تہران مشہد سے 900کلو میٹر کے فاصلے پر ہے لہٰذا…