ملک اب بدلے گا‎

  جمعرات‬‮ 29 اپریل‬‮ 2021  |  0:01

میاں نواز شریف 19 نومبر 2019ء کو علاج کے لیے لندن چلے گئے‘ ملک میں آج بھی یہ تاثر ہے یہ ڈیل کے ذریعے باہر گئے ہیں اور یہ ڈیل اسٹیبلشمنٹ نے حکومت کی مرضی کے بغیر کی تھی‘ یہ تاثر جمعہ 23 اپریل کی رات سینئر صحافیوں کے سامنے زائل کر دیا گیا‘ ہمیں بتایا گیا میاں نواز شریف کو فوج نے باہر نہیں بھجوایا تھا‘ یہ فیصلہ خالصتاً عدلیہ اور حکومت کا تھا تاہم یہ درست ہےوزیراعظم نے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ سے رائے لی تھی اور آرمی چیف نے ان سے کہا تھا‘ آپ کے پاس دو آپشن ہیں‘ آپ میاں نواز شریف کو علاج کے لیے جانے دیں اور عوام کی طرف سے برا بھلا سنیں یا پھر اگر خدانخواستہ انہیں جیل میں کچھ

ہو جاتا ہے تو ایک اور بھٹو برداشت کریں لیکن فیصلہ بہرحال آپ نے کرنا ہے اور یہ فیصلہ وزیراعظم نے کیا‘ کابینہ میں تین وزراء کے علاوہ تمام وزیر نواز شریف کو باہر بھجوانے کے حق میں تھے‘ یہ تمام یہ کہتے رہے‘ جانے دیں جان چھڑائیں‘یہ بھی بتایا گیا فوجی قیادت نے سابق چیف جسٹس آف پاکستان سے ان کے حلف کی تقریب کے بعد درخواست کی تھی‘ سیکورٹی اداروں کی حراست میں موجود لوگوں کے لیے سپریم کورٹ کوئی قانونی راستہ نکال دے‘ پولیس بھی انہیں قبول کرنے کے لیے تیار نہیں اور قبائلی علاقوں میں سول انتظامیہ نہیں ہے‘ ہم کیا کریں ہمیں سمجھ نہیں آ رہی‘ چیف جسٹس نے جواب دیا‘ ہمارے پاس بھی کوئی قانونی گنجائش موجود نہیں‘ آپ اگر انہیں یہاں لے آئے تو نیا قانونی بحران پیدا ہو جائے گا‘ آپ ان کے بارے میں خود فیصلہ کریں چناں چہ سیکورٹی ادارے ان لوگوں کو اپنے پاس رکھ کر عدلیہ اور حکومت کی طرف دیکھ رہے ہیں‘ یہ بھی بتایا گیا سابق وزیرخزانہ اسحاق ڈار نے سرکاری اعدادوشمار میں جعل سازی (فورجری) کی تھی‘سابق حکومت بینکوں سے قرضے لے کر 5 اعشاریہ 8 فیصد گروتھ دکھاتی رہی‘ اسحاق ڈار سے جب ایک میٹنگ میں میٹروز کے بارے میں یہ پوچھا گیا’’ حکومت یہ قرضے اور خسارے کیسے پورے کرے گی؟ ‘‘تو انہوں نے دائیں بائیں چہرہ ہلا کر کہا ’’سر کچھ فیصلے سیاسی ہوتے ہیں‘‘ سابق دور حکومت میں ویسپا کمپنی پاکستان میں سکوٹر سازی کا کارخانہ لگانا چاہتی تھی لیکن وزارت خزانہ نے کمپنی سے کمیشن مانگ لیا‘افغانستان میں نیٹو کے نمائندے سٹیفنو پونٹے کاروو (Stefano Pontecorvo) نے الزام لگایا یہ رقم وزیر خزانہ نے مانگی تھی‘ یہ اطلاع وزیراعظم میاں نواز شریف کو دی گئی لیکن انہوں نے اسے سیریس نہیں لیا‘ یہ بھی بتایاگیا بھارت کے زعماء نے مذاکرات کے دوران پاکستانی افسروں سے درخواست کی‘ آپ ہماری کلبھوشن یادیو سے جان چھڑا دیں‘ یہ ہمارے لیے بوجھ ہے‘ آپ اگر یہ بوجھ ہٹا دیں گے تو یہ آپ کا احسان ہو گا لیکن کلبھوشن یادیو کی موت پاکستان کو سوٹ نہیں کرتی لہٰذا یہ زندہ ہے اور یہ زندہ رہے گا۔ایم این اے محسن داوڑ کے بارے میں بتایا گیا‘ یہ آرمی پبلک سکول کا طالب علم رہا اور یہ ایک اڈے کی وجہ سے ریاست سے ناراض ہو گیا‘ یہ نظریاتی لڑائی نہیں لڑ رہا ‘ اڈے پر قبضے کی لڑائی لڑ رہا ہے‘ ایاز صادق نے 29 اکتوبر 2020ء کو ٹانگیں کانپنے کا بیان دیا تھا‘فوجی حلقوں نے اسے بہت برا محسوس کیا تھا‘ فوج نے انڈیا کے تین طیارے گرائے تھے‘ اگر ہماری ٹانگیں کانپتی تو ہم کبھی یہ نہ کرتے لیکن پاکستان نے پوری جرات کے ساتھ یہ کیا‘ ہم نے جب بھارت کے پائلٹ ابھی نندن کو رہا کیا تو بھارت نے ایک دوست ملک کے ذریعے پاکستان کا شکریہ ادا کیا لیکن ایاز صادق نے یہ بیان دے کر فوج کا مورال اور دل دونوں توڑ دیے‘ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کو زندگی میں پہلی بار شدید غصہ آیا لیکن یہ اپنا غصہ پی گئے‘ تحریک لبیک پاکستان کے باے میں بات ہوئی‘ یہ میاں نواز شریف نے علامہ طاہر القادری کا زور توڑنے کے لیے بنوائی تھی‘ٹی ایل پی نے نومبر 2017 ء میں فیض آباد میں دھرنا دے دیا‘ یہ وزیر قانون پنجاب رانا ثناء اللہ کے اشارے پر اسلام آباد آئے تھے‘ ٹی ایل پی شروع میں حکومت سے استعفیٰ مانگ رہی تھی‘ یہ پھر پوری کابینہ کے استعفے پر آ گئی‘ وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے فوج سے کہا ‘آپ ان کے ساتھ ڈیل کریں‘ پولیس ان پر ہاتھ نہیں ڈال رہی‘ فوجی قیادت نے وزیراعظم کو بتایا آپ نے ماڈل ٹائون کے ایشو پر پنجاب پولیس کو اکیلا چھوڑ کر پولیس کو ڈی مورلائز کر دیا تھا لہٰذا یہ اب حکومت کا حکم نہیں مان رہی‘ وزیراعظم کو مشورہ دیا گیا آپ وزراء کے استعفے نہ دیں کیوں کہ اگر ایک بار یہ روایت پڑ گئی تو پھر یہ روکی نہیں جا سکے گی‘اسٹیبلشمنٹ کو اس مسئلے میں اس لیے انوالو ہونا پڑا کہ وزیراعظم اور آرمی چیف نے فوجی مشقوں کے سلسلے میںسعودی عرب کا دورہ کرنا تھااور یہ ایشو اس دورے سے پہلے حل ہونا ضروری تھا ورنہ ملک کی جگ ہنسائی ہوتی چناں چہ ٹی ایل پی کے ساتھ تحریری معاہدہ کرنا پڑ گیا‘ شاہد خاقان عباسی امریکا میں اپنی ہمشیرہ کی عیادت کے لیے جانا چاہتے تھے‘ سابق وزیراعظم نے اپنا نام ای سی ایل سے نکلوانے کے لیے ملک کی اعلیٰ انٹیلی جنس ایجنسی سے رابطہ کیا اور اسٹیبلشمنٹ نے انہیں امریکا جانے کی اجازت لے کر دی‘یہ حکومت سے درخواست نہیں کرنا چاہتے تھے۔ حکومت نے تینوں وزراء خزانہ اپنی مرضی سے لگائے اور انہیں فارغ کیا‘ اسٹیبلشمنٹ نے کوئی رائے نہیں دی‘ لاہور ہائی کورٹ کے 46 ججوں میں سے 35 میاں نواز شریف کے دور میں بھرتی ہوئے لہٰذا حکومتی ارکان اور اپوزیشن اس وجہ سے عدلیہ پر جانب داری کا الزام لگاتی ہے‘ عدلیہ پر یہ الزامات نہیں لگنے چاہییں‘ پاکستان کے سیکورٹی اداروں کو پتا چلا وزیراعظم آفس اور وزارت خارجہ کی اہم دستاویزات لیک ہو رہی ہیں‘ سیکورٹی اداروں نے تحقیقات کیں‘ یہ بات درست نکلی‘وزیراعظم آفس اور وزارت خارجہ کا سسٹم ’’ہیک‘‘ ہو چکا تھا‘ میٹنگز کے منٹس تک ملک سے باہر جا رہے تھے‘ یہ بھی پتا چلا ہماری معلومات بھارت بھی جا رہی ہیں‘ سیکورٹی اداروں نے یہ سسٹم ٹھیک کیا اور یہ اب ’’فول پروف‘‘ ہو چکا ہے۔ ملک کے معاشی اور سماجی حالات کے بارے میں بتایا گیا‘ چین کے وزیراعظم لی کی چیانگ نے وزیراعظم عمران خان سے کہا ہم کب تک آپ کی سب سٹینڈرڈ چینی خریدتے رہیں گے‘ آپ چینی کے علاوہ کچھ کیوں نہیں بناتے؟ ہمیں یہ ماننا ہوگا ہم پروڈکشن میں بہت پیچھے ہیں‘ ویت نام اور بنگلہ دیش تک ہم سے آگے نکل گئے ہیں‘ ہمیں صنعت اور پیداوار پر توجہ دینی ہو گی‘ہم نے ماضی میں غلطیاں کیں‘ جنرل ضیاء الحق سے بھی غلطی ہوئی اور جنرل پرویز مشرف نے بھی کوتاہی کی اور ہماری سیاسی قیادتیں بھی غلطیاں کرتی رہیں لیکن ہم اگر ان غلطیوں کو روتے رہے تو ہم آگے نہیں بڑھ سکیں گے‘ ہم نے آگے بڑھنا ہے‘ یہ بھی بتایا گیا اسٹیبلشمنٹ کا ماضی میں افغانستان اور کشمیر پر موقف سخت ہوتا تھا‘ عوام‘ سیاست دان اور میڈیا تینوں اسٹیبلشمنٹ پر اعتراض کرتے تھے لیکن آج اسٹیبلشمنٹ خود یہ معاملات درست کرنا چاہتی ہے‘ ہم چاہتے ہیں ہم جنگوں اور تنازعوں سے نکل کر آگے بڑھیں لیکن ہماری نیت پر اب بھی شک کیا جاتا ہے‘ یہ رویہ ٹھیک نہیں‘پاکستان میں آج بھی ایسے لوگ موجود ہیں جنہوں نے اپنی آنکھوں سے جنرل ایوب خان کا دور دیکھا تھا‘ اس وقت سائیکل کی بتی نہ ہونے پر جرمانہ ہوتا تھا اور زیبرا کراس کے علاوہ سڑک پار کرنے کا تصور تک نہیں تھا‘ ہم ملک کو واپس اس جگہ لے جانا چاہتے ہیں‘ قانون کی حکمرانی ہو اور معاشرہ پھل پھول رہا ہو‘ یہ بھی بتایا گیا نواز شریف ملک دشمن نہیں ہیں‘ یہ محب وطن ہیں اور وہ موجودہ آرمی چیف کو بہت عزت دیتے تھے‘ فوج بھی ان کی عزت کرتی ہے لیکن جہاں تک ان کے کیسز کا معاملہ ہے یہ فیصلہ عدالتوں نے کرنا ہے‘ عمران خان کا ’’ورلڈ ویو‘‘ بہت اچھا ہے‘ یہ دنیا کے بڑے حکمرانوں کو بہت اچھی طرح ٹیکل کرتے ہیں‘یہ ڈونلڈ ٹرمپ سے ملنے گئے تو امریکا کی ساری کابینہ ان کے سامنے بیٹھی تھی‘ عمران خان نے گفتگو شروع کی تو تھوڑی دیر میں یوں محسوس ہو رہا تھا یہ امریکا کے صدر ہیں‘ ساری امریکی کابینہ ان کی کابینہ ہے اور ڈونلڈ ٹرمپ مہمان وزیراعظم ہیں‘ ہمیں مڈل ایسٹ کی تبدیلیوں کو بھی سمجھنا ہوگا‘ عرب ملکوں میں نوجوان اقتدار میں آ چکے ہیں‘ یہ اپنے بزرگوں سے مختلف ہیں‘ یہ دنیا کو تجارتی فائدے اور نقصان کی نظروں سے دیکھتے ہیں لہٰذا ہم اب زیادہ دیر تک ایک دوسرے کو بھائی بھائی نہیں کہہ سکیں گے‘ ہمیں اپنی معاشی پوزیشن بڑھانی ہو گی‘ہم ہر سال چار ارب ڈالر کا پٹرول خریدتے ہیں اور انڈیا 40 ارب ڈالر کا ‘آپ خود سوچیں عرب ملکوں کو کس کے ساتھ تجارت میں فائدہ ہے لہٰذا ہمیں ماننا ہوگا‘ہم اگر معاشی طاقت ہیں تو دنیا ہماری عزت کرے گی ورنہ دنیا میں کوئی ملک ہمیں سپورٹ نہیں کرے گا اور ہمیں یہ بھی بتایا گیا فوجی قیادت جنرل اشفاق پرویز کیانی کی بہت عزت کرتی ہے‘ جنرل کیانی نے جتنا کام کیا اتنا دس آرمی چیف مل کر بھی نہیں کر سکتے تھے‘ ملک جا رہا تھا‘ جنرل کیانی نے اسے بچایا اور یہ بھی بتایا گیا پاکستان اب پرانی ڈگر پر نہیں چل سکتا‘ ہمیں ماضی کو بھول کر آگے بڑھنا ہو گا اور اس کے لیے ہم سب کو مل کر کام کرنا ہوگا‘یہ ملک سب کا ہے اور یہ سب کی ذمہ داری بھی ہے۔


زیرو پوائنٹ

پہلے جنم کے پانچ ساتھی

میں نے چند برس قبل حیات بعد ازمرگ پر کالم لکھا تھا‘ وہ عام سی فضول تحریر تھی‘ لوگوں نے اسے یاوہ گوئی سمجھ کر اگنور کر دیا لیکن وہ پڑھ کر میڈیکل کالج کی ایک سٹوڈنٹ نے مجھ سے رابطہ کیا اور بتایا ’’مجھے بچپن سے خواب آتے ہیں‘ میرا بڑا سا گھر ‘ ایک جوان بیٹا اور بہو ....مزید پڑھئے‎

میں نے چند برس قبل حیات بعد ازمرگ پر کالم لکھا تھا‘ وہ عام سی فضول تحریر تھی‘ لوگوں نے اسے یاوہ گوئی سمجھ کر اگنور کر دیا لیکن وہ پڑھ کر میڈیکل کالج کی ایک سٹوڈنٹ نے مجھ سے رابطہ کیا اور بتایا ’’مجھے بچپن سے خواب آتے ہیں‘ میرا بڑا سا گھر ‘ ایک جوان بیٹا اور بہو ....مزید پڑھئے‎