دورہ نیوزی لینڈ پر خطرے کا امکان ،کونسا کھلاڑی پہلے متاثر ہوا اور کیسے یہ دوسروں میں منتقل ہوا،ایک اور کھلاڑی کا ٹیسٹ پازیٹو نکل آیا ، احسان مانی  نے  بڑا فیصلہ کر لیا 

  ہفتہ‬‮ 28 ‬‮نومبر‬‮ 2020  |  17:41

اسلام آباد (این این آئی)پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کے چیئرمین احسان مانی نے کہا ہے کہ وہ نیوزی لینڈ حکومت کی جانب سے اٹھائے گئے تحفظات کا احترام کرتے ہیں تاہم انہیں امید ہے کہ ٹیم کے دورہ نیوزی لینڈ کو کوئی بڑا خطرہ نہیں ہوگا۔ ایک انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ ہمارے کھلاڑیوں میں سے 6 کے کورونا سے متاثر ہونے کے بعد ہم نیوزی لینڈ کرکٹ اور ان کی حکومت کےتحفظات کا احترام کرتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ نیوزی لینڈ پہنچنے کے فوری بعد کچھ معمولی خلاف ورزیاں ہوئیں، جنہیں سیاق و سباق کے بغیر


منظر عام پر لے آیا گیا۔چیئرمین پاکستان کرکٹ بورڈ نے کہا کہ اس سب کے باوجود میرے نہیں خیال کہ سیریز کو کوئی خطرہ ہے کیونکہ ہمارے کھلاڑی آئیسولیشن کے پروٹوکولز پر سختی سے عملدرآمد کر رہے ہیں۔احسان مانی نے کہا کہ نیوزی لینڈ کرکٹ بورڈ اور صحت کے حکام کی جانب سے کچھ اس وقت کچھ خلاف ورزیوں کا ذکر کیا گیا تھا جب کھلاڑی آئیسولیشن میں داخل ہوئے تھے۔انہوں نے کہا کہ اس مدت کے دوران وہ ایک دوسرے سے رابطہ میں رہے تھے، ان کا کہنا تھا کہ یہ 22 گھنٹے کا سفر تھا اور کھلاڑی تھوڑی رعایت کے مستحق تھے، بہرحال خلاف ورزیاں ہوئیں اور کسی بھی عذر کے پیچھے چھپنا نہیں ہے۔چیئرمین نے کہا کہ پی سی بی دیگر کھلاڑیوں کو میچ کی تیاری کرنے اور میدان میں آنے کی اجازت دینے سے متعلق نیوزی لینڈ کرکٹ کے ساتھ رابطے میں تھا۔احسان مانی کے مطابق 6 کھلاڑیوں کے نتائج مثبت آنے کے حوالے سے پی سی بی نے قابل اعتماد لیبارٹری سے کرائے گئے تمام ٹیسٹس کے نتائج نیوزی لینڈ حکومت سے شیئر کیے تھے اور ہو مطمئن ہوگئے تھے۔انہوں نے کہا کہ اس بات کا پتہ اور تفتیش کرنے کی ضرورت ہے کہ انہیں کس طرح وائرس لگا لیکن یہ متوقع ہے اور سمجھا جارہا کہ یہ لاہور اور ائسولیشن سہولت کے درمیان کہیں ہوا ہے۔انہوں نے کہا کہ ہم بھی تحقیقات کر رہے ہیں کہ کونسا کھلاڑی پہلےمتاثر ہوا اور کیسے یہ دوسروں میں منتقل ہوا۔خیال رہے کہ نیوزی لینڈ کے دورے پر جانے والے پاکستانی دستے کے 6 اراکین کے کورونا وائرس کے ٹیسٹ کے نتائج مثبت آئے تھے، جس کے بعد نیوزی لینڈ کی جانب سے وارننگ بھی جاری کی گئی تھی،یہی نہیں بلکہ نیوزی لینڈ کی وزارت صحت نے آج ایک اور پاکستانی کرکٹ ٹیم کے رکن میں وائرس کی تصدیق کردی، جس کے بعددورہ نیوزی لینڈ کے دوران متاثر ہونے والے اراکین کی تعداد 7 ہوگئی۔وزارت کی جانب سے کہا گیا کہ معمول کی ٹیسٹنگ کے دوران پاکستانی اسکواڈ کے ایک اور اضافی رکن کا نتیجہ مثبت آیا۔قبل ازیں یہ بات بھی سامنے آئی تھی کہ پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) اور نیوزی لینڈ کرکٹ بورڈ کے درمیان رابطے کے بعد نیوزی لینڈ میں موجود پاکستانی کھلاڑیوں پر آئیسولیشن کی پابندیوں میں نرمی کردی گئی تھی۔یاد رہے کہ ان اراکین کے ٹیسٹ مثبت آنے کے بعد آئسولیشن میں قومی ٹیم کو ٹریننگ کے لیے دیا گیا استثنیٰ واپس لے لیا گیا تھا۔نیوزی لینڈ کرکٹ بورڈ نے کھلاڑیوں کی جانب سے قرنطینہ کی پابندیوں کی خلاف ورزی پر آخری وارننگ دی تھی اور مزید خلاف ورزی کی صورت میں قومی ٹیم کا دورہ ختم ہونے کا بھی امکان تھا تاہم اب نیوزی لینڈ میں موجود قومی اسکواڈ کو دوبارہ چہل قدمی کی اجازت مل گئی ہےاور اسپورٹ اسٹاف اور کھلاڑی اپنے اپنے گروپ کے لیے مقررہ مخصوص اوقات میں چہل قدمی کرسکتے ہیں۔دوسری طرفنیوزی لینڈ میں پاکستانی اسکواڈ کے ایک اور رکن کا کورونا ٹیسٹ مثبت آ گیانیوزی لینڈ میں موجود پاکستان کرکٹ اسکواڈ کے ایک اور رکن کا کورونا ٹیسٹ مثبت آ گیا جس کے بعد پاکستانی اسکواڈ میں مثبت کیسز کی تعداد 7 ہو گئی ہے۔نیوزی لینڈ حکام کے مطابق رپورٹ ہونے والےکھلاڑی کے قریبی روابط کو ٹریس کرنے کا عمل جاری ہے، اسکواڈ کے دیگر ارکان کے نتائج منفی آئے ہیں۔پاکستان ٹیم کے تین روز بعد پھر کورونا ٹیسٹ ہوں گے اور پاکستانی اسکواڈ کو ٹریننگ کی اجازت دینے سے متعلق فیصلہ اگلے ہفتے تک ہو گا۔خیال رہے کہ اس سے پہلے بھی پاکستانی ٹیم کے 6 کھلاڑیوں کے کورونا ٹیسٹ مثبت آئے تھے جس پر نیوزی لینڈ کرکٹ بورڈ نے پی سی بی کو وارننگ دی تھی کہ اگر اب پاکستانی کھلاڑیوں نے کورونا ایس او پیز کی خلاف ورزی کی تو پاکستانی ٹیم کو واپس بھیج دیا جائے گا۔


زیرو پوائنٹ

بلیک سٹارٹ

آپ بجلی کے تازہ ترین بریک ڈائون کو سمجھنے کے لیے گاڑی کی مثال لیں‘ گاڑی کو انجن چلاتا ہے لیکن ہم انجن کو سٹارٹ کرنے کے لیے اسے بیٹری کے ذریعے کرنٹ دیتے ہیں‘ بیٹری کا کرنٹ انجن کو سٹارٹ کر دیتا ہے اور انجن سٹارٹ ہو کر گاڑی چلا دیتا ہے‘ آپ اب فرض کیجیے انجن راستے میں ....مزید پڑھئے‎

آپ بجلی کے تازہ ترین بریک ڈائون کو سمجھنے کے لیے گاڑی کی مثال لیں‘ گاڑی کو انجن چلاتا ہے لیکن ہم انجن کو سٹارٹ کرنے کے لیے اسے بیٹری کے ذریعے کرنٹ دیتے ہیں‘ بیٹری کا کرنٹ انجن کو سٹارٹ کر دیتا ہے اور انجن سٹارٹ ہو کر گاڑی چلا دیتا ہے‘ آپ اب فرض کیجیے انجن راستے میں ....مزید پڑھئے‎