حکومت کی لاہور میں مکمل لاک ڈاون نافذ کرنے کی تیاری‎

  اتوار‬‮ 11 اپریل‬‮ 2021  |  21:56

لاہور (آن لائن)کورونا کے بڑھتے ہوئے کیسز کی شرح میں اضافے کے بعد محکمہ صحت پنجاب نے شہر میں لاک ڈاؤن میں توسیع اورپابندیوں کوسخت کرنے کی سفارشات تیار کر لیں۔صوبائی وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد کی سربراہی میں انسداد کیبنٹ کمیٹی برائے کورونا کا اہم اجلاس ہوا ۔اجلاس میں محکمہ صحت کی جانب سے لاہور سمیت پنجاب کے آٹھ اضلاع میں جاری جزوی لاک ڈائون کومزید وسیع کرنے کی سفارشات پیش کی گئیں۔ محکمہ صحت نے کمیٹی کو لاہور میں 14 روز کے لیے مزید لاک ڈائون لگانے کی سفارشات پیش کیں۔ذرائع کا کہنا ہے کہ لاہور میں کورونا


کیسز کی بڑھتی ہوئی شرح کے پیش نظر جزوی لاک ڈاؤن میں توسیع ہو سکتی ہے جبکہ اجلاس میں لاہور کے اندر لاک ڈاؤن کو مزید سخت کرنے کی سفارشات بھی پیش کیں گئیں۔ذرائع نے بتایا ہے کہ کمیٹی کے ممبران نے متفقہ رائے دی کے لاہور کے لاک ڈاؤن میں مزید چودہ روز کا اضافہ کردیا جائے جس پر کمیٹی نے فیصلہ کیا کہ این سی او سی کو یہ سفارشات بھیجنے کے بعد فیصلہ کیا جائے گا۔اس سے قبل حکومت نے گیارہ اپریل تک لاہور کے اندر جزوی لاک ڈاؤن کے احکامات دے رکھے تھے جس میں مارکیٹ چھ بجے بند ،پبلک ٹرانسپورٹ کی بندش اور شادی حال سمیت اور پارک بند رکھے گئے جبکہ ریسٹورنٹ میں ان ڈور اور آؤٹ ڈور ڈائنگ پہ بھی پابندی عائد کی گئی۔دوسری جانب وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدارنے کہا ہے کہ کورونا مریضوں کی وجہ سے ہیلتھ سسٹم بے پناہ دباؤ کا شکار ہوچکا ہے ۔کورونا کوکنٹرول کرنے کے لئے سخت اقدامات کرناہوںگے۔وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے بتایا کہ پنجاب کے پانچ شہروں میں کورونا کے مثبت کیسز کی شرح15فیصد سے بڑھ چکی ہے ۔لاہور میں مثبت کیسز کی شرح19فیصد سے تجاوز کرچکی ہے ۔وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے مزید بتایا کہ لاہور کے سرکاری ہسپتالوں میں کورونا مریضوں کیلئے مختص تقریباًتمام وینٹی لیٹرزیر استعمال آچکے ہیں۔انہوںنے کہا کہ کورونا مریضوں کیلئے حکومت اپنے تمام تر وسائل استعمال اورممکنہ اقدامات کررہی ہے ۔عوام کو احتیاط کرنا ہوگی،صورتحال خطرناک رخ اختیار کررہی ہے ۔ ماسک پہننے سے کورونا سے بچاؤ ممکن ہے ۔گھر سے باہر بغیر ماسک کے آنا خطرے سے خالی نہیں ۔


زیرو پوائنٹ

درمیان

یہ ایک ڈاکٹر کی کہانی ہے‘ ڈاکٹر صاحب اس وقت آسٹریلیا میں ہیں اور یہ وہاں ایسی شان دار زندگی گزار رہے ہیں جس کا ان کے کسی کلاس فیلو نے خواب تک نہیں دیکھا تھا‘ ہم سب لوگ زندگی میں ٹاپ کرنا چاہتے ہیں‘ ہم ہر کلاس میں اول آنا چاہتے ہیں‘ ہم بازار کا مہنگا ترین لباس خریدنا ....مزید پڑھئے‎

یہ ایک ڈاکٹر کی کہانی ہے‘ ڈاکٹر صاحب اس وقت آسٹریلیا میں ہیں اور یہ وہاں ایسی شان دار زندگی گزار رہے ہیں جس کا ان کے کسی کلاس فیلو نے خواب تک نہیں دیکھا تھا‘ ہم سب لوگ زندگی میں ٹاپ کرنا چاہتے ہیں‘ ہم ہر کلاس میں اول آنا چاہتے ہیں‘ ہم بازار کا مہنگا ترین لباس خریدنا ....مزید پڑھئے‎