’’سپرپاور اور سپرپلانرصرف اللہ ہے، ایٹم بم اور میزائل سب بے سود ہے‘‘ ایک دوسرے کوصفحہ ہستی سے مٹانے کے دعوےکرنے والے لیڈر خود بھی ختم ،کرونا وائرس نے امریکا، چین، جرمنی، فرانس، اور اٹلی سمیت دنیا کے بڑے بڑے ممالک کو ہلا کر رکھ دیا اگر یہ کام نہ کیا گیا تو یہ بیماری 5سال تک ختم نہیں ہو گی۔۔ تہلکہ خیز انکشافات سامنے آگئے

  پیر‬‮ 6 اپریل‬‮ 2020  |  15:37

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) سپر پاور اور سپر پلا نر صرف اللہ کی ذات ہے۔تفصیلات کے مطابق مسلم لیگ ق کے سربراہ چوہدری شجاعت حسین نے کہا ہے کہ دنیا بھر میں پھیلے کورونا وائرس نے امریکا، چین، جرمنی، فرانس، اور اٹلی سمیت دنیا کے بڑے بڑے ممالک کو ہلا کر رکھ دیا ہے اور کورونا وائرس کے باعث اب تک 69 ہزار سے زائد افراد ہلاک جب کہ 12 لاکھ سے زائد متاثر ہو چکے ہیں۔نجی ٹی وی چینل جیو کے مطابق پاکستان میں بھی کورونا وائرس اب تک 50 افراد کی زندگیاں نگل چکا ہے جب کہ 34 سوسے


زائد افراد اس وبا سے متاثر ہو چکے ہیں۔اس حوالے سے مسلم لیگ ق کے سربراہ چوہدری شجاعت حسین نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ کورونا وائرس نے سپر پاور ہونے کا معیار بدل کر رکھ دیا ہے۔چوہدری شجاعت حسین نے کہا کہ سپرپاور اور سپرپلانرصرف اللہ کی ذات ہے، ایٹم بم، میزائل سب بے سود ہیں، ثابت ہو گیا کہ ایٹم بم، میزائل یا کوئی اورہتھیارکورونا کو ختم یا قابو کرنے میں مدد نہیں کر سکتا۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ عالمی طاقتیں کھربوں ڈالر مہلک ہتھیاروں کے بجائے صحت پر خرچ کریں، وائرس کے خلاف جنگ پر دل کھول کر فنڈز نہ لگائے تو یہ بیماری 5 سال بھی ختم نہیں ہو گی۔سابق وزیراعظم پاکستان نے کہا کہ ایک دوسرے کوصفحہ ہستی سے مٹانے کے دعوےکرنے والے لیڈر خود بھی ختم ہو جائیں گے۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

ڈیڈ اینڈ

ارنسٹ ہیمنگ وے نوبل انعام یافتہ ادیب تھا اور یہ دہائیوں سے انسانی فکر کو متاثر کررہا ہے‘ ہم میں سے کم لوگ جانتے ہیں ہیمنگ وے نے اپنا کیریئر صحافی کی حیثیت سے شروع کیا تھا‘ یہ وار رپورٹر تھا‘ محاذ جنگ سے ڈائری لکھتا تھا اور لاکھوں لوگ اس کی تحریروں کا انتظار کرتے تھے‘ اس ....مزید پڑھئے‎

ارنسٹ ہیمنگ وے نوبل انعام یافتہ ادیب تھا اور یہ دہائیوں سے انسانی فکر کو متاثر کررہا ہے‘ ہم میں سے کم لوگ جانتے ہیں ہیمنگ وے نے اپنا کیریئر صحافی کی حیثیت سے شروع کیا تھا‘ یہ وار رپورٹر تھا‘ محاذ جنگ سے ڈائری لکھتا تھا اور لاکھوں لوگ اس کی تحریروں کا انتظار کرتے تھے‘ اس ....مزید پڑھئے‎