بدھ‬‮ ، 24 جولائی‬‮ 2024 

نواز شریف نے (کھل) کر مولانا کا ساتھ دینے کا فیصلہ کر لیا۔لیکن ن لیگ کا فیصلہ ابھی باقی ہے‘ یہ اجلاس پر اجلاس کر رہی ہے،کیا نواز شریف اور ن لیگ کا فیصلہ الگ الگ ہو سکتا ہے؟مولانا اورحکومت کیا حکمت عملی بنا رہے ہیں،جاوید چودھری کاتجزیہ‎

datetime 14  اکتوبر‬‮  2019
ہمارا واٹس ایپ چینل جوائن کریں

پاکستان کا الیکشن کمیشن پانچ ارکان پر مشتمل ہوتا ہے، ہر صوبے سے ایک رکن لیا جاتا ہے اور یہ ارکان چیف الیکشن کمشنر کی قیادت میں کام کرتے ہیں، اٹھارہویں ترمیم میں فیصلہ ہوا تھا چیف الیکشن کمشنر اور تمام ارکان کی تقرری وزیراعظم اور اپوزیشن لیڈر مل کر کریں گے، اس سال 26 جنوری کو بلوچستان اور سندھ کے رکن ریٹائر ہو گئے،

آئین کے مطابق یہ دونوں نشستیں 45 دن کے اندر پُر ہونی تھیں لیکن وزیراعظم کیونکہ اپوزیشن لیڈر سے ملنے کے لیے تیار نہیں تھے چناں چہ ارکان کا فیصلہ نہ ہو سکا، صدر عارف علوی نے 22 اگستکو صدارتی آرڈیننس کے ذریعے سندھ کی طرف سے خالد محمود صدیقی اور بلوچستان سے منیر احمد کاکڑ کو الیکشن کمیشن میں تعینات کر دیا، چیف الیکشن کمشنر جسٹس سردار محمد رضا خان نے ان ارکان سے حلف لینے سے انکار کر دیا، یہ ایشو اسلام آباد ہائی کورٹ پہنچ گیا، آج چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ اطہر من اللہ نے یہ مسئلہ پارلیمنٹ کو ریفر کر دیا اور ساتھ ہی ری مارکس دیے، الیکشن کمیشن غیرفعال ہو چکا ہے‘ کیا پارلیمنٹ یہ چھوٹا سا معاملہ بھی حل نہیں کر سکتی‘ ہائی کورٹ نے سپیکر اور چیئرمین سینٹ دونوں کو یہ ڈیڈ لاک ختم کرنے کی ذمہ داری سونپ دی لیکن چیف جسٹس یہ بھول گئے چیف الیکشن کمشنر بھی دسمبر کے پہلے ہفتے میں ریٹائر ہو جائیں گے جس کے بعد الیکشن کمیشن مکمل طور پر غیرفعال ہو جائے گا‘ میں چیف جسٹس سے اتفاق کرتا ہوں‘ اگر پارلیمنٹ دو ارکان کا فیصلہ نہیں کر سکتی‘ اگر یہ وزیراعظم اور اپوزیشن لیڈر کو اکٹھا نہیں بٹھا سکتی تو پھر اس پارلیمنٹ کی کیا جسٹی فکیشن ہے‘ پھر اسے بھی ختم کرکے کالج یا یونیورسٹی بنا دینا چاہیے‘ پارلیمنٹ کو ایک بار صرف ایک بار اپنی اداؤں پر ضرور غور کرنا چاہیے، میاں نواز شریف نے کھل کر مولانا کا ساتھ دینے کا فیصلہ کر لیا لیکن ن لیگ کا فیصلہ ابھی باقی ہے، یہ اجلاس پر اجلاس کر رہی ہے‘ آج بھی اجلاس ہوا لیکن کوئی اعلان سامنے نہیں آیا، کیا نواز شریف اور ن لیگ کا فیصلہ الگ الگ ہو سکتا ہے، مولانا بھی تیاری کر رہے ہیں اور ادھر حکومت بھی ایکٹو ہو رہی ہے‘ دونوں کیا کیا حکمت عملی بنا رہے ہیں؟

موضوعات:



کالم



جارجیا میں تین دن


یہ جارجیا کا میرا دوسرا وزٹ تھا‘ میں پہلی بار…

کتابوں سے نفرت کی داستان(آخری حصہ)

میں ایف سی کالج میں چند ہفتے یہ مذاق برداشت کرتا…

کتابوں سے نفرت کی داستان

میں نے فوراً فون اٹھا لیا‘ یہ میرے پرانے مہربان…

طیب کے پاس کیا آپشن تھا؟

طیب کا تعلق لانگ راج گائوں سے تھا‘ اسے کنڈیارو…

ایک اندر دوسرا باہر

میں نے کل خبروں کے ڈھیر میں چار سطروں کی ایک چھوٹی…

اللہ معاف کرے

کل رات میرے ایک دوست نے مجھے ویڈیو بھجوائی‘پہلی…

وہ جس نے انگلیوں کوآنکھیں بنا لیا

وہ بچپن میں حادثے کا شکار ہوگیا‘جان بچ گئی مگر…

مبارک ہو

مغل بادشاہ ازبکستان کے علاقے فرغانہ سے ہندوستان…

میڈم بڑا مینڈک پکڑیں

برین ٹریسی دنیا کے پانچ بڑے موٹی ویشنل سپیکر…

کام یاب اور کم کام یاب

’’انسان ناکام ہونے پر شرمندہ نہیں ہوتے ٹرائی…

سیاست کی سنگ دلی ‘تاریخ کی بے رحمی

میجر طارق رحیم ذوالفقار علی بھٹو کے اے ڈی سی تھے‘…