برطانیہ میں پرتعیش مکان 3 ڈالر سے بھی کم میں فروخت کیلئے تیار،خریداروں کی لائن لگ گئی

  اتوار‬‮ 5 فروری‬‮ 2017  |  20:00

لندن(آئی این پی) برطانیہ میں ایک شہری نے روایتی طریقے سے اپنا گھر فروخت کرنے میں ناکامی کے بعد ایک منفرد اور انوکھا طریقہ اختیار کرلیا۔ برطانوی اخبار دی سن کے مطابق دنستان لو نامی برطانوی نے لندن سے 370 کلومیٹر شمال میں واقع کانٹی لنکا شائر میں اپنے 6 بیڈ روم والے گھر کو فروخت کے لیے پیش کیا۔

اخبار کا کہنا ہے کہ اس مکان کی مارکیٹ ویلیو 6.5 لاکھ پانڈ (8.12 لاکھ ڈالر)ے تاہم کسی ایک خریدار کی جانب سے بھی کوئی پیش کش موصول نہیں ہوئی ہے۔ اس کے بعد لا نے گھر کو فروخت کرنے کے واسطے ایک نیا طریقہ اپنایا ہے۔لا کا ارادہ ہے کہ وہ 5 لاکھ ریفل ٹکٹ جاری کرے گا جب کہ ایک ٹکٹ کی قیمت صرف 2 پانڈ( 2.5 امریکی ڈالر) ہوگی۔ اس طرح مجموعی طور پر 10 لاکھ پانڈ کی رقم جمع کرلینے کے بعد لا ان ٹکٹوں کی قرعہ اندازی کر کے انعام میں مکان جیتنے والے کے نام کا اعلان کرے گا۔ اس طرح جیتنے والے شخص کو یہ مکان صرف 2 پانڈ کے عوض مل جائے گا جب کہ فروخت کرنے والے کو پورے دس لاکھ پانڈ کی رقم حاصل ہو گی جو مکان کی مارکیٹ ویلیو سے تقریبا 4.5 لاکھ پانڈ زیادہ ہے۔برطانوی اخبار کے مطابق ڈنسٹن لا نے یہ گھر 2011 میں 4.35 لاکھ پانڈ میں خریدا تھا۔ اس وقت گھر میں چار افراد رہائش پذیر ہیں جن میں 37 سالہ لا ، اس کی 32 سالہ بیوی نتاشا اور دو بیٹے 15 سالہ ڈیلن اور 5 سالہ اوزی شامل ہیں۔دسنستان لو کی اس پیشکش پر حیرت انگیز ردعمل دیکھنے میں آیا ہے اورخریداروں کی لائن لگ گئی ہے توقع کی جارہی ہے کہ وہ جلد ہی اپنا ٹارگٹ مکمل کرلے گا اوراس کے بعد قرعہ اندازی کا انعقاد کیاجائے گا۔



موضوعات:

زیرو پوائنٹ

ہم کوئلے سے پٹرول کیوں نہیں بناتے؟

پروفیسر اطہر محبوب اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور کے وائس چانسلر ہیں‘ یہ چند دن قبل اسلام آباد آئے‘ مجھے عزت بخشی اور میرے گھر بھی تشریف لائے‘ یہ میری ان سے دوسری ملاقات تھی‘ پروفیسر صاحب پڑھے لکھے اور انتہائی سلجھے ہوئے خاندانی انسان ہیں‘ مجھے مدت بعد سلجھی اور علمی گفتگو سننے کا موقع ملا اور میں ابھی تک اس ....مزید پڑھئے‎

پروفیسر اطہر محبوب اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور کے وائس چانسلر ہیں‘ یہ چند دن قبل اسلام آباد آئے‘ مجھے عزت بخشی اور میرے گھر بھی تشریف لائے‘ یہ میری ان سے دوسری ملاقات تھی‘ پروفیسر صاحب پڑھے لکھے اور انتہائی سلجھے ہوئے خاندانی انسان ہیں‘ مجھے مدت بعد سلجھی اور علمی گفتگو سننے کا موقع ملا اور میں ابھی تک اس ....مزید پڑھئے‎