پی آئی اے کی آپریشنل سروسز عالمی معیار پرپورا اترنے میں کامیاب، پی آئی اے کے سیفٹی آڈٹ سے متعلق رپورٹ جاری

  جمعرات‬‮ 12 اگست‬‮ 2021  |  23:39

کراچی(این این آئی)کینیڈین ٹرانسپورٹ اتھارٹی نے پی آئی اے کی آپریشنل سروسز کو عالمی معیار پر کامیاب قرار دیتے ہوئے کہا کہ امیدہے کہ پی آئی اے فلائٹ آپریشن کی کارکردگی کو برقرار رکھے گی۔تفصیلات کے مطابق کینیڈین ٹرانسپورٹ اتھارٹی نے پی آئی اے حفاظتی توسیع رپورٹ جاری کردی ہے ، جس میں پی آئی اے کی آپریشنل سروسز کو عالمی معیار پر کامیاب قرار دیا گیا ہے۔پاکستان پر یورپی ایجنسی کی جانب سے پابندی کے بعد ٹرانسپورٹ کینیڈا نے پی آئی اے کا علیحدہ سے آڈٹ اگست 2020 میں کیا آڈٹ کینیڈاٹرانسپورٹ کے فارن آپریشن ڈویژن ایئروردیننس نے مکمل


کیا۔ پی آئی اے نے فلائٹ اور ایئر وردیننس آپریشن سے متعلق تمام تحفظات دور کردئیے۔کینیڈا ٹرانسپورٹ نے ایف اے سی او کے تحت آڈٹ رپورٹ مکمل کرکے جاری کی گئی ہے۔جس میں بتایا ہے کہ پی آئی اینے فلائٹ اور ایئر وردیننس آپریشن میں کامیابی حاصل کی ہے۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ پی آئی اے نے فلائٹ سیفٹی کارکردگی کوبڑھایا ہے، امید ہے پی آئی اے فلائٹ آپریشن کی کارکردگی کو برقرار رکھے گی، طویل مدتی پروگرام کے تحت کارکردگی کومزید بہتر بنایا جاسکتا ہے۔اس حوالے سے پی آئی اے کے سی ای اوارشد ملک نے کہاکہ پی آئی اے کی ٹیم کی کامیابی کا ثمرہے، آڈٹ رپورٹ نے ثابت کردیا پی آئی اے عالمی معیار پر پورا اتر رہی ہے ، پی آئی اے مزید بہتری کیلئے اقدامات کررہی ہے۔واضح رہے کہ گزشتہ سال میں پی آئی اے نے فلائٹ سیفٹی کارکردگی کو بڑھایا ہے امید کی جاتی ہے کہ پی آئی اے فلائٹ آپریشن کی اس کارکردگی کو برقرار رکھے گی، کینیڈاٹرانسپورٹ کینیڈا ٹرانسپورٹ نے آڈٹ بین القوامی شہری ہوابازی کے ادارے اکاو کے مخصوص ایئروردی نیس عناصر و مروجہ قواعد کے تحت کیا اس سے قبل ائیٹا آپریشنل سیفٹی آڈٹ (IOSA) پہلے ہی پی آئی اے کو 2023 تک آپریشنل سیفٹی سرٹیفیکیٹ جاری کرچکا ہے۔ پی آئی اے نے اپنا فضائی آپریشن کینیڈا کیلئے برقرار رکھا ہوا ہے۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

کوئی دوسرا آپشن نہیں بچا

خواجہ خورشید انور پاکستان کے سب سے بڑے موسیقار تھے‘ پاکستانی موسیقی میں ایک ایسا دور بھی آیا تھا جسے ’’خواجہ کا وقت‘‘ کہا جاتا تھا‘ وہ دھن نہیں بناتے تھے دل کی دھڑکن بناتے تھے اورجب یہ دھڑکنیں دھڑکتی تھیں تو ان کی آواز روح تک جاتی تھی‘ خواجہ صاحب نے 1958ء میں جھومر کے نام سے فلم شروع ....مزید پڑھئے‎

خواجہ خورشید انور پاکستان کے سب سے بڑے موسیقار تھے‘ پاکستانی موسیقی میں ایک ایسا دور بھی آیا تھا جسے ’’خواجہ کا وقت‘‘ کہا جاتا تھا‘ وہ دھن نہیں بناتے تھے دل کی دھڑکن بناتے تھے اورجب یہ دھڑکنیں دھڑکتی تھیں تو ان کی آواز روح تک جاتی تھی‘ خواجہ صاحب نے 1958ء میں جھومر کے نام سے فلم شروع ....مزید پڑھئے‎