نجی سکولز مالکان نے حکومتی احکامات ہوا میں اڑا دئیے حکام کو کیسے دھوکہ دیتے رہے؟سب کچھ کھل کر سامنے آگیا

  جمعہ‬‮ 27 ‬‮نومبر‬‮ 2020  |  12:51

لاہور (آن لائن) صوبائی دارالحکومت لاہور میں کرونا وائرس کی دوسری لہر کے پیش نظر تعلیمی اداروں کو بند کئے جانے کے حکومتی احکامات بالخصوص نجی سکولز مالکان نے ہوا میں اڑا ئیے ہیں جسے کے نتیجے میں شہر کی گلی اور محلوں میں واقع نجی سکولز مالکان نےگزشتہ روز اپنے اپنے طلباء کو بغیر یونیفارم کے سکول طلب کر رکھا تھا اور ان سے فیسیں وصول کی جاتی رہی ہیں اس صورتحال کا نوٹس لیتے ہوئے ڈسٹرکٹ سکول ایجوکیشن اتھارٹی لاہور نے شہر کے 1150 سکولوں کو باقاعدہ مراسلے ارسال کردئیے ہیں۔ جن میں سکولز مالکان کو آگاہ کیا


گیا ہے کہ وہ کرونا وائرس کی دوسری لہر کے دوران کسی صورت سکول نہیں کھول سکتے اور اگر کوئی سکول کھلا ہوا پایا گیا تو اس کی انتظامیہ کو 40ہزار روپے سے دو لاکھ روپے تک جرمانہ کیا جاسکتا ہے ،بتایا گیا ہے کہ اتھارٹی نے نجی سکولوں کا جائزہ لینے کے لئے اسسٹنٹ ایجوکیشن افسران کی سربراہی میں باقاعدہ ٹیمیں تشکیل دے دی ہیں جو سکولوں میں اچانک چھاپے مار کر صورتحال کا جائزہ لیں گے اور سکولز مالکان کو موقع پر ہی جرمانہ کریں گے۔ واضح رہے کہ محکمہ ڈسٹرکٹ سکول ایجوکیشن اتھارٹی نے نجی سکول مالکان کو بھی اپنے سٹاف کو ہفتے میں دو دن بلانے کی اجازت دے رکھی ہے۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

براڈ شیٹ

شریف الدین پیرزادہ عرف عام میں جدہ کے جادوگر کہلاتے تھے‘ یہ ملک کے واحد قانون دان تھے جو قانون سے ہر قسم کی گنجائش نکال لیتے تھے چناں چہ ایوب خان سے لے کر جنرل پرویز مشرف تک یہ ملک کے ہر آمر کے دست راست رہے‘ جنرل ضیاء الحق مرشد جب کہ جنرل پرویز مشرف انہیں ....مزید پڑھئے‎

شریف الدین پیرزادہ عرف عام میں جدہ کے جادوگر کہلاتے تھے‘ یہ ملک کے واحد قانون دان تھے جو قانون سے ہر قسم کی گنجائش نکال لیتے تھے چناں چہ ایوب خان سے لے کر جنرل پرویز مشرف تک یہ ملک کے ہر آمر کے دست راست رہے‘ جنرل ضیاء الحق مرشد جب کہ جنرل پرویز مشرف انہیں ....مزید پڑھئے‎