لیگی ایم این اے کے بھائیوں کے ہاتھوں پٹائی کے بعد طلال چوہدری مزید مشکلات کا شکار،سخت ایکشن کا مطالبہ‎

  اتوار‬‮ 27 ستمبر‬‮ 2020  |  14:44

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک)پاکستان مسلم لیگ ن کے رہنما طلال چودھری اسپتال می زیر علاج تاہم ان سے کوئی لیگی رہنما عیادت کیلئے نہ آیا ۔ ن لیگی خاتون ایم اے کے بھائیوں کے ہاتھو ں مار پیٹ کے بعد طلال چودھری مزید مشکلات میں پھنس گئے ہیں ، فیصل آباد سے پارٹی کا بڑا دھڑ لیگیرہنما طلال چودھری کیخلاف ہو گیا ہے انہوں نے سخت ایکشن لینے کا مطالبہ بھی کر دیاہے ۔ گزشتہ روز مارپیٹ سے طلال چودھری کا بازو 2 جگہ سے فریکچر ہو گیا ، خاتون رہنما کے بھائیوں کی جانب سے الزام لگایا گیا ہے کہ


ان کی بہن عائش رجب بلوچ کو تنگ کرنے کی کوشش کی گئی تھی ۔ اس سلسلے میں آج پنجاب پولیس نے ایس ڈی پی عبدالخالق کی سربراہی میں فیکٹ فائنڈنگ کمیٹی بنا دی ہے، 4 رکنی کمیٹی میں ایس ایچ او تھانہ مدینہ ٹاؤن، ایس ایچ او وومن پولیس کو شامل کیا گیا ہے۔قبل ازیں طلال چوہدری معالے پر ہائوسنگ سوسائٹی کے سیکیورٹی گارڈ عبداللہ نے بتایا کہ ن لیگی رہنما طلال چودھری 2بج کر چالیس منٹ پر گارڈن میں آئے ۔ انہیں اندر جانے پر روک گیا لیکن انہوں نے اندر جانے کی ضد کی ،طلال چودھری کو متعلقہ گھر سے فون کروانے کا کہا گیا لیکن انہوں نے کسی سے بات نہیں کروائی ۔سیکورٹی گارڈ کا کہنا تھا جب وہ ضد کر کے اندر گئے تو انہیں مار کھانا پڑی ۔ دوسری جانب سینئر رہنما اور وزیراعظم عمران خان کے معاون خصوصی ڈاکٹر شہباز گل کا کہنا ہے کہ طلال چوہدری معاملے میں مریم صفدر اپنی ہی خاتون رکن اسمبلی پر دباو ڈال رہی ہیں۔ سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر شہباز گل نے اپنے ایک ٹویٹ میں کہا کہ مریم صفدر کو خدا کا خوف کرنا چاہئے، متاثرہ خاتون پر پریشر ڈال کر طلال کے حق میں بیان دلوانے کی بجائے خاتون کا ساتھ دینا چاہئے اور طلال کو پارٹی رکنیت سے فارغ کرنا چاہئے۔شہباز گل کا کہنا ہے کہ ان کی انفارمیشن کےمطابق خاتون کو پریشرائز کر کے طلال کے حق میں بیان دلوایا جا رہا ہے۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

مولانا روم کے تین دروازے

ہم تیسرے دروازے سے اندر داخل ہوئے‘ درویش اس کو باب گستاخاں کہتے تھے‘ مولانا کے کمپاﺅنڈ سے نکلنے کے تین اور داخلے کا ایک دروازہ تھا‘ باب عام داخلے کا دروازہ تھا‘ کوئی بھی شخص اس دروازے سے مولانا تک پہنچ سکتا تھا‘شاہ شمس تبریز بھی اسی باب عام سے اندر آئے تھے‘ مولانا صحن میں تالاب ....مزید پڑھئے‎

ہم تیسرے دروازے سے اندر داخل ہوئے‘ درویش اس کو باب گستاخاں کہتے تھے‘ مولانا کے کمپاﺅنڈ سے نکلنے کے تین اور داخلے کا ایک دروازہ تھا‘ باب عام داخلے کا دروازہ تھا‘ کوئی بھی شخص اس دروازے سے مولانا تک پہنچ سکتا تھا‘شاہ شمس تبریز بھی اسی باب عام سے اندر آئے تھے‘ مولانا صحن میں تالاب ....مزید پڑھئے‎