پاکستانی مرتے ہیں تو مرنے دو ،طبی آلات اور کورونا وائرس کی ٹیسٹنگ کٹس کا بڑا ذخیرہ لے کر کارگو فلائٹ کراچی سے یورپ روانہ ‎‎

  بدھ‬‮ 25 مارچ‬‮ 2020  |  18:57

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)دنیا کے دیگر 195 ملکوں کی طرح پاکستان بھی اس وقت بین الاقوامی وبائی مرض کورونا وائرس کی زد میں ہے اور یہاں طبی آلات کی شدید قلت محسوس کی جارہی ہے، ایسے میں تین دن کے دوران طبی آلات سے بھرا ایک اور ہوائی جہاز پاکستان سے ہنگامی بنیادوں پر 100 ٹن سے زائد میڈیکل سپلائیز لے کر یورپ کیلئے روانہ ہوگیا ہے۔روزنامہ جنگ کی رپورٹ کے مطابق طبی آلات کا 106 ٹن بڑا ذخیرہ لے کر 21 مارچ کو بھی ایک فلائٹ اے ڈی بی 5362 کراچی ایئرپورٹ سے شام 7 بجکر 19 منٹ پر یورپی


ملک جمہوریہ چیک کے شہر پردوبیس کیلئے روانہ ہوئی تھی۔اسی ہوائی کمپنی کیپرواز اے ڈی بی 5368 جناح انٹرنیشنل ائیرپورٹ کراچی سے آج رات نو بجکر 45 منٹ پر جمہوریہ چیک کے اسی شہر پردوبیس کیلئے اڑان بھر چکی ہے۔ذرائع کے مطابق 100 ٹن سے زائد طبی آلات میں مبینہ طور پر کورونا وائرس کی ٹیسٹنگ کٹس کا بڑا ذخیرہ بھی شامل ہے جو مقامی طور پر پاکستان میں تیار کی جارہی ہیں۔ذرائع کے مطابق “چراغ تلے اندھیرا کے مترادف” پاکستانی حکومت یا بیشتر اداروں کو پتہ ہی نہیں کہ پاکستان کے مقامی کارخانوں میں یہ طبی آلات دنیا میں سب سے سستے تیار کرنا شروع کردیئے گئے ہیں اور مبینہ خاموشی کے تحت دنیا کے مختلف ممالک کو سپلائی بھی کیے جا رہے ہیں۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

مولانا روم کے تین دروازے

ہم تیسرے دروازے سے اندر داخل ہوئے‘ درویش اس کو باب گستاخاں کہتے تھے‘ مولانا کے کمپاﺅنڈ سے نکلنے کے تین اور داخلے کا ایک دروازہ تھا‘ باب عام داخلے کا دروازہ تھا‘ کوئی بھی شخص اس دروازے سے مولانا تک پہنچ سکتا تھا‘شاہ شمس تبریز بھی اسی باب عام سے اندر آئے تھے‘ مولانا صحن میں تالاب ....مزید پڑھئے‎

ہم تیسرے دروازے سے اندر داخل ہوئے‘ درویش اس کو باب گستاخاں کہتے تھے‘ مولانا کے کمپاﺅنڈ سے نکلنے کے تین اور داخلے کا ایک دروازہ تھا‘ باب عام داخلے کا دروازہ تھا‘ کوئی بھی شخص اس دروازے سے مولانا تک پہنچ سکتا تھا‘شاہ شمس تبریز بھی اسی باب عام سے اندر آئے تھے‘ مولانا صحن میں تالاب ....مزید پڑھئے‎