سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر نے بھی حکومت اور مولانا فضل الرحمان کے درمیان مذاکرات کی حمایت کردی،”مائنس عمران خان فارمولے“ کاانکشاف

  منگل‬‮ 8 اکتوبر‬‮ 2019  |  22:28

اسلام آباد (آن لائن) سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر نے کہا ہے کہ مولانا فضل الرحمان کے احتجاج کے پیچھے ذاتی عناد اور بغض نظر آرہا ہے، ملک کو چیلنجز درپیش ہیں، دھرنے دینے کا وقت مناسب نہیں ہے، عمران خان حکومت اورپارلیمنٹ دونوں مدت پوری کریں گے،مائنس عمران خان فارمولا کسی صورت قابل قبول نہیں ہے، منگل کے روز نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے قومی اسمبلی کے سپیکر اسد قیصر نے کہا ہے کہ مولانا فضل الرحمان کے مارچ کا معاملہ حکومت دیکھے گی حکومت اور مولانا فضل الرحمان کے درمیان مذاکرات ہونے چاہئیں۔ انہوں نے کہا


کہ ملک کو کئی چیلنجز درپیش ہیں یہ وقت دھرنے کا نہیں ہے۔ مولانا فضل الرحمان کے احتجاج کے پیچھے ذاتی عناد اور بغض نظر آ رہا ہے۔ موجودہ حالات میں تمام جماعتوں کو ایک صف میں کھڑے ہونا ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں انتہائی تشویشناک صورتحال ہے۔ مقبوضہ کشمیر میں لوگ کرفیو کے باعث کرب میں مبتلا ہیں۔ اسد قیصر نے کہا کہ عمران خان اور پارلیمنٹ دونوں اپنی مدت پوری کریں گے۔ پارلیمنٹ بھی رہے گی اور عمران خان ہی وزیراعظم رہیں گے۔ مائنس عمران خان فارمولا کسی طور پر قابل قبول نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ قاسم سوری اپنا قانونی حق استعمال کر رہے ہیں۔ سپریم کورٹ ان کے کیس کا جوبھی فیصلہ کرے گی قبول کریں گے۔


زیرو پوائنٹ

استنبول یا دہلی ماڈل

میاں نواز شریف کے پاس دو آپشن ہیں‘ استنبول یا دہلی‘ ہم ان آپشنز کو ترکی یا انڈین ماڈل بھی کہہ سکتے ہیں۔ہم پہلے ترکی ماڈل کی طرف آتے ہیں‘ رجب طیب اردگان 1954ء میں استنبول میں قاسم پاشا کے علاقے میں پیدا ہوئے‘ غریب گھرانے سے تعلق رکھتے تھے‘ سکول سے واپسی پر گلیوں میں شربت بیچتے تھے‘بڑی مشکل ....مزید پڑھئے‎

میاں نواز شریف کے پاس دو آپشن ہیں‘ استنبول یا دہلی‘ ہم ان آپشنز کو ترکی یا انڈین ماڈل بھی کہہ سکتے ہیں۔ہم پہلے ترکی ماڈل کی طرف آتے ہیں‘ رجب طیب اردگان 1954ء میں استنبول میں قاسم پاشا کے علاقے میں پیدا ہوئے‘ غریب گھرانے سے تعلق رکھتے تھے‘ سکول سے واپسی پر گلیوں میں شربت بیچتے تھے‘بڑی مشکل ....مزید پڑھئے‎