شوکت بسرا کے اپنے پستول سے کارکن مارا گیا ، اہم وزیر کے حیرت انگیزانکشافات

14  مارچ‬‮  2017

اسلام آباد(آئی این پی)قومی اسمبلی میں اپوزیشن جماعتیں پیپلز پارٹی اور تحریک انصاف وزیر مملکت عابد شیر علی کے ریمارکس پر ایوان سے واک آؤٹ کر گئیں ‘ واک آؤٹ کی وجہ سے کورم ٹوٹ گیا ‘ سپیکر نے اجلاس کورم پور اہونے تک ملتوی کر دیا ‘ قائد حزب اختلاف سید خورشید شاہ نے مطالبہ کیا کہ حکومت لاہور میں پیپلز پارٹی کے سرگرم کارکن سہیل بابر بٹ کے قاتلوں کو گرفتار کرے جنہیں (ن) لیگ میں شامل نہ ہونے پر

قتل کی دھمکیاں دی جا رہی تھیں۔ انہوں نے سانحہ ماڈل ٹاؤن اور شوکت بسرا پر حملے میں مارے جانے والے پارٹی کارکنان کے قتل کی تحقیقاتی رپورٹس منظر عام پر لانے کا بھی مطالبہ کیا۔ وزیر مملکت عابد شیر علی نے جواب دیا کہ شوکت بسرا کا ذاتی جھگڑا تھا ان کے اپنے پستول سے کارکن مارا گیا۔ پیپلز پارٹی واقعہ کو سیاسی رنگ دے رہی ہے۔ پنجاب میں کوئی سیاسی انتقام کی کارروائی نہیں ہو رہی جس پر پیپلز پارٹی کے ارکان واک آؤٹ کر گئے۔ سید خورشید شاہ نے کہا کہ جمہوری دور میں سیاسی کارکن کا قتل افسوس ناک ہے۔ گزشتہ روز سہیل بابر بٹ کوگھر میں گھس کر قتل کیا گیا۔ وہ پی پی پی کے سرگرم کارکن تھے۔ وہ لاہور میں حال ہی میں بلدیاتی انتخابات میں کامیاب ہوئے تھے انہیں (ن) لیگ جوائن کرنے ورنہ قتل کی دھمکیاں دی جا رہی تھیں۔ سابق رکن اسمبلی چوہدری منظور نے رابطہ کر کے آگاہ کیا تھا کہ سہیل بٹ کو قتل کی دھمکیاں دی جا رہی تھیں۔ سہیل بٹ کے تھانے میں نیا ایس ایچ او لگایا گیا یہ ریاستی دہشت گردی ہے جو سیاسی کارکنوں کے ساتھ کی جا رہی ہے۔ پہلے شوکت بسرا پر حملہ کیا گیا ایک کارکن وہاں بھی قتل ہوا۔ وزیر اعلیٰ نے انکوائری کا حکم دیا رپورٹ ابھی تک نہیں آئی۔ اگر ریاست اس طرح سے سوتیلی ماں کا کردار ادا کرے گی تو ریاست خود کمزور ہو گی۔ دہشت گردوں نے بھی پی پی پی کو دھمکیاں دیں اگر حکومت کل ایک سیاسی جماعت

کو روکنے کیلئے کوشش کرے گی تو خطرناک نتائج نکلیں گے۔ گریڈ 20 سے 21 میں ترقیوں کیلئے وزیر اعظم نے جن 90 افسران کے نام واپس کر دئیے ان میں سے اکثر چھوٹے صوبوں سے ہیں۔ ایک آفیسر نے بتایا کہ 2014۔15ء4 اور 16 میں اس کی پرموشن ہوئی اور روک دی گئی۔ پارلیمنٹ کی راہداری میں جھگڑا ارکان پارلیمنٹ کی فرسٹریشن ہے ہم نے فرینڈلی اپوزیشن کے طعنے سنے مگر قتل کیا جائے گا تو کیا کریں گے۔ احتجاج کے علاوہ کوئی راستہ نہیں۔ اپوزیشن ارکان کو ترقیاتی فنڈز بھی نہیں ملتے۔ حکومت کو ہوش کے ناخن لینے چاہئیں۔ ایف آئی آر درج ہوئی ہے۔ قاتلوں کو گرفتار کیا جائے۔

خورشید شاہ نے کہا کہ شوکت بسرا کی رپورٹ سامنے لائی جائے۔ ماڈل ٹائون سانحہ کی رپورٹ بھی لائی جائے اس طرح کا رویہ نہیں اپنایا جانا چاہیے۔ عابد شیر علی کے رویہ پر واک آئوٹ کر رہے ہیں۔ اس کے ساتھ ہی پیپلز پارٹی اور پی ٹی آئی کے ارکان واک آؤٹ کر گئے۔ شیخ آفتاب نے کہا کہ اس واقعہ کی چھان بین کرائی جائے گی اس موقع پر نعمان اسلام الدین شیخ نے کورم کی نشاندہی کر دی۔

عابد شیر علی نے کہا کہ قائد حزب اختلاف نے حکومت پر الزامات عائد کئے۔ شوکت بسرا کا ذکر ہوا۔ شوکت بسرا افسر کے چیمبر میں جا کر حملہ آور ہوئے ان کا اپنا پستول تھا جس سے فائرنگ کر کے بندہ مارا گیا یہ سیاسی ایشو نہیں جسے بنایا جا جرہا ہے۔ یہ معاملہ عدالت میں ہے اسے سیاسی مسئلہ بنایا جا رہا ہے۔ ماڈل ٹاؤن سانحہ کی انکوائری میں حکومت نے کوئی مداخلت نہیں کی۔ مسلم لی گ(ن) کی حکومت میں فیکٹریوں میں جا کر لوگوں کو نہیں ما را جا رہا۔ پنجاب میں سیاسی انتقام کا نشانہ نہیں بنایا جا رہا۔

موضوعات:



کالم



مرحوم نذیر ناجی(آخری حصہ)


ہمارے سیاست دان کا سب سے بڑا المیہ ہے یہ اہلیت…

مرحوم نذیر ناجی

نذیر ناجی صاحب کے ساتھ میرا چار ملاقاتوں اور…

گوہر اعجاز اور محسن نقوی

میں یہاں گوہر اعجاز اور محسن نقوی کی کیس سٹڈیز…

نواز شریف کے لیے اب کیا آپشن ہے (آخری حصہ)

میاں نواز شریف کانگریس کی مثال لیں‘ یہ دنیا کی…

نواز شریف کے لیے اب کیا آپشن ہے

بودھ مت کے قدیم لٹریچر کے مطابق مہاتما بودھ نے…

جنرل باجوہ سے مولانا کی ملاقاتیں

میری پچھلے سال جنرل قمر جاوید باجوہ سے متعدد…

گنڈا پور جیسی توپ

ہم تھوڑی دیر کے لیے جنوری 2022ء میں واپس چلے جاتے…

اب ہار مان لیں

خواجہ سعد رفیق دو نسلوں سے سیاست دان ہیں‘ ان…

خودکش حملہ آور

وہ شہری یونیورسٹی تھی اور ایم اے ماس کمیونی کیشن…

برداشت

بات بہت معمولی تھی‘ میں نے انہیں پانچ بجے کا…

کیا ضرورت تھی

میں اتفاق کرتا ہوں عدت میں نکاح کا کیس واقعی نہیں…