کینیڈین وزیر اعظم نے اجتماعی قبروں کو روسی جنگی جرائم قرار دیدیا

  پیر‬‮ 19 ستمبر‬‮ 2022  |  17:21

لندن(این این آئی)کینیڈا کے وزیر اعظم جسٹن ٹروڈو نے روس کے زیر قبضہ سے چھڑوائے گئے یوکرینی علاقووں میں اجتماعی قبروں کی موجودگی کو روسی جنگی جرائم لا نام دیتے ہوئے کہا ہے ان جرائم کا سخت احتساب ہونا ضروری ہے۔میڈیارپورٹس کے مطابق ٹروڈو ملکہ برطانیہ الزبتھ دوم کی آخری رسومات میں شرکت کے لیے ان دنوں لندن میں ہیں۔

جہاں انہوں نے برطانوی وزیر اعظم لیز ٹرس سے بھی ملاقات کی۔ ان کی اس ملاقات میں یوکرین پر روسی حملہ سب سے اہم موضوع تھا۔کینیڈا کے وزیر اعظم نے کہاکہ بلا شبہ برطانیہ اور کینیڈا روس کے خلاف یوکرین کی حمایت میں کھڑے دو مضبوط ترین ملک ہیں، جو یوکرین کی پوری طرح پشت پناہی کرتے ہیں۔’ ٹروڈو نے کہا ‘ روسی اقدامات بڑے کھل کر سامنے آئے ہیں۔ بشمول روسی جنگی جرائم کے۔ یہ جرائم ہمارے لیے قابل قبول نہیں ہے۔ واضح رہے یوکرینی حکام نے پچھلے ہفتے کہا تھا کہ انہیں یوکرین کے شمال مشرقی شہر لزیوم کے نزدیک ووڈ لینڈ میں 440 لاشیں ملی ہیں۔ یہ قصبہ یوکرین نے روسی قبضہ سے حال ہی میں چھڑایا ہے۔ یوکرینی حکام کے مطابق 440 لاشوں میں سے اکثر لاشیں سویلینز کی ہیں۔ تاہم ان کی موت کی وجہ ابھی تک معلوم نہیں ہو سکی ہے۔یوکرینی حکام کے اس موقف پر کریملن نے ان اجتماعی قبروں کے ملنے پرابھی تک کوئی رد عمل نہیں دیا ہے۔ البتہ ماسکو نے اس امر سے بار بار انکار کیا ہے کہ اس نے جان بوجھ کر سویلینز کو نشانہ بنایا ہے۔



زیرو پوائنٹ

پاکستان کا المیہ کیا ہے؟

میں نے ہرمینس (Hermanus) کا ذکر کیا تھا‘ یہ شہر کیپ ٹائون سے 115 کلومیٹر کے فاصلے پر سمندر کے کنارے آباد ہے‘ اسے ڈچ کسان ہرمینس پیٹرز نے 1805ء میں آباد کیا تھا‘آج بھی اس کی 80فیصد آبادی گوروں پر مشتمل ہے‘ ہرمینس وہیل مچھلیوں کی وجہ سے پوری دنیا میں مشہور ہے‘ اکتوبر میں روس میں سردیاں شروع ....مزید پڑھئے‎

میں نے ہرمینس (Hermanus) کا ذکر کیا تھا‘ یہ شہر کیپ ٹائون سے 115 کلومیٹر کے فاصلے پر سمندر کے کنارے آباد ہے‘ اسے ڈچ کسان ہرمینس پیٹرز نے 1805ء میں آباد کیا تھا‘آج بھی اس کی 80فیصد آبادی گوروں پر مشتمل ہے‘ ہرمینس وہیل مچھلیوں کی وجہ سے پوری دنیا میں مشہور ہے‘ اکتوبر میں روس میں سردیاں شروع ....مزید پڑھئے‎