اپنا گھر خواب بن گیا پراپرٹی کی قیمتوں میں ریکارڈ اضافہ

  منگل‬‮ 2 مارچ‬‮ 2021  |  11:37

کراچی(این این آئی)کراچی میں زندگی معمول پر آتے ہی پراپرٹی کی قیمتوں میں 100 فیصد تک اضافہ ہوگیا ہے اور غریب کیلئے اپنا گھر بنانا خواب بن گیا ہے ، کم قیمت پلاٹ یا گھر نہ ملنے پر کچی آبادیاں بننا شروع ہوگئیں اور 3ڈی گوٹھ کی کاروباری زبان متعارف کرائی گئی ہے۔تفصیلات کے مطابق وزیراعظم کی ہاوسنگ اسکیم کو کامیاب بنانے کے لئےاسٹیٹ بینک آف پاکستان کی جانب سے سنجیدہ اور عوامی مفاد کی بھرپور مالیاتی پالیسیاں بنانے کے اثرات سامنے آنے لگے ہیں ، کورونا وبا کے کنٹرول ہونے کے بعد پراپرٹی کی خرید و فروخت میں تیزی


آئی ہے ، اس صورتحال میں پراپرٹی کی قیمتوں میں ہوشربا اضافہ ہوگیا ہے، اس صورتحال میں عام انسان پراپرٹی کی خریداری قوت خرید باہر ہوگئی ہے اور اپنا گھر بنانا صرف خواب رہ گیا ہیکراچی شہر میں زندگی معمول پر آنے پر پراپرٹی کی قیمتوں 50 سے 100 فیصد تک اضافہ ہوگیا ہے ، بلڈرز نے جو تجارتی و رہائشی منصوبے روکے ہوئے تھے ، ان منصوبوں کا اعلان کردیا جبکہ زیر تعمیر منصوبوں پر تعمیراتی کام بھی شروع کردیا ہے، شہر کے جن علاقوں میں خرید و فروخت زیادہ ہورہی ہے ان میں شاہ لطیف ٹاون شپ، ناردرن بائی پاس ، سرجانی ٹاون ، اسکیم 33، ملیر، جناح ایونیو روڈشامل ہیں ۔جہاں پانی بجلی اور گیس کے ساتھ سڑک کی بھی سہولت موجود ہو اس کی قیمت تقریبا دگنی ہوچکی ہے ۔ جناح ایونیو روڈ پر فلیٹایک کروڑ روپے سے زائد مالیت کے ہوچکے ہیں جبکہ زیر تعمیر منصوبوں میں بکنگ ہی ایک کروڑ روپے سے زائد میں ہورہی ہے۔ ناردرن بائے پاس پر قانونی طور مستحکم اور بنیادی سہولتوں کی حامل سوسائٹیز یا کمرشل منصوبوں میں 120 گز کے پلاٹ کی قیمت 10 لاکھ سےزائد ہوچکی ہے۔شہر میں بیرون ملک سے آنے والوں کے باعث آبادی میں تیزی سے اضافہ ہورہا ہے ، آبادی کے دباو اور اور کم قیمت پلاٹ ، مکان ، فلیٹ یا گھر نہ ملنے پر کچی آبادیاں اور گوٹھ بن رہے ہیں جبکہ شہر میں اب 3ڈی گوٹھ کی کاروباری زبان متعارف کرائی گئی ہے، 3ڈی گوٹھ کا مطلب (1) پلاٹ خریدو (2) بناو (3)رہائش اختیار کرو، یعنی کسی بھی خالی جگہ پر بااثر لوگوں کی سرپرستی میں راتوں رات گوٹھ بنا رہے ہیں ۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

12ہزار درد مندوں کی تلاش

ارشاد احمد حقانی (مرحوم)’’ ریڈ فائونڈیشن‘‘ کا پہلا تعارف تھے‘ حقانی صاحب سینئر صحافی تھے‘ سیاسی کالم لکھتے تھے اور یہ اپنے زمانے میں انتہائی مشہور اور معتبر تھے‘ میری عمر کے زیادہ تر صحافی ان کی تحریریں پڑھ کر جوان ہوئے اور صحافت میں آئے‘ حقانی صاحب ہر رمضان میں چند قومی این جی اوز اور خیر کا کام ....مزید پڑھئے‎

ارشاد احمد حقانی (مرحوم)’’ ریڈ فائونڈیشن‘‘ کا پہلا تعارف تھے‘ حقانی صاحب سینئر صحافی تھے‘ سیاسی کالم لکھتے تھے اور یہ اپنے زمانے میں انتہائی مشہور اور معتبر تھے‘ میری عمر کے زیادہ تر صحافی ان کی تحریریں پڑھ کر جوان ہوئے اور صحافت میں آئے‘ حقانی صاحب ہر رمضان میں چند قومی این جی اوز اور خیر کا کام ....مزید پڑھئے‎