ثابت ہوگیا جمال خاشقجی کوقتل محمد بن سلمان نے ہی کروایا مقتول صحافی کی منگیتر کاسعودی ولی عہد کو سزا دینے کا مطالبہ

  پیر‬‮ 1 مارچ‬‮ 2021  |  20:11

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک )مقتول سعودی صحافی جمال خاشقجی کی منگیتر نے سعودی ولی عہد، شہزادہ محمد بن سلمان کو ’بلا تاخیر‘ سزا دینے کا مطالبہ کیا ہے۔بی بی سی اردو کے مطابق خدیجہ چنگیز کی جانب سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ ’اس سے نہ صرف ہمیں وہ انصاف ملے گاجس کے ہم منتظر ہیں، بلکہ اس سے بار بار ہونے والی ایسی ہی دوسری کارروائیوں کو بھی روکا جاسکتا ہے۔‘جمال خشقجی کی منگیتر کا یہ بیان امریکی انٹلیجنس رپورٹ منظرِ عام پر آنے کے بعد جاری کیا گیا ہے۔ اس رپورٹ میں کہا گیا تھاکہ شہزادہ


محمد بن سلمان نے سعودی نژاد امریکی صحافی جمال خاشقجی کو زندہ یا مردہ پکڑنے کے منصوبے کی منظوری دی تھی۔سعودی عرب نے امریکی انٹیلیجنس رپورٹ کو واضح طور پر مسترد کرتے ہوئے اسے تسلیم کرنے سے انکار کیا ہے۔واضح رہے کہ سعودی نژاد امریکی صحافی اور امریکی اخبار واشنگٹن پوسٹ کے نمائندے جمال خاشقجی کو سنہ 2018 میں استنبول کے سعودی سفارت خانہ میں بڑی بے رحمی سے قتل کر دیا گیا تھا۔ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان، سعودی عرب کے سفارت خانے کی عمارت کے اندر سعودی اہلکاروں کے ہاتھوں ہونے والے اس قتل میں ملوث ہونے کے تمام الزامات سے انکار کرتے آئے ہیں۔سعودی حکام نے سعودی صحافی کے قتل کے واقعے کو ’سرکش آپریشن‘ قرار دیا اور سعودی عرب کی ایک عدالت نے اس قتل کے جرم میں پانچ اہلکاروں کو موت کی سزا سنائی تھی لیکن گذشتہ سال ستمبر میں ان کی سزا میں کمی کر کے اس کو 20 سال قید میں بدل دیا گیا۔


زیرو پوائنٹ

راﺅنڈ اباﺅٹ

اندر کمار گجرال بھارت کے 12 ویں وزیراعظم تھے‘ یہ 1997ءاور 1998ءکے درمیان ایک سال وزیراعظم رہے‘ اٹل بہاری واجپائی ان کے بعد وزیراعظم بنے تھے‘ گجرال جہلم میں پیدا ہوئے تھے‘ ان کی ساری تعلیم جہلم اور لاہور کی تھی اور یہ دل سے پاکستان اور بھارت کے تعلقات بہتر دیکھنا چاہتے تھے‘ میاں نواز شریف کے ....مزید پڑھئے‎

اندر کمار گجرال بھارت کے 12 ویں وزیراعظم تھے‘ یہ 1997ءاور 1998ءکے درمیان ایک سال وزیراعظم رہے‘ اٹل بہاری واجپائی ان کے بعد وزیراعظم بنے تھے‘ گجرال جہلم میں پیدا ہوئے تھے‘ ان کی ساری تعلیم جہلم اور لاہور کی تھی اور یہ دل سے پاکستان اور بھارت کے تعلقات بہتر دیکھنا چاہتے تھے‘ میاں نواز شریف کے ....مزید پڑھئے‎