دوران میچ کوہلی نے مجھ پر تھوکا،سابق جنوبی افریقی کپتان کا دعوی

30  جنوری‬‮  2024

جوہانسبرگ (این این آئی)جنوبی افریقا کے سابق کپتان ڈین ایلگر نے دعویٰ کیا ہے کہ ایک میچ کے دوران سابق بھارتی کپتان ویرات کوہلی نے ان پر تھوکا جس کے بعد انہوں نے کوہلی کو دھمکایا تھا۔ڈین ایلگر نے یہ دعویٰ بیٹ وے ساتھ افریقا نامی یوٹیوب چینل پر ہونے والے پوڈکاسٹ میں کیا جس میں ان سے سوال پوچھا گیا کہ کیا آپ کی کبھی کوہلی یا ایشون سے لڑائی ہوئی ہے؟جواب میں سابق کپتان نے بتایا کہ یہ میرا اور کوہلی کا پہلا سامنا تھا جب ہم بھارت میں دو ٹیسٹ میچز کھیلنے گئے تھے، بھارت کی وہ وکٹیں مذاق تھیں، جب میں بیٹنگ کے لیے آیا تو ایشون اور جڈیجا کے خلاف خود کو سنبھالے ہوئے تھا کہ کوہلی نے مجھ پر تھوکا۔

ایلگر نے کہاکہ میں نے گالی دیتے ہوئے کوہلی سے کہا کہ اگر دوبارہ ایسا کیا تو میں بلے سے تمیہں ماروں گا۔سابق کپتان نے پوڈکاسٹ میں بتایا کہ 2017 اور 2018 میں جب بھارت دورہ جنوبی افریقا کے لیے آیا تب کوہلی نے ڈرنکس بریک کے دوران اپنے نامناسب رویے کے لیے معذرت طلب کی۔ایلگر نے بتایا اس واقعہ کے دو سال بعد کوہلی نے مجھے کہا کہ سیریز کے بعد کیا ہم جاکر ڈرنک پی سکتے ہیں، میں اپنے کیے کے لیے معافی مانگنا چاہتا ہوں۔انہوں نے بتایا کہ اے بی ڈی ویلیئرز کو جب اس معاملے کی خبر ہوئی تو انہوں نے کوہلی سے جاکر پوچھا کہ تم میرے ٹیم میٹس پر کیوں تھوک رہے ہو؟واضح رہے کہ اے بی ڈی ویلیئرز اور ویرات کوہلی انڈین پریمیئر لیگ (آئی پی ایل)میں رائل چیلنجرز بنگلور کی نمائندگی کرتے ہیں۔



کالم



ہم بھی کیا لوگ ہیں؟


حافظ صاحب میرے بزرگ دوست ہیں‘ میں انہیں 1995ء سے…

مرحوم نذیر ناجی(آخری حصہ)

ہمارے سیاست دان کا سب سے بڑا المیہ ہے یہ اہلیت…

مرحوم نذیر ناجی

نذیر ناجی صاحب کے ساتھ میرا چار ملاقاتوں اور…

گوہر اعجاز اور محسن نقوی

میں یہاں گوہر اعجاز اور محسن نقوی کی کیس سٹڈیز…

نواز شریف کے لیے اب کیا آپشن ہے (آخری حصہ)

میاں نواز شریف کانگریس کی مثال لیں‘ یہ دنیا کی…

نواز شریف کے لیے اب کیا آپشن ہے

بودھ مت کے قدیم لٹریچر کے مطابق مہاتما بودھ نے…

جنرل باجوہ سے مولانا کی ملاقاتیں

میری پچھلے سال جنرل قمر جاوید باجوہ سے متعدد…

گنڈا پور جیسی توپ

ہم تھوڑی دیر کے لیے جنوری 2022ء میں واپس چلے جاتے…

اب ہار مان لیں

خواجہ سعد رفیق دو نسلوں سے سیاست دان ہیں‘ ان…

خودکش حملہ آور

وہ شہری یونیورسٹی تھی اور ایم اے ماس کمیونی کیشن…

برداشت

بات بہت معمولی تھی‘ میں نے انہیں پانچ بجے کا…