مریم نواز کو مسلم لیگ ن کا صدر بنائے جانے کا امکان

  منگل‬‮ 29 ‬‮نومبر‬‮ 2022  |  15:43

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک)مسلم لیگ (ن)نے تنظیمی سطح پربڑی تبدیلیوں کا فیصلہ کیا ہے ، پارٹی صدرسمیت دیگر اہم عہدوں میں تبدیلی متوقع ہے ، پارٹی کی نائب صدر مریم نواز کو اہم ذمہ داری ملنے کا امکان ہے ۔دنیا نیوز میں شائع رپورٹ کے مطابق تین دسمبر کو پارٹی کے

یوم تاسیس کے مو قع پر مرکزی مجلس عاملہ/مرکزی جنرل کونسل کا غیر معمولی اجلاس وفاقی دارالحکومت میں پارٹی کے مرکزی سیکرٹریٹ میں طلب کر لیا گیا ہے جس میں پارٹی صدر ، وزیر اعظم شہباز شریف سمیت تمام مرکزی ،صوبائی عہدیدار اور جنرل کونسل کے لگ بھگ 2 ہزار کارکن شریک ہوں گے ۔ جس میں پارٹی کا انٹرا الیکشن کرایا جائے گا،کیونکہ موجود پارٹی تنظیم کی مدت 4 سال مکمل ہو چکی ہے ، پارٹی صدر،جنرل سیکرٹری سمیت تمام عہدوں پردوبارہ انتخاب ہو گا۔مسلم لیگ ن کے آئین کے مطابق صدر سمیت پارٹی کے کسی بھی عہدے کے لیے کوئی بھی کارکن کاغذات جمع کر وا سکتا ہے ۔ رپورٹ کے مطابق مرکزی سیکرٹریٹ نے جنرل کونسل کے اجلاس کے انعقاد کیلئے تیاری شروع کر دی ۔ پارٹی کے اندر یہ تجویز زیر غور ہے کہ پارٹی صدر شہباز شریف وزیر اعظم ہوتے ہوئے تنظیمی امور پر بھر پور توجہ نہیں دے سکتے اسلئے یہ ذمہ داری مریم نواز کو سونپ دی جائے تاکہ شہباز شریف وزارت عظمٰی اور ملکی معاملات پر بھر پور توجہ مرکوز کر سکیں۔ پارٹی کے دیگر اہم عہدوں میں تبدیلی بھی متوقع ہے جس کے لئے مختلف لابیاں اور دھڑے متحرک ہو گئے ہیں۔ صوبائی تنظیموں پنجاب، سندھ، بلوچستان، کے پی کے بشمول آزاد کشمیر، گلگت بلتستان میں بھی عہدیداروں میں تبدیلی متوقع ہے ۔ رپورٹ کے مطابق پارٹی ڈھانچے میں تبدیلیا ں عام انتخابات کو مد نظر رکھ کر کی جائیں گی۔ نئے سیٹ اپ کا انتخابی مہم میں بھی کلیدی کر دار ہوگا۔



زیرو پوائنٹ

اب تو آنکھیں کھول لیں

یہ14 جنوری کی رات تھی‘ پشاور کے سربند تھانے پر دستی بم سے حملہ ہو گیا‘ دھماکا ہوا اور پورا علاقہ لرز گیا‘ وائر لیس پر کال چلی اور ڈی ایس پی سردار حسین فوری طور پر تھانے پہنچ گئے‘ ان کے دو محافظ بھی ان کے ساتھ تھے‘یہ لوگ گاڑی سے اترے‘ چند قدم لیے‘ دور سے فائر ہوا‘سردار ....مزید پڑھئے‎

یہ14 جنوری کی رات تھی‘ پشاور کے سربند تھانے پر دستی بم سے حملہ ہو گیا‘ دھماکا ہوا اور پورا علاقہ لرز گیا‘ وائر لیس پر کال چلی اور ڈی ایس پی سردار حسین فوری طور پر تھانے پہنچ گئے‘ ان کے دو محافظ بھی ان کے ساتھ تھے‘یہ لوگ گاڑی سے اترے‘ چند قدم لیے‘ دور سے فائر ہوا‘سردار ....مزید پڑھئے‎