ہم بچوں کو مال کی جگہ مسجد لے کر جاتے ہیں، یہ ترک خاندان چھٹی کا دن شاپنگ مال کی بجائے مسجد میں کیوں گزارتا ہے؟

  اتوار‬‮ 23 جنوری‬‮ 2022  |  21:08

استنبول (مانیٹرنگ ڈیسک) ہم بچوں کو مال کی جگہ مسجد لے کر جاتے ہیں، یہ کہنا ہے کہ ترکی سے تعلق رکھنے والے احمد خان کا، ان کا کہنا ہے کہ جب ہم چھوٹے تھے تو ہم نماز کے لئے مسجد جاتے تھے رمضان میں تراویح کے لئے جاتے تھے ہماری پرورش مسجد میں ہوئیلیکن آج کل کے بچے مالز اور شاپنگ سینٹر میں پل رہے ہیں۔ احمد خان اپنی بیوی زینب اور بچوں محمد، حمزہ اور مریم کے ساتھ ہر ہفتے کے آخر میں استنبول کی کسی ایک مسجد کا انتخاب کرکے اس کا دورہ کرتے ہیں، وہ اپنے


بیوی بچوں سمیت اب تک سو مساجد کا دورہ کر چکے ہیں، احمد خان کی اہلیہ بھی مساجد جانا پسند کرتی ہیں، زینب کا کہنا تھا کہ اکثر لوگ بچوں کے شور مچانے سے پریشان ہوتے ہیں اور کہتے ہیں کہ بچوں کے شور کی وجہ سے ان کی نماز میں خلل ہوتا ہے، زینب کا کہنا تھا کہ لوگ بچوں کو شور مچانے پر منع کرتے ہیں تو میں انھیں سمجھاتی ہوں اگر بچے یہاں نہیں آئیں گے تو چھٹی کے دن انھیں مالز لے کر جانا پڑے گا جس سے ان کی تربیت مسجد کے بجائے مال میں ہوگی۔اس خاندان کا کہنا ہے کہ مسجد میں بچوں کی اخلاقی تربیت کے لئے ضرور جانا چاہیے۔ ہم چھٹی کا دن مالز کی بجائے مسجد میں گزارتے ہیں تاکہ اسلامی ماحول میں بچوں کی پرورش ہو سکے۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

عبادت

مجھے دعا کرنے کا اصل طریقہ ایک ٹرینر نے سکھایا تھا‘ یہ جسمانی ورزش کا استاد تھا اور میرے جیسے ’’مڈل ایج‘‘ لوگوں کو ایکسرسائز کے طریقے سکھاتا تھا۔ میں اکثر سوچتا تھا ہم میں سے اکثر لوگ پانچ وقت نماز پڑھتے ہیں‘ اللہ تعالیٰ ہمیں گھنی داڑھی رکھنے کی توفیق بھی دیتا ہے‘ ہم وضو میں بھی رہتے ہیں‘ ....مزید پڑھئے‎

مجھے دعا کرنے کا اصل طریقہ ایک ٹرینر نے سکھایا تھا‘ یہ جسمانی ورزش کا استاد تھا اور میرے جیسے ’’مڈل ایج‘‘ لوگوں کو ایکسرسائز کے طریقے سکھاتا تھا۔ میں اکثر سوچتا تھا ہم میں سے اکثر لوگ پانچ وقت نماز پڑھتے ہیں‘ اللہ تعالیٰ ہمیں گھنی داڑھی رکھنے کی توفیق بھی دیتا ہے‘ ہم وضو میں بھی رہتے ہیں‘ ....مزید پڑھئے‎