جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نظر ثانی کیس ،سپریم کورٹ نے کارروائی کو براہ راست دکھانے کیلئے وفاقی حکومت کو نوٹس جاری کر دیا

  بدھ‬‮ 3 مارچ‬‮ 2021  |  23:40

اسلام آباد(آن لائن) سپریم کورٹ نے  جسٹس قاضی فائز عیسی کیس میں نظرثانی درخواستوں پر سماعت 8 مارچ 2021 تک ملتوی کر دی ۔ عدالت عظمی نے کیس کی کارروائی براہ راست نشرکرنے سے متعلق جسٹس فائزعیسیٰ کی درخواست پر وفاقی حکومت کو نوٹس جاری کر دیا ہے۔ بدھ کو  جسٹس عمرعطا بندیال کی سربراہی میں 10رکنی لارجر بینچ نے کیس پر سماعت کی۔ دوران سماعت جسٹس قاضی فائز عیسی نے دلائل شروع کرتے ہوئے کہا کہ  عدالت نے آبزرویشن دی کہ لائیو کوریج انتظامی اور پالیسی معاملہ ہے، عدالت کی آبزرویشن پر دلائل دوں گا،سپریم کورٹ آئین کے تحت


بنایا گیا ادارہ ہے، اس ادارے کو اختیارات آئین فراہم کرتا ہے، آئین سے بالاتر سپریم کورٹ کے پاس کوئی اختیار نہیں، سپریم کورٹ کے 17 ججز اگر قانون بنائیں تو 2 ممبرز بینچ اس کو ختم کرسکتا ہے، جس پر جسٹس منیب اختر نے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کو مخاطب کرتے ہوئے  ریمارکس دیے کہ عدالت یہاں آپ کو سننے کے لیے ہی بیٹھی ہے، بحث نہ کریں ،کارروائی براہ راست دکھانے پر دلائل دیں، عدالت کے اختیارات کی بات چھوڑدیں،اگر لائیو کوریج کا معاملہ فل کورٹ میں جاتا ہے تو کیا فل کورٹ میں بیٹھیں گے؟ دوران سماعت جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے ریمارکس دیے کہ فل کورٹ کا مجھے پہلے ایجنڈا موصول ہوگا تو پھر فیصلہ کروں گا، چیف جسٹس سپریم جوڈیشنل کونسل کے چیئرمین ہیں، چیف جسٹس فل کورٹ میٹنگ کی صدارت بھی کرتے ہیں ان کے مفادات کا ٹکراو نہیں ہونا چاہیے، کہا جاتا ہے کہ انصاف صرف ہونا نہیں چاہیے، ہوتا ہوا نظر بھی آنا چاہیے،انصاف ہوتا ہوا ٹی وی کے ذریعے دکھایا جاسکتا ہے،دوران سماعت جسٹس منیب اختر نے جسٹس قاضیفائز عیسیٰ سے استفسار کیا کہ  کہ آپ کے کہنے کا مطلب یہ ہے کہ  ٹی وی کی ایجاد سے اب تک جو بھی انصاف ہوا وہ دکھائی نہیں دیا؟جسٹس منصور علی شا ہ نے استفسار کیا کہ آپ کی دلیل یہ ہے کہ سائنس وٹیکنالوجی کی جدت سے نظام عدل میں مزید شفافیت آئے گی،جس پر جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے موقف اپنایا کہ پاکستان اورسپریم کورٹ کی تاریخ کا سب سے متنازع فیصلہ ذولفقار علی بھٹو کیس کا تھا،ذوالفقارعلی بھٹو کیس میں اختلافی نوٹ لکھنے والے جج نے کتاب میں کہاکہ اکثریتی فیصلہ فوجی حکومت کے دبائو میں تھا،دوران سماعت جسٹس منیب اختر نے ریمارکس دیے کہ ذوالفقار علی بھٹو کیس کھلی عدالت میں سنا گیا تھا، کھلی عدالت کا مطلب تمامپبلک کا موجود ہونا نہیں، جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے موقف اپنایا کہ میرے دلائل عدالتی کارروائی براہ راست نشر ہونے کے فوائد کے متعلق ہیں، جو لوگ عدالت نہیں آسکتے ان کیلئے لائیو نشریات موثر ثابت ہوگی، چند وکلا کی وجہ سے لوگوں میں وکلا گردی کا لفظ مشہور ہوگیا،  میں عدالت کے سامنے ایک پٹیشنر جج کے طور پر موجودہوں، عدالتی کارروائی کی براہ راست نشریات کا حق مجھے نہیں پاکستان کی عوام کو دیا جائے گا۔اس دوران جسٹس منظور احمد ملک نے ریمارکس دیے کہ آپ کو یہ سمجھنا ہوگا کہ آپ صرف ایک وکیل نہیں ہیں، جو بات آپ یہاں کررہے ہیں وہ ایک جج کی آبزرویشن بن جائے گی، اگر آپ کی کہی باتیں فیصلے میں تحریرہوگئیں تو کل کو وکیلآپکے سامنے یہ دلیل کے طور پر پیش کریں گے،آپ نے یہاں بھی بیٹھنا ہے جہاں اس وقت ہم بیٹھے ہیں،کل آپ پر یہ اعتراض آسکتا ہے کہ آپ فلاں کیس پر رائے دے چکے ہیں اس لیے مقدمہ نا سنیں، دوران سماعت جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے دلائل دیتے ہوئے جسٹس منظور احمد ملک کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ  آپ میرے بڑے ہیں، میںفوجداری مقدمات میں آپ کو اپنا استاد مانتا ہوں،اس وقت دنیا کے 180 ممالک میں آزادی صحافت کے معاملے پر پاکستان کا نمبر 147 ہے، آزادی صحافت سے متعلق پاکستان کے اعدادوشمار دیکھ کر میرا سرشرم سے جھک گیا،بانی پاکستان قائداعظم محمد علی جناح اور لیاقت علی خان نے آزادی صحافت کے چارٹر پر دستخط کیےتھے،براہ راست عدالتی کارروائی سے ڈسپلن میں بہتری آئے گی، ملک میں35 سال مارشل لاء رہا، ڈکٹیٹر سب سے پہلے ٹی وی کا پلگ نکالتے ہیں، ایک فوجی آمر ٹی وی پر آکر کہتا ہے ‘‘میرے عزیز ہم وطنو’’، میرے عزیز ہم وطنو والے سلسلے کو اب ختم ہونا چاہیے، میں اپنے ملک کا مستقبل ایسا نہیں دیکھنا چاہتا، میں کل کی نشرہونےوالی خبروں سے اتفاق نہیں کرتا،میڈیا نے وہ رپورٹ کیا جو ان کا دل کیا، میری موجودہ درخواست نظرثانی درخواستوں سے زیادہ اہم ہے،پبلک میں میری مٹی پلید ہورہی ہے، میرے لیے اہم کیس کا براہ راست نشر ہونا ہے۔دوران سماعت جسٹس عمر عطا بندیال نے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کو مخاطب کرتے ہوئے ریمارکس دیے کہ آپکے دلائل  سیاسی ہورہے ہیں،دوران سماعت ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے عدالتی استفسار پر بتایا کہ  وفاق عدالتی کاروائی براہ راست دکھانے کی مخالفت کرتا ہے، نظرثانی کیس میں وزیر قانون خود پیش ہوں گے،دوران سماعت جسٹس عمر عطا بندیال نے ریمارکس دیے کہ پچھلی بار بھی کیس میں وکیل بننے کیلئے وزیرقانون نے استعفی دیا تھا،جانتے ہیں کہ ٹیکنالوجی سے انقلاب آئے ہیں،کیس کی کارروائی براہ راست نشر کرنے کے معاملے پرمشاورتضروری ہے، اصل کیس نظرثانی درخواستوں کا ہے، دنیا کہتی رہتی ہے، دیکھنے والی ذات دیکھ رہی ہے آپ کام جاری رکھیں، عدالت عظمی نے کیس کی  کارروائی براہ راست نشرکرنے سے متعلق جسٹس قاضی فائز عیسی کی درخواست  اور جسٹس قاضی فائز عیسیٰ صدارتی ریفرنس کی  نظرثانی درخواست پر وفاقی حکومت کو نوٹس جاری کر دیا ہے۔جسٹس قاضی فائزعیسیٰ نے ذاتی حیثیت سے عدالتی کارروائی کی براہ راست نشریات پر دلائل دیئے۔کیس کی سماعت 8 مارچ دن ساڑھے گیارہ بجے تک ملتوی کر دی گئی۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

اللہ ہی رحم کرے

مغل بادشاہ شاہ جہاں کے پاس ایک ترک غلام تھا‘ وہ بادشاہ کو پانی پلانے پر تعینات تھا‘ سارا دن پیالہ اور صراحی اٹھا کر تخت کے پاس کھڑا رہتا تھا‘ بادشاہ اس کی طرف دیکھتا تھا تو وہ فوراً پیالہ بھر کرپیش کر دیتا تھا‘ وہ برسوں سے یہ ڈیوٹی سرانجام دے رہا تھا اور بڑی حد تک بادشاہ ....مزید پڑھئے‎

مغل بادشاہ شاہ جہاں کے پاس ایک ترک غلام تھا‘ وہ بادشاہ کو پانی پلانے پر تعینات تھا‘ سارا دن پیالہ اور صراحی اٹھا کر تخت کے پاس کھڑا رہتا تھا‘ بادشاہ اس کی طرف دیکھتا تھا تو وہ فوراً پیالہ بھر کرپیش کر دیتا تھا‘ وہ برسوں سے یہ ڈیوٹی سرانجام دے رہا تھا اور بڑی حد تک بادشاہ ....مزید پڑھئے‎