بلوچستان حکومت کا اپوزیشن جلسے سے قبل بڑا فیصلہ، دفعہ 144 نافذ، جلسہ منسوخ کرنے کی ہدایت

  ہفتہ‬‮ 24 اکتوبر‬‮ 2020  |  20:42

کوئٹہ(مانیٹرنگ+ آن لائن) بلوچستان حکومت نے اپوزیشن کے جلسے سے قبل بڑا فیصلہ کیا ہے، چیف سیکرٹری بلوچستان نے دفعہ 144 نافذ کرنے کی ہدایات جاری کر دی ہیں، چیف سیکرٹری بلوچستان کا کہنا ہے کہ اپوزیشن جماعتوں کو دہشت گردی تھریٹ کو سنجیدگی سے لینا چاہیے، ایک اعلیٰ سطحی اجلاس چیف سیکرٹری بلوچستان کی زیرصدارت ہوا، اس اجلاس میں اپوزیشن کےجلسے سے متعلق انتظامات اور سکیورٹی کی صورتحال کا جائزہ لیا گیا۔ اجلاس میں دفعہ 144 نافذ کرنے کی ہدایات دیتے ہوئے چیف سیکرٹری نے کہا کہ کوئٹہ میں دہشتگردی کے امکانات ہیں۔ چیف سیکرٹری کا کہنا ہے کہ


اپوزیشن جماعتیں دہشتگردی تھریٹ کو سنجیدگی سے لیں، جلسے کی وجہ سے کورونا وائرس پھیلنے کا بھی خدشہ ہے۔ اجلاس میں کہا گیا کہ جلسے میں آنے والے قائدین اور شرکاء کو کورونا ایس او پیز پر سختی سے عمل درآمد کریں۔ واضح رہے کہ پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کا تیسرا جلسہ اتوار کو کوئٹہ میں ہوگا۔ پی ڈی ایم کے کوئٹہ جلسے کے لیے ایوب اسٹیڈیم کے فٹ بال گراوَنڈ میں تیاریاں زور و شور سے جاری ہیں، جلسے کی سکیورٹی کے لیے پولیس اور ایف سی سمیت 4 ہزار سے زائد اہلکار تعینات کیے گئے ہیں۔کوئٹہ بھر میں مختلف سیاسی جماعتوں کے جھنڈے اور بینرز آویزاں کر دیے گئے ہیں جبکہ پی ڈی ایم سربراہ مولانا فضل الرحمان گزشتہ شب قلات پہنچ گئے اس کے علاوہ محمود خان اچکزئی، عبدالمالک بلوچ اور سردار اختر مینگل کوئٹہ پہنچ چکے ہیں۔مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز اپنے 10 رکنی وفد کے ہمراہ کوئٹہ جلسہ میں شرکت کریں گی جبکہ پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری گلگت سے خصوصی پرواز کے ذریعے جلسہ گاہ پہنچنے کے امکانات ہیں تاہم جلسہ میں شرکت نہ کرنے کی صورت میں ویڈیو لنک کے ذریعے شرکاء سے خطاب کریں گے،سابق وزیر اعظم نواز شریف بھی لندن سے ویڈیو لنک کے ذریعے جلسے کے شرکا سے خطاب کریں گے۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

بڑے چودھری صاحب

انیس سو ساٹھ کی دہائی میں سیالکوٹ میں ایک نوجوان وکیل تھا‘ امریکا سے پڑھ کر آیا تھا‘ ذہنی اور جسمانی لحاظ سے مضبوط تھا‘ آواز میں گھن گرج بھی تھی اور حس مزاح بھی آسمان کو چھوتی تھی‘ یہ بہت جلد کچہری میں چھا گیا‘ وکیلوں کے ساتھ ساتھ جج بھی اس کے گرویدا ہو گئے‘ اس ....مزید پڑھئے‎

انیس سو ساٹھ کی دہائی میں سیالکوٹ میں ایک نوجوان وکیل تھا‘ امریکا سے پڑھ کر آیا تھا‘ ذہنی اور جسمانی لحاظ سے مضبوط تھا‘ آواز میں گھن گرج بھی تھی اور حس مزاح بھی آسمان کو چھوتی تھی‘ یہ بہت جلد کچہری میں چھا گیا‘ وکیلوں کے ساتھ ساتھ جج بھی اس کے گرویدا ہو گئے‘ اس ....مزید پڑھئے‎