’’ اللّٰہ تعالیٰ کے عذاب کورونا نے یہ ثابت کر دیا کہ کسی ہتھیار کے بغیر بھی دنیا ختم کی جا سکتی‘‘ ایٹم بم اور میزائل مہلک وبا کے آگے بے بس ہو گئے ، کسی سپر پاور کو ایٹم بم یا میزائل کرونا وائرس سے نہیں بچا سکتا ہے ، مسلمانوں کو کرونا وائرس سے بچائو کا بہترین حل بتا دیا گیا

  اتوار‬‮ 22 مارچ‬‮ 2020  |  16:05

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)مسلم لیگ ق کے صدر چوہدری شجاعت حسین کا کہنا ہے کہ کورونا وائرس اللّٰہ تعالیٰ کی طرف سے ایک وارننگ ہے، انسان کے بنائے ہوئے ایٹم بم اور میزائل کورونا وائرس کے سامنے بے بس ہو چکے ہیں۔روزنامہ جنگ کی رپورٹ کے مطابق مسلم لیگ ق کے صدر چوہدری شجاعت حسین نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ سب سے ضروری احتیاط اللّٰہ تعالیٰ سے معافی ہے،کورونا وائرس اللّٰہ تعالیٰ کی طرف سے ایک چھوٹی سی وارننگ ہے، اللّٰہ تعالیٰ کے اس عذاب کے سامنے انسان کے بنائے ہوئے ایٹم بم اور مزائل جن سے تمام


دنیا ڈرتی ہے سب اس کے سامنے بے بس ہیں۔ اللّٰہ تعالیٰ کے عذاب کورونا نے یہ ثابت کر دیا کہ کسی ہتھیار کے بغیر بھی دنیا ختم کی جا سکتی ہے۔چوہدری شجاعت حسین نے کہا کہ اور چیزوں کے ساتھ ساتھ سب سے ضروری ہے کے ہم اللّٰہ تعالیٰ سے معافی مانگیں اور تمام مکاتب فکر کو اس معاملے میں یکجا ہونا چاہیے، اس وقت لوگوں کو شعور کی ضرورت ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ جنگ گروپ ایک بہت بڑا ادارہ ہے جو پاکستان میں اور باہر بھی لوگوں کی بھلائی کے لیے کام کر سکتا ہے اس لیے میر شکیل الرحمٰن کو فوری طور پرضمانت پر رہا کر دینا چاہیے، اس مشن میں انہیں ساتھ ملانا چاہیے کیوں کے ان کے والد قائداعظم کے دور سے لے کر آج تک پاکستان کے خیر خواہ رہے ہیں۔چوہدری شجاعت حسین کا کہنا تھا کہ صحافت میں ان کا بہت بڑا نام تھا اس لیے ابھی ہمیں پلاٹوں شلاٹوں کے چکر میں نہیں پڑنا چاہیے اور سب کو ساتھ لے کر چلنا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ پوری دنیا خاص طور پر مسلمانوں سے اپیل کرنی چاہیے کہ وہ راہ راست پر آجائیں اور بھول جائیں کہ کسی سپر پاور کا کوئی ایٹم بم یا مزائل انہیں کورونا سے بچا سکتا ہے۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

ڈیڈ اینڈ

ارنسٹ ہیمنگ وے نوبل انعام یافتہ ادیب تھا اور یہ دہائیوں سے انسانی فکر کو متاثر کررہا ہے‘ ہم میں سے کم لوگ جانتے ہیں ہیمنگ وے نے اپنا کیریئر صحافی کی حیثیت سے شروع کیا تھا‘ یہ وار رپورٹر تھا‘ محاذ جنگ سے ڈائری لکھتا تھا اور لاکھوں لوگ اس کی تحریروں کا انتظار کرتے تھے‘ اس ....مزید پڑھئے‎

ارنسٹ ہیمنگ وے نوبل انعام یافتہ ادیب تھا اور یہ دہائیوں سے انسانی فکر کو متاثر کررہا ہے‘ ہم میں سے کم لوگ جانتے ہیں ہیمنگ وے نے اپنا کیریئر صحافی کی حیثیت سے شروع کیا تھا‘ یہ وار رپورٹر تھا‘ محاذ جنگ سے ڈائری لکھتا تھا اور لاکھوں لوگ اس کی تحریروں کا انتظار کرتے تھے‘ اس ....مزید پڑھئے‎