چیئرمین سینٹ کے الیکشن کے بعد نواز شریف اور فضل الرحمن کا آمنا سامنا ووٹ نہیں دینا تھا تو بتا دیتے۔۔آپ کا گلہ بجا مگر اپنے بھی گھر میں جھانک لیں تو بہتر ہو گا،فضل الرحمن نے ن لیگ کے قائد کوشکوہ کرنے پر بڑا سرپرائز دیدیا

14  مارچ‬‮  2018

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک)نواز شریف اور فضل الرحمن کے درمیان ملاقات، نواز شریف نے چیئرمین و ڈپٹی چیئرمین سینٹ کے انتخاب میں خلاف توقع ووٹ پڑنے کا معاملہ اٹھا دیا، وعدے کے باوجود ووٹ نہ پڑنے سے سوالات نے جنم لے لیا ، کسی پر دباؤ تھا تو پہلے بتا دینا چاہئے تھا ، انتخاب میں شکست سے کارکن مایوس ہوئے، نواز شریف کا فضل الرحمن سے گلہ ،

فضل الرحمن نے نواز شریف کو گھر میں بھی جھانکنے کا مشورہ دیدیا۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق چیئرمین و ڈپٹی چیئرمین سینٹ کے انتخاب کے بعد حکمران جماعت ن لیگ کے قائد نواز شریف اور ان کی اتحادی جماعت جمعیت علمائے اسلام ف کے سربراہ مولانا فضل الرحمن کے درمیان ملاقات ہوئی ہے۔ ملاقات میں نواز شریف نے مولانا فضل الرحمن سے چیئرمین و ڈپٹی چیئرمین سینٹ کے الیکشن میں خلاف توقع ووٹ ملنے کا معاملہ اٹھاتے ہوئے کہا ہے کہ و عدے کے باوجود ووٹ نہ پڑنے سے سوالات نے جنم لے لیا ، کسی پر دباؤ تھا تو پہلے بتا دینا چاہئے تھا ، انتخاب میں شکست سے کارکن مایوس ہوئے۔ نواز شریف نے حقائق جاننے کیلئے مولانا فضل الرحمن سے درخواست بھی کی۔ اس موقع پر جے یو آئی کے سربراہ نے ن لیگ کے قائد کی تشویش پر ان سے اتفاق کیا اور کہا کہ میں اپنے پارٹی کے لوگوں سے بات کروں گا ۔ مولانا فضل الرحمن نے نواز شریف کو اپنے گھر میں بھی جھانکنے کا مشورہ دیتے ہوئے کہا کہ آپ بھی اپنے پارٹی رہنماؤں سے بات کریں۔ واضح رہے کہ نواز شریف کو آج چیئرمین وڈپٹی چیئرمین سینٹ کے انتخاب میں شکست کی وجوہات پر مبنی رپورٹ بھی پیش کی گئی ہے جس میں ووٹ نہ دینے والے 7سینیٹرز کے نام بھی شامل ہیں۔واضح رہے کہ چیئرمین سینٹ کے الیکشن میں حکمران اتحاد کو  اپنے ہی سینیٹرز کی غداری کے باعث شکست کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

موضوعات:



کالم



فواد چودھری کا قصور


فواد چودھری ہماری سیاست کے ایک طلسماتی کردار…

ہم بھی کیا لوگ ہیں؟

حافظ صاحب میرے بزرگ دوست ہیں‘ میں انہیں 1995ء سے…

مرحوم نذیر ناجی(آخری حصہ)

ہمارے سیاست دان کا سب سے بڑا المیہ ہے یہ اہلیت…

مرحوم نذیر ناجی

نذیر ناجی صاحب کے ساتھ میرا چار ملاقاتوں اور…

گوہر اعجاز اور محسن نقوی

میں یہاں گوہر اعجاز اور محسن نقوی کی کیس سٹڈیز…

نواز شریف کے لیے اب کیا آپشن ہے (آخری حصہ)

میاں نواز شریف کانگریس کی مثال لیں‘ یہ دنیا کی…

نواز شریف کے لیے اب کیا آپشن ہے

بودھ مت کے قدیم لٹریچر کے مطابق مہاتما بودھ نے…

جنرل باجوہ سے مولانا کی ملاقاتیں

میری پچھلے سال جنرل قمر جاوید باجوہ سے متعدد…

گنڈا پور جیسی توپ

ہم تھوڑی دیر کے لیے جنوری 2022ء میں واپس چلے جاتے…

اب ہار مان لیں

خواجہ سعد رفیق دو نسلوں سے سیاست دان ہیں‘ ان…

خودکش حملہ آور

وہ شہری یونیورسٹی تھی اور ایم اے ماس کمیونی کیشن…