قائد اعظم یونیورسٹی میں پھر انتشار پھیلانے کی کوشش،طلبہ کے ایک دھڑے نے اپنے موبائل بند کر کے کیا حرکتیں کرنا شروع کردیں

  پیر‬‮ 30 اکتوبر‬‮ 2017  |  10:30

اسلام آباد (این این آئی) وفاقی دارالحکومت اسلام آبادکی قائد اعظم یونیورسٹی میں طلبہ کے ایک دھڑے نے کلا س روم کو لگے تالوں میں ایلفی ڈال دی جس سے تدریسی کلاسز نہ ہوسکیں جبکہ بسوں کے ٹائروں کی بھی ہوا نکال دی۔قائد اعظم یونیورسٹی میں طلبہ کا مخصوص دھڑا گزشتہ ایک ہفتے سے احتجاج کررہا ہے تاہم گزشتہ ہفتے پولیس نے حالات پر قابو پاکر تدریسی عمل بحال کرادیا تھا۔یونیورسٹی میں پیر کو طلبہ نے سامنے آکر احتجاج تو نہ کیا لیکن طلبہ کے اس مخصوص دھڑے نے انتہائی چالاکی سے یونیورسٹی کی بسوں کے ٹائروں سے ہوا نکال دی


اور کلاس روم کو لگے تالوں میں ایلفی ڈال دی جس سے یونیورسٹی کی انتظامیہ لاعلم رہی۔انتظامیہ کا کہنا ہے کہ طلبہ نے کلاسز میں لگے تالوں میں ایلفی ڈال دی ہے اور بسوں کی ہوا بھی نکال دی ہے جب کہ طلبہ کا یہ دھڑا روپوش ہے اور ان کے موبائل بھی بند ہیں۔پولیس اور یونیورسٹی انتظامیہ کے مطابق (آج)منگل کو ہر صورت میں تعلیمی سرگرمیاں شروع ہوجائیں گی جبکہ پولیس نے بھاری نفری بھی یونیورسٹی میں تعینات کردی ۔واضح رہے کہ رواں ماہ کے اوائل میں قائداعظم یونیورسٹی میں طلبا نے بہتر سہولیات، ہاسٹل اور فیسوں میں اضافہ واپس لینے کیلئے احتجاج شروع کیا تھا جس پر یونیورسٹی انتظامیہ اور طلبہ کے درمیان مذاکرات بھی ہوئے جو ناکام ہوگئے۔یونیورسٹی انتظامیہ نے اس معاملے پر تین رکنی کمیٹی بھی بنائی تھی لیکن وہ بھی معاملہ حل نہ کرسکی جس کے بعد طلبا کے احتجاج کے باعث یونیورسٹی تین ہفتے تک بند رہی۔


موضوعات: