پاکستانی فنکاروں پر پابندی کی درخواست بھارتی سپریم کورٹ نے مسترد کردی

28  ‬‮نومبر‬‮  2023

نئی دہلی (این این آئی)بھارتی سپریم کورٹ نے پاکستانی فنکاروں پر ہندوستان میں پابندی عائد کرنے کا مطالبہ کرنیوالی درخواست کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ ایک لغو اور بے بنیاد درخواست ہے۔تفصیلات کے مطابق بھارتی سپریم کورٹ میں جسٹس سنیل بی شکرے اور جسٹس فردوش پی پونی والا پر مشتمل دو رکنی بینچ نے فیض انور قریشی کی بھارت میں پاکستانی فنکاروں پر پابندی عائد کرنے بارے دائر درخواست پر سماعت کی جس میں ممبئی ہائی کورٹ کے فیصلے کو چیلنج کیا گیا تھا۔

سماعت کے دوران وکیل نے کہا کہ ہائی کورٹ نے درخواست گزار کے حب الوطنی کے تصور پر تنقید کرتے ہوئے فیصلے کے پیراگراف 10میں کچھ تبصرے کئے ہیں۔اس پر بنچ نے کہا کہ معاف کریں، ایسا نہ کریں، یہ آپ کیلئے ایک اچھا سبق ہے، اتنا تنگ نظر نہ بنیں۔عدالت نے کہا کہ کسی کو یہ سمجھنا چاہئے کہ محب وطن ہونے کے لئے کسی کو بیرون ملک رہنے والے لوگوں، خاص طور پر پڑوسی ملک کے لوگوں سے دشمنی کرنے کی ضرورت نہیں ہے، ایک سچا محب وطن وہ شخص ہے جو بے لوث ہو، جو اپنے ملک کیلئے وقف ہو، جو وہ اس وقت تک نہیں کر سکتا جب تک کہ وہ دل سے اچھا انسان نہ ہو۔

عدالت نے ریمارکس میں کہا کہ ایک شخص جس کا دل اچھا ہے وہ اپنے ملک میں ایسی کسی بھی سرگرمی کا خیرمقدم کرے گا جو ملک کے اندر اور سرحد کے پار رقص، آرٹ، موسیقی، کھیل، ثقافت، امن، ہم آہنگی اور سکون وغیرہ کو فروغ دیتی ہو۔عدالت نے کہا کہ یہ ایسی سرگرمیاں ہیں جو قومیتوں، ثقافتوں اور قوموں سے بالاتر ہیں اور حقیقی معنوں میں ملک اور قوموں کے درمیان امن، اتحاد اور ہم آہنگی لاتی ہیں۔عدالت نے کہا کہ یہ درخواست ریلیف کیساتھ جو کچھ چاہتی ہے، وہ ثقافتی ہم آہنگی، اتحاد اور امن کو فروغ دینے کی طرف ایک پیچھے ہٹنے والا قدم ہے، اس درخواست میں کوئی قابلیت نہیں ہے، ایک ایک لغو اور اور بے بنیاد درخواست ہے ۔



کالم



مرحوم نذیر ناجی(آخری حصہ)


ہمارے سیاست دان کا سب سے بڑا المیہ ہے یہ اہلیت…

مرحوم نذیر ناجی

نذیر ناجی صاحب کے ساتھ میرا چار ملاقاتوں اور…

گوہر اعجاز اور محسن نقوی

میں یہاں گوہر اعجاز اور محسن نقوی کی کیس سٹڈیز…

نواز شریف کے لیے اب کیا آپشن ہے (آخری حصہ)

میاں نواز شریف کانگریس کی مثال لیں‘ یہ دنیا کی…

نواز شریف کے لیے اب کیا آپشن ہے

بودھ مت کے قدیم لٹریچر کے مطابق مہاتما بودھ نے…

جنرل باجوہ سے مولانا کی ملاقاتیں

میری پچھلے سال جنرل قمر جاوید باجوہ سے متعدد…

گنڈا پور جیسی توپ

ہم تھوڑی دیر کے لیے جنوری 2022ء میں واپس چلے جاتے…

اب ہار مان لیں

خواجہ سعد رفیق دو نسلوں سے سیاست دان ہیں‘ ان…

خودکش حملہ آور

وہ شہری یونیورسٹی تھی اور ایم اے ماس کمیونی کیشن…

برداشت

بات بہت معمولی تھی‘ میں نے انہیں پانچ بجے کا…

کیا ضرورت تھی

میں اتفاق کرتا ہوں عدت میں نکاح کا کیس واقعی نہیں…