ہن لاڈ شاڈ ختم جیلوں کی صفائی شروع ، بہت بڑی گرفتاری ہو سکتی ہے ، نجم سیٹھی

  جمعہ‬‮ 12 اگست‬‮ 2022  |  22:06

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک )سینئر صحافی و تجزیہ کار نجم سیٹھی نے نے بڑی گرفتاریوں کی پیش گوئی کر دی ۔ نجی ٹی وی کے پروگرام میں نجم سیٹھی نے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ میرے خیال میں اب عمران خان کو بھی جلد ہی پتہ چل جائے گا ،پھر یہ بات چیت کیلئے بھی تیار ہو جائیں گے ،

اس وقت پی ٹی آئی کے پنجاب میں ایم پی ایز میں بڑی بے چینی پھیلی ہوئی ہے کہ ہمارے ساتھ کیا ہو گا کیونکہ ہر کوئی ڈر رہا ہے اگر پارٹی (بین ) ہو جاتی ہے تو پھر وہ چار سال کیلئے سب گئے ، اگر وہ سپریم کورٹ کا فیصلہ آنے سے پہلےاستعفے دے دیں تو پھر اس صورت میں ان کی ڈس کوالیفائی نہیں ہوں گے بلکہ وہ اگلے الیکشن میں باقاعدہ حصہ لے سکتے ہیں ۔ سینئر صحافی کا کہنا تھا کہ عمران خان بہت اڑ رہے تھے اب انہیں بھی گرائونڈ میں لایا جارہا ہے، اب انہیں بھی سوچنا ہے کہ کیسی سیاست کرنی ہے غالباً یہ کہ عمران خان کے بڑے قریبی ساتھی جیلوں میں جائیں گے اس سے بھی بڑا واضح پیغام جائے گا کہ پرانے زمانے ختم ہو گئے کہ ستون ملا ہوا تھا آپ لاڈلے تھے بہت سے سیریس کیسز بن رہے ہیں۔ نجم سیٹھی کا کہنا تھا کہ جو میڈیسن عمران خان نے دی تھی اب ان کو میڈیسن دی جائے گی تو پھر یہ بات چیت کیلئے تیا رہوں گے ، پھر کمپرو مائز ہو نگے ،میاں صاحب تو یہ سبق سیکھ لیا تھا لیکن خان صاحب نئے نئے آئے ہیں انہوں نے نہیں سیکھا اب سیکھنے جارہے ہیں ۔ سینئر صحافی نجم سیٹھی کا کہنا تھا کہ کرنٹ آرمی چیف بھی چاہتے ہیں اپوزیشن اور حکومت کے درمیان تعلقات صلح صفائی کیساتھ بہتر ہو جائیں ، لڑائی جھگڑے ختم ہو جائیں ، اکانومی اپنے پائوں پر کھڑی ہو جائے ، پارلیمنٹ کی بالادستی واپس بحال ہو جائے ، سیاستدان صحیح طریقے سے کام کریں تاکہ فوج پیچھے ہٹ جائے ۔



زیرو پوائنٹ

ہم کوئلے سے پٹرول کیوں نہیں بناتے؟

پروفیسر اطہر محبوب اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور کے وائس چانسلر ہیں‘ یہ چند دن قبل اسلام آباد آئے‘ مجھے عزت بخشی اور میرے گھر بھی تشریف لائے‘ یہ میری ان سے دوسری ملاقات تھی‘ پروفیسر صاحب پڑھے لکھے اور انتہائی سلجھے ہوئے خاندانی انسان ہیں‘ مجھے مدت بعد سلجھی اور علمی گفتگو سننے کا موقع ملا اور میں ابھی تک اس ....مزید پڑھئے‎

پروفیسر اطہر محبوب اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور کے وائس چانسلر ہیں‘ یہ چند دن قبل اسلام آباد آئے‘ مجھے عزت بخشی اور میرے گھر بھی تشریف لائے‘ یہ میری ان سے دوسری ملاقات تھی‘ پروفیسر صاحب پڑھے لکھے اور انتہائی سلجھے ہوئے خاندانی انسان ہیں‘ مجھے مدت بعد سلجھی اور علمی گفتگو سننے کا موقع ملا اور میں ابھی تک اس ....مزید پڑھئے‎