سندھ ہائی کورٹ کا سماعت کے دوران متبادل فائل تیار نہ کرکے دینے پر کے ڈی اے حکام پر سخت برہمی کا اظہار

  پیر‬‮ 26 ستمبر‬‮ 2022  |  17:45

کراچی(این این آئی)سندھ ہائی کورٹ نے دورانِ سماعت گھر کی اصل فائل گم ہونے کے معاملے پرکے ڈے اے افسرپربرہمی کا اظہار کیا ہے۔پیرکو سندھ ہائی کورٹ میں کلفٹن کے رہائشی کی گھر کی اصل فائل کی گمشدگی سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی۔سماعت کے دوران متبادل فائل تیار نہ کرکے

دینے پرعدالت نے کے ڈی اے حکام پر سخت برہمی کا اظہار کیا۔جسٹس حسن اظہر رضوی نے کہا کہ آپ لوگ بادشاہ بنے ہوئے ہیں لوگ دھکے کھا رہے ہیں، آپ لوگ شرافت کی زبان نہیں سمجھتے۔عدالت نے ریمارکس دیئے کہ پورے کراچی میں تباہی مچائی ہوئی ہے۔جسٹس حسن اظہررضوی نے ڈائریکٹر لینڈ کے ڈی اے کو آئندہ سماعت پر ذاتی حیثیت میں طلب کرلیا اور کے ڈی اے ڈائریکٹرزکے اجلاسوں کے مینٹس بھی طلب کرلیے۔عدالت نے اظہارِ برہمی کرتے ہوئے کہا کہ کام نہیں کرنا، سامنے آئیں آپ؟کے ڈے افسر نے جواب دیا کہ پروسس چل رہا ہے جس پر جسٹس سید حسن اظہررضوی نے پوچھا کہ کیا پروسس چل رہا ہے، کیا طریقہ ہوتا ہے؟عدالت نے ریمارکس دیئے کہ ایک سال سے عدالت نے فیصلہ دے رکھا ہے۔ پورے کراچی میں تباہی مچائی ہوئی ہے۔ ماسٹر پلان کو چھوڑیں، کیا بات کریں ماسٹر پلان کی؟جسٹس سید حسن اظہر رضوی نے کہا کہ آپ کے ڈائریکٹرزکی میٹنگ آخری بار کب ہوئی؟ کتنے اجلاس کیے آپ کے ڈائریکٹرز نے؟ درخواست 29 اکتوبر 2021 سے زیرالتوا ہے۔وکیل درخواست گزار نے موقف دیا کہ فائل نیب سے گم ہوئی، متبادل فائل چاہیے، چیئرمین نیب کو فائل گم کرنے والے افسران کے خلاف کارروائی کی ہدایت کی جائے ۔



زیرو پوائنٹ

عاشق مست جلالی

میری اظہار الحق صاحب سے پہلی ملاقات 1994ء میں ہوئی‘ یہ ملٹری اکائونٹس میں اعلیٰ پوزیشن پر تعینات تھے اور میں ڈیلی پاکستان میں میگزین ایڈیٹر تھا‘ میں نے اس زمانے میں مختلف ادیبوں اور شاعروں کے بارے میں لکھنا شروع کیا تھا‘ اظہار صاحب نے تازہ تازہ کالم نگاری شروع کی تھی‘ان کی تحریر میں روانی‘ ادبی چاشنی اور ....مزید پڑھئے‎

میری اظہار الحق صاحب سے پہلی ملاقات 1994ء میں ہوئی‘ یہ ملٹری اکائونٹس میں اعلیٰ پوزیشن پر تعینات تھے اور میں ڈیلی پاکستان میں میگزین ایڈیٹر تھا‘ میں نے اس زمانے میں مختلف ادیبوں اور شاعروں کے بارے میں لکھنا شروع کیا تھا‘ اظہار صاحب نے تازہ تازہ کالم نگاری شروع کی تھی‘ان کی تحریر میں روانی‘ ادبی چاشنی اور ....مزید پڑھئے‎