ہفتہ‬‮ ، 13 جولائی‬‮ 2024 

سی پیک بکری گوادر میں بکر ی فارمنگ کے نئے آغاز کی علامت

datetime 24  مارچ‬‮  2023
ہمارا واٹس ایپ چینل جوائن کریں

اسلام آباد (این این آئی)چائنا اوورسیز پورٹس ہولڈنگ کمپنی ( سی او پی ایچ سی ) کیگوادر پورٹ پر فری زون میں تیار کردہ گوٹ فارم میں سی پیک بکری کی پیدائشگوادر میں بکر ی فارمنگ کے نئے آغاز کی علامت، سی پیک بکری” فارم میں رکھی گئی بکریوں کی 25 نئی نسلوں میں سے ایک ہے۔ گوادر پرو کے مطابق گوادر میں

چائنا اوورسیز پورٹس ہولڈنگ کمپنی ( سی او پی ایچ سی ) کیگوادر پورٹ پر فری زون میں تیار کردہ اور چلائے جانے والے ایک اور واحد ’’گوٹ فارم‘‘میں سی پیک بکری نامی ایک نوزائیدہ بکری اب چلتی، دوڑتی اور کھیل رہی ہے ۔ اس کی پیدائش اور زندگی گوادر میں منظم لائیو سٹاک فارمنگ کے نئے آغاز کی علامت ہے۔گوادر پرو کے مطابق اس سے پہلے، بکریوں اور جانوروں کے فارمز شروع کرنے کا سوال ہی نہیں تھا کیونکہ گوادر صرف ماہی گیری کا شہر تھا اور اس نے نہ تو جانور پالنے کے کاروبار کے لیے زمین کو آ باد کیا اور نہ ہی اپنی پوری تاریخ میں بکریوں کے فارمز کو ترقی دینے کا احساس پیدا کیا۔ گوادر پرو کے ساتھ ایک انٹرویو میں سی او پی ایچ سی کے ایک اعلیٰ عہدیدار محمد زبیر نے کہا کہ سی پیک بکری اب فارم میں دستیاب غذائیت سے بھرپور خوراک، حفظان صحت کے ماحول اور طبی دیکھ بھال کے ساتھ اپنی زندگی سے لطف اندوز ہو رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سی پیک بکری” فارم میں رکھی گئی بکریوں کی 25 نئی نسلوں میں سے ایک ہے جو 12 کلومیٹر طویل کوہ بتل کے قریب واقع ہے۔ انہوں نے انکشاف کیا کہ اس وقت ہمارے پاس مختلف نسلوں کی 120 سے زیادہ بکریاں ہیں جن میں مکھی چینی، گلا بی ، ٹیڈی، مقامی اور راجن پوری شامل ہیں۔انہوں نے ذکر کیا کہ بہترین نسل جس نے بقا کی بلند شرح کا مظاہرہ کیا ہے وہ مقامی ہے۔ گوادر پرو کے مطابق فارم میں ہم بکریوں کو مسلسل پریکٹس کے بعد صحت مند رکھتے ہیں جس میں بالوں اور گرائم کو برش کرنا،

صاف پانی سے دھونا وغیرہ شامل ہیں۔ بکریوں کے شیڈصاف اور کشادہ ہیں تاکہ وہ آرام محسوس کر سکیں۔ ان کو موسم کے منفی حالات سے بچانے کے لیے چھتیںہوادار ہیں، گوٹ فارم آنے والے دنوں میں 400 سے زیادہ بکرے پالنے کے لیے کافی ہے۔ گوادر پرو کے مطابق جولائی 2019 میں تعمیر کیا گیا، گوٹ فارم 400 مربع میٹر پر پھیلا ہوا ہے۔ 10000 بکریوں کو پالنے کی صلاحیت کے ساتھ،

یہ لائیو سٹاک فارمنگ کے شعبے میں نئے آنے والوں کے لیے سیکھنے کے مرکز میں تبدیل ہو رہا ہے۔ اسے پاکستان میں چینی سفارت خانے اور پاک بحریہ کے علاوہ وزارت لائیو سٹاک، بلوچستان اور بیجنگ زونگیو بائیو ٹیکنالوجی کمپنی لمیٹڈ کی تکنیکی رہنمائی حاصل ہے۔ گوادر پرو کے مطابق کوئٹہ کے لائیو سٹاک فارمر خورشید بلوچ نے گوادر گوٹ فارم کی ترقی کو سراہتے ہوئے کہا اگر مقامی لوگ اپنے بکریوں کے فارم قائم کرنے کے لیے حوصلہ افزائی کرتے ہیں،

تو ماہی گیری کا شہر ذہانت سے ترقی کرنا شروع کر دے گا جس سے روز گار کی نئی راہیں کھلیں گی اور ساتھ ہی خوراک سے نمٹنے کے لیے ایک سخت قدم ہوگا۔ گوادر پرو کے مطابق انہوں نے مزید کہا کہ بکریوں کی فارمنگ کا مطلب صرف دودھ یا گوشت پیدا کرنا نہیں ہے۔ اس میں کئی ذمہ داریاں اور ضروریات ہیں جو پوری کرنے کے لیے ہیں ہمیں مویشیوں کی اچھی دیکھ بھال اور انسانی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے اس کا مناسب انتظام کرنا چاہیے۔ گوادر کے لوگوں نے رپورٹر کو بتایا کہ

وہ اپنے گھروں میں جانور پالتے تھے لیکن نہ تو ان کے آباؤ اجداد نے کبھی منظم طریقے سے گوٹ فارم تیار کرنے پر غور کیا نہ ہم نے۔ انہوں نے کہا کہ ان کے جانور اکثر بیماری کا شکار ہو جاتے ہیں۔ گوادر میں ملا فضل چوک کے قریب رہنے والے نور مہتاب دشتی نے کہا میں نے گوادر میں بکریوں کے فارم کے بارے میں سنا ہے اور امید ہے کہ ایک دن اسے دیکھ کر اس کی فعالیت اور فوائد کا مشاہدہ کروں گا۔ گوادر پرو کے مطابق یہ ایک اچھی پیش رفت ہے کہ چین اور پاکستان کے درمیان زراعت اور لائیو سٹاک

پر ایک مشترکہ ورکنگ گروپ (JWG) پہلے ہی قائم ہو چکا ہے۔ وہ جے ڈبلیو جی پاکستان کی زرعی اور لائیو سٹاک کی معیشت کو بحال کرنے کے لیے مختلف شعبوں کا جائزہ لیتا ہے۔ پاکستان لائیو سٹاک اور ڈیری ڈویلپمنٹ پراجیکٹ کے لیے کام کرنے والے ماہر معاشیات ساجد بلوچ نے کہا کہ اگر پاکستان چین کے قرنطینہ کے ضوابط پر پورا اتر سکتا ہے تو پاکستان کے لائیو سٹاک اور زراعت کے شعبے میں ترقی کرنے اور لاکھوں ڈالر کی برآمدات کے مواقع کھولنے کی بڑی گنجائش موجود ہے۔ انہوں نے کہاکہ سی پیک پاکستان کی اقتصادی اور غربت کے پروفائل کو تبدیل کر رہا ہے۔

موضوعات:



کالم



ایک اندر دوسرا باہر


میں نے کل خبروں کے ڈھیر میں چار سطروں کی ایک چھوٹی…

اللہ معاف کرے

کل رات میرے ایک دوست نے مجھے ویڈیو بھجوائی‘پہلی…

وہ جس نے انگلیوں کوآنکھیں بنا لیا

وہ بچپن میں حادثے کا شکار ہوگیا‘جان بچ گئی مگر…

مبارک ہو

مغل بادشاہ ازبکستان کے علاقے فرغانہ سے ہندوستان…

میڈم بڑا مینڈک پکڑیں

برین ٹریسی دنیا کے پانچ بڑے موٹی ویشنل سپیکر…

کام یاب اور کم کام یاب

’’انسان ناکام ہونے پر شرمندہ نہیں ہوتے ٹرائی…

سیاست کی سنگ دلی ‘تاریخ کی بے رحمی

میجر طارق رحیم ذوالفقار علی بھٹو کے اے ڈی سی تھے‘…

اگر کویت مجبور ہے

کویت عرب دنیا کا چھوٹا سا ملک ہے‘ رقبہ صرف 17 ہزار…

توجہ کا معجزہ

ڈاکٹر صاحب نے ہنس کر جواب دیا ’’میرے پاس کوئی…

صدقہ‘ عاجزی اور رحم

عطاء اللہ شاہ بخاریؒ برصغیر پاک و ہند کے نامور…

شرطوں کی نذر ہوتے بچے

شاہ محمد کی عمر صرف گیارہ سال تھی‘ وہ کراچی کے…