بھارت کو سفارتی محاذ پر بڑی ناکامی سلامتی کونسل کی 2 اہم ترین کمیٹیوں کی سربراہی نہ مل سکی

  اتوار‬‮ 10 جنوری‬‮ 2021  |  16:12

اسلام آباد( آن لائن )بھارت کی تمام کوششیں ناکام، سلامتی کونسل کی 2 اہم ترین کمیٹیوں کی سربراہی نہ مل سکی، کمیٹی رکن ممالک نے بھارت پر عدم اعتماد کا اظہار کردیا۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق سلامتی کونسل میں بھارت القاعدہ، داعش پر پابندیوں، افغان امور اور ایٹمی عدم پھیلاکی کمیٹیوں کا سربراہ بننا چاہتا تھا۔لیکن ان کمیٹیوں کے رکن ممالک نے بھارت کی ایک نہ چلنے دی۔ بھارت کو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی کمیٹی1267کی چیئرمین شپ نہیں مل سکی ہے۔ بھارت سلامتی کونسل کی کمیٹی1540کی چیئرمین شپ حاصل کرنے میں بھی ناکام ہوگیا۔ کمیٹی1267کا تعلق القاعدہ اور


داعش پرپابندیوں کا اختیار رکھتی ہے۔ کمیٹی 1540 ایٹمی عدم پھیلا اور افغان امور سے متعلق ہے۔بھارت سلامتی کونسل کے15ارکان کی حمایت لینے میں ناکام رہا۔ووٹ نہ دینے والے ممالک نے مقف اختیار کیا کہ بھارت کمیٹی کو اپنے مفادات کیلئے استعمال کرسکتا تھا، بھارت یہ عہدہ حاصل کرکے پاکستان کے خلاف منفی ایجنڈے کو بڑھانا چاہتا ہے۔ خیال رہے کہ بھارت نے چیئرمین شپ کے لیے سرتوڑ کوشش کی مگر اسے ناکامی ملی۔ پاکستان نے گزشتہ سال دونوں کمیٹیوں کو4بھارتی شہریوں پر پابندی عائد کرنے کا کہا تھا۔ یہ بھارتی شہری کالعدم ٹی ٹی پی اور جماعت الحرار کی حمایت کرتے تھے۔پاکستان نے ٹی ٹی پی اور جماعت الحرار کو بھارتی فنڈنگ سے متعلق بھی آگاہ کیا تھا۔ کمیٹیوں کے رکن ممالک کا کہنا ہے کہ بھارت ایٹمی عدم پھیلاو سے متعلق کمیٹی کی چیئرمین شپ کے لیے مناسب ملک نہیں ہے۔ دریں اثنا بھارت افغان امور سے متعلق کمیٹی کا سربراہ بھی نہ بن سکا رکن ممالک کے مطابق بھارت کے سربراہ بننے سے افغان امن عمل پر منفی اثرات پڑسکتے ہیں۔ بھارت کی تمام تر کوششوں کے باوجود بھارت کسی بھی کمیٹی کی چیئرمین شپ حاصل نہیں کرسکا۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

آخری موو

سینیٹ کا الیکشن کل اور پلاسی کی جنگ 23 جون 1757ءکو ہوئی اور دونوںنے تاریخ پر اپناگہرا نقش چھوڑا‘ بنگال ہندوستان کی سب سے بڑی اور امیر ریاست تھی‘پورا جنوبی ہندوستان نواب آف بنگال کی کمان میں تھا‘ سراج الدولہ بنگال کا حکمران تھا‘ دوسری طرف لارڈ رابرٹ کلائیو کمپنی سرکار کی فوج کا کمانڈر تھا‘ انگریز کے ....مزید پڑھئے‎

سینیٹ کا الیکشن کل اور پلاسی کی جنگ 23 جون 1757ءکو ہوئی اور دونوںنے تاریخ پر اپناگہرا نقش چھوڑا‘ بنگال ہندوستان کی سب سے بڑی اور امیر ریاست تھی‘پورا جنوبی ہندوستان نواب آف بنگال کی کمان میں تھا‘ سراج الدولہ بنگال کا حکمران تھا‘ دوسری طرف لارڈ رابرٹ کلائیو کمپنی سرکار کی فوج کا کمانڈر تھا‘ انگریز کے ....مزید پڑھئے‎