چین نے پاکستان کے مخصوص خطوں سے بھینس کے جنین درآمد کرنے کی اجازت دیدی

15  اپریل‬‮  2024

بیجنگ (این این آئی)چین کی جنرل ایڈمنسٹریشن آف کسٹمزاور وزارت زراعت اور دیہی امور نے حال ہی میں ایک مشترکہ اعلامیہ جاری کیا ہے جس میں چین نے پاکستان کے مخصوص خطوں سے بھینس کے جنین درآمد کرنے کی اجازت دیدی ہے۔گوادر پرو کے مطابق اعلان میں فراہم کردہ عرض البلد اور طول البلد کوآرڈینیٹ پنجاب میں رائل گروپ کے بھینسوں کی بیماریوں سے پاک فارم سے مطابقت رکھتے ہیں۔

یہ پاکستان میں پہلی اور دنیا کی واحد فیلڈہے جو چین کو زیادہ پیداوار والی بھینسوں کے جنین برآمد کرنے کے قابل ہے۔گوادر پرو کے مطابق چین پاکستان اقتصادی راہداری کے تحت شروع کیے گئے پہلے زرعی منصوبوں میں سے ایک کے طور پر، رائل گروپ کے ”بھینسوں کی افزائش کے منصوبے”نے نمایاں پیش رفت کی ہے۔ چین میں بھینسوں کے جنین کی درآمد ڈیری بھینسوں کی نسلوں کو بہتر بنانے کے چکر کو گزشتہ 12 سال سے 3 سال تک کم کر سکتی ہے۔ مزید برآں، ایک بھینس کے دودھ کی پیداوار میں تین گنا سے زیادہ اضافہ کیا جا سکتا ہے۔

گوادر پرو کے مطابق اس کے علاوہ، رائل گروپ نے پاکستان میں ان وٹرو ایمبریو پروڈکشن فیکٹری اور چراگاہیں قائم کی ہیں۔ انہوں نے مقامی محققین اور فارم مینیجرز کو بھی بھرتی اور تربیت دی ہے، اور پاکستان کو دودھ کی بھینسوں کے اعلیٰ معیار کے جراثیم کے وسائل فراہم کیے ہیں۔ اس سے مقامی سپر بفیلو ریسورس کو برقرار رکھنے کے مسئلے کو حل کرنے میں مدد ملی ہے۔گوادر پرو کے مطابق2021 میں، رائل گروپ نے رائل سیل بائیو ٹیکنالوجی (پاکستان) قائم کی اور باضابطہ طور پر”Milk Buffalo Provenance Chip”حکمت عملی کا آغاز کیا۔ اگلے سال، رائل سیل ان وٹرو ایمبریو پروڈکشن پلانٹ کا باقاعدہ افتتاح کیا گیا۔

اب پاکستان میں مقامی ٹیکنیشن ایک ہفتے میں سینکڑوں اعلیٰ قسم کے بھینسوں کے جنین تیار کر سکتے ہیں۔ جنین زیادہ پیداوار دینے والے دودھ دینے والے بھینسوں کے ریوڑ کی افزائش کریں گے اور چین میں متعارف ہونے کے بعد بھینسوں کے دودھ کی پیداوار میں بہت زیادہ اضافہ کریں گے۔گوادر پرو کے مطابق اس وقت، رائل گروپ کے فنڈ سے چلنے والی 10,000 بھینسوں کی افزائش کا فارم اس وقت زیر تعمیر ہے۔ منصوبے کا پہلا مرحلہ جون 2024 تک مکمل ہونے کی توقع ہے۔ پہلے مرحلے میں پاکستان سے زیادہ پیداوار والی بھینسوں کے ایمبریو ٹرانسپلانٹیشن کیلئے 3000 وصول کنندہ مویشی فراہم کیے جائیں گے۔ اس اقدام کا مقصد چین میں اعلیٰ پیداوار والے ریوڑ کی پہلی کھیپ کی تیزی سے افزائش کرنا ہے۔



کالم



آئوٹ آف دی باکس


کان پور بھارتی ریاست اترپردیش کا بڑا نڈسٹریل…

ریاست کو کیا کرنا چاہیے؟

عثمانی بادشاہ سلطان سلیمان کے دور میں ایک بار…

ناکارہ اور مفلوج قوم

پروفیسر سٹیوارٹ (Ralph Randles Stewart) باٹنی میں دنیا…

Javed Chaudhry Today's Column
Javed Chaudhry Today's Column
زندگی کا کھویا ہوا سرا

Read Javed Chaudhry Today’s Column Zero Point ڈاکٹر ہرمن بورہیو…

عمران خان
عمران خان
ضد کے شکار عمران خان

’’ہمارا عمران خان جیت گیا‘ فوج کو اس کے مقابلے…

بھکاریوں کو کیسے بحال کیا جائے؟

’’آپ جاوید چودھری ہیں‘‘ اس نے بڑے جوش سے پوچھا‘…

تعلیم یافتہ لوگ کام یاب کیوں نہیں ہوتے؟

نوجوان انتہائی پڑھا لکھا تھا‘ ہر کلاس میں اول…

کیا یہ کھلا تضاد نہیں؟

فواد حسن فواد پاکستان کے نامور بیوروکریٹ ہیں‘…

گوہر اعجاز سے سیکھیں

پنجاب حکومت نے وائسرائے کے حکم پر دوسری جنگ عظیم…

میزبان اور مہمان

یہ برسوں پرانی بات ہے‘ میں اسلام آباد میں کسی…

رِٹ آف دی سٹیٹ

ٹیڈکازینسکی (Ted Kaczynski) 1942ء میں شکاگو میں پیدا ہوا‘…