وزیراعظم کی کامیابی کے پیچھے خاتون اول کاہاتھ ہے؟ جانتے ہیں صحافی کے سوال پر بشریٰ بی بی نے کیا جواب دیا؟

  منگل‬‮ 2 مارچ‬‮ 2021  |  10:35

لاہور(این این آئی،مانیٹرنگ ڈیسک) خاتون اول بشریٰ عمران نے گزشتہ رات مزار حضرت داتا گنج بخشؒ کے قریب پناہ گاہ کا دورہ کیا۔ فرح خان بھی ہمراہ تھیں۔ خاتون اول بشریٰ عمران نے پناہ گاہ میں سہولتوں کا جائزہ لیا۔ خاتون اول بشریٰ عمران نے پناہ گاہ میں مقیم لوگوں سے کھانے کے معیار اور رہائشی سہولتوں کے بارے دریافت کیا۔خاتون اولبشریٰ عمران نے کھانا کھا کر کھانے کا معیار بھی چیک کیا۔پناہ گاہ میں مقیم افراد نے کھانے کے معیار کی تعریف کی۔ خاتون اول بشریٰ عمران نے لوگوں سے ان کے مسائل بھی پوچھے اور مسائل فوری حل


کرنے کی یقین دہانی کرائی۔ لوگوں نے مسائل کے حل کیلئے ذاتی دلچسپی لینے پر خاتون اول بشریٰ عمران کا شکریہ ادا کیا۔ خاتون اول بشریٰ عمران نے پناہ گاہ میں قیام و طعام کے لئے انتظامات اور سہولتوں کو مزید بہتر بنانے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ پناہ گاہوں کی عمارتوں کی ضروری مرمت کیلئے فنڈز ترجیحی بنیادوں پر مہیا کریں گے۔پناہ گاہوں کی عمارتوں کی دیکھ بھال کیلئے ہر طرح کے وسائل حاضر ہیں۔ہماری حکومت نے کھلے آسمان تلے سونے والے افراد کو چھت دی ہے اور یہ ان لوگوں پر کوئی احسان نہیں بلکہ ان کا حق ہے۔اللہ تعالیٰ نے بھی صلہ رحمی کا حکم دیا ہے۔ پناہ گاہو ں میں مقیم لوگوں کا خصوصی خیال رکھنا ذمہ داری بھی ہے، فرض بھی اور نیکی بھی۔انسانیت کی خدمت سے خالق بھی راضی ہوتا ہے اور مخلوق بھی۔خاتون اول بشریٰ عمران سے پناہ گاہ میں مقیم لوگوں نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پناہ گاہ میں گھر جیسا ماحول ہے۔ پناہ گاہیں بنانا آپ کی حکومت کا مثالی اقدام ہے۔ پہلے فٹ پاتھ پر رات گزارنی پڑتی تھی، اب یہاں سکون سے سوتے ہیں اور کھانا بھی ملتا ہے۔ دورے کے دوران  جیو نیوز کےنمائندے نے خاتون اول سے سوال کیا کہ کہتے ہیں وزیراعظم عمران خان کی کامیابی کے پیچھے خاتون اول کاہاتھ ہے، جس پر خاتون اول بشریٰ عمران نے جواب دیا کہ ہر کامیاب بندے کے پیچھے اسکی بیوی کا ہاتھ ہوتا ہے۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

12ہزار درد مندوں کی تلاش

ارشاد احمد حقانی (مرحوم)’’ ریڈ فائونڈیشن‘‘ کا پہلا تعارف تھے‘ حقانی صاحب سینئر صحافی تھے‘ سیاسی کالم لکھتے تھے اور یہ اپنے زمانے میں انتہائی مشہور اور معتبر تھے‘ میری عمر کے زیادہ تر صحافی ان کی تحریریں پڑھ کر جوان ہوئے اور صحافت میں آئے‘ حقانی صاحب ہر رمضان میں چند قومی این جی اوز اور خیر کا کام ....مزید پڑھئے‎

ارشاد احمد حقانی (مرحوم)’’ ریڈ فائونڈیشن‘‘ کا پہلا تعارف تھے‘ حقانی صاحب سینئر صحافی تھے‘ سیاسی کالم لکھتے تھے اور یہ اپنے زمانے میں انتہائی مشہور اور معتبر تھے‘ میری عمر کے زیادہ تر صحافی ان کی تحریریں پڑھ کر جوان ہوئے اور صحافت میں آئے‘ حقانی صاحب ہر رمضان میں چند قومی این جی اوز اور خیر کا کام ....مزید پڑھئے‎