الیکشن کمیشن کے باہر لاکھوں افراد لانے کا ٹاسک سونپ دیا گیا

  اتوار‬‮ 17 جنوری‬‮ 2021  |  0:19

اسلام آباد ( آن لائن)مسلم لیگ (ن) نے 19 جنوری کو الیکشن کمیشن کے باہر لاکھوں افراد لانے کا ٹاسک مقامی قیادت کو سونپ دیا ہے ، راولپنڈی سے الیکشن کمیشن دفتر تک پہنچنے کیلئے مسلم لیگ (ن) کی نائب صد رمریم نواز کا روٹ بھی طے کر لیا گیا ہے ،مریم نواز ریلی کی قیادت شمس آباد کے قریب نواز شریف پارک سے کریںگی ،ریلی راول چوک سے ہوتی ہوئی شاہراہ دستور پر پہنچنے گی، سرینا ہوٹل پر پی ڈی ایم کی قائدین ریلیاں بھی مل جائیں گی ،سرینا ہوٹل سے تمام رہنما بڑی ریلی کی صورت میں الیکشن


کمیشن کے باہر جائیں گے،مسلم لیگ (ن) نے احتجاجی مظاہرے میں لاکھوں افراد لانے کا ٹاسک مقامی قائدین کو سونپ دیا ہے جبکہ اٹھارہ جنوری کو ہونے والے پی ڈی ایم کی سٹیئرنگ کمیٹی میں تمام معاملات اور انتظامات کو حتمی شکل دی جائے گی ۔دوسری جانب پاکستان مسلم لیگ (ن)کے مرکزی سینئر رہنما و پبلک اکائونٹس کمیٹی کے چیئرمین رانا تنویر حسین ایم این اے نے کہا ہے کہ براڈ شیٹ کا ٹویٹ وزیر اعظم کیلئے چارج شیٹ ہے قومی طیارے کو ملائشین حکومت کی طرف سے تحویل میں لینے سے ایک بار پھر وزیر اعظم کی نااہلی و نالائقی کھل کر سامنے آگئی ہے ،فارن فنڈنگ کیس کے فیصلہ کیلئے پی ڈی ایم 19جنوری کو الیکشن کمیشن کے باہر بھرپور احتجاج کرے گی، وزیر اعظم کی خواہش پر نواز لیگ اور پیپلز پارٹی غیر ملکی فنڈز لینے کے الزام پر تحقیقات کروانے کو تیار ہے تاکہ دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہوسکے، حکومت کے خلاف لانگ مارچ حتمی فیصلہ ہے جبکہ استعفے دینے کا آپشن بھی موجود ہے اور اس پر پی ڈی ایم کی تمام جماعتوں کی مشاورت کے بعد فیصلہ کیا جائے گا جبکہ اسلام آباد میں دھرنا دینے کافیصلہ بھی 31جنوری کو ہونے والے پی ڈی ایم کے سربراہی اجلاس میں کیا جائے گا، پبلک اکائونٹس کمیٹی نے گزشتہ اڑھائی سالوں کے دوران پاکستا ن کی تاریخ کی ریکارڈ 5ارب روپے ریکوری کی ہے جبکہ اسکے مقابلہ میں نیب نے تمام ہتھکنڈے استعمال کرنے کے باوجود ساڑھے 4 ارب روپے کی رقم وصول کی ہے،عمران خانعوام کو کچھ بھی ڈیلور نہیں کرسکے جبکہ جمہوری ممالک میں عوامی بے چینی اور احتجاج پر حکومتیں مستعفی ہوجاتی ہیں، وزیر اعظم اس قدر ڈھیٹ ہوچکا ہے کہ اسے اب کسی چیزکی کوئی پرواہ نہ ہے، مہنگائی نے عوام کی چیخیں نکال دی ہیں بجلی اور گیس کے بحران نے عوام کی زندگیاں اجیرن بنا دی ہیں


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

آخری موو

سینیٹ کا الیکشن کل اور پلاسی کی جنگ 23 جون 1757ءکو ہوئی اور دونوںنے تاریخ پر اپناگہرا نقش چھوڑا‘ بنگال ہندوستان کی سب سے بڑی اور امیر ریاست تھی‘پورا جنوبی ہندوستان نواب آف بنگال کی کمان میں تھا‘ سراج الدولہ بنگال کا حکمران تھا‘ دوسری طرف لارڈ رابرٹ کلائیو کمپنی سرکار کی فوج کا کمانڈر تھا‘ انگریز کے ....مزید پڑھئے‎

سینیٹ کا الیکشن کل اور پلاسی کی جنگ 23 جون 1757ءکو ہوئی اور دونوںنے تاریخ پر اپناگہرا نقش چھوڑا‘ بنگال ہندوستان کی سب سے بڑی اور امیر ریاست تھی‘پورا جنوبی ہندوستان نواب آف بنگال کی کمان میں تھا‘ سراج الدولہ بنگال کا حکمران تھا‘ دوسری طرف لارڈ رابرٹ کلائیو کمپنی سرکار کی فوج کا کمانڈر تھا‘ انگریز کے ....مزید پڑھئے‎