دنیا بھر میں کورونا وائرس کی تباہ کاریاں ، امریکا اور بھارت سرفہرست  مریضوں کی تعداد 2 کروڑ سے تجاوز،7 لاکھ 37 ہزار 135 اموات  

  منگل‬‮ 11 اگست‬‮ 2020  |  17:45

واشنگٹن / برازیلیا / نئی دہلی( آن لائن) دنیا بھر میں کرونا وائرس کیسز کی تعداد 2 کروڑ 2 لاکھ سے تجاوز کر گئی، امریکا، برازیل اور بھارت کرونا وائرس کیسز کے لحاظ سے بدستور پہلے، دوسرے اور تیسرے نمبر پر ہیں۔ غیر ملکی خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق دنیا بھر میں کورونا وائرس کے کیسز کی تعداد 2 کروڑ 2 لاکھ سے تجاوز کر گئی، دنیا بھر میں کرونا وائرس کے فعال کیسز کیتعداد 64 لاکھ 56 ہزار سے زائد ہے۔اب تک دنیا بھر میں کرونا وائرس سے ہونے والی اموات کی تعداد 7 لاکھ 37 ہزار 135


ہوچکی ہے جبکہ 1 کروڑ 30 لاکھ سے زائد کرونا کے مریض صحتیاب ہو چکے ہیں۔کرونا وائرس کے کیسز اور اموات کے لحاظ سے امریکا سب سے زیادہ متاثر ہے، امریکا میں اب تک کرونا وائرس سے 1 لاکھ 66 ہزار 44 اموات ہوچکی ہیں۔امریکا میں کرونا وائرس کے 23 لاکھ 90 ہزار سے زائد فعال کیسز ہیں جبکہ 17 ہزار سے زائد زیر علاج مریضوں کی حالت تشویشناک ہے۔امریکا میں کرونا وائرس کے اب تک 52 لاکھ سے زائد کیسز رپورٹ ہو چکے ہیں جبکہ 26 لاکھ سے زائد کرونا مریض صحتیاب ہو چکے ہیں۔دوسرے نمبر پر برازیل ہے جہاں کرونا وائرس کے اب تک 30 لاکھ سے زائد کیسز رپورٹ ہوچکے ہیں جبکہ اموات 1 لاکھ 1 ہزار 752 ہوگئی ہیں۔بھارت کرونا وائرس کیسز کے لحاظ سے دنیا بھر میں تیسرے نمبر پر ہے، بھارت میں اب تک 22 لاکھ 67 ہزار سے زائد کیسز سامنے آچکے ہیں جبکہ کرونا وائرس سے ہلاکتوں کی تعداد 45 ہزار 353 ہوچکی ہے۔کرونا وائرس کیسز کے حوالے سے روس اور جنوبی افریقہ بالترتیب چوتھے اور پانچویں نمبر پر ہیں، وبا کے آغاز میں سب سے زیادہ متاثر ملک اٹلی میں کئی روز سے کرونا وائرس کا کوئی کیس رپورٹ نہیں ہوا۔دوسری جانب چین میں ایک بار پھر کرونا وائرس سر اٹھاتا دکھائی دے رہا ہے، گزشتہ 24 گھنٹوں میں چین میں 44 نئے کیسز رپورٹ ہوئے ہیں۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

قاسم پاشا کی گلیوں میں

آیا صوفیہ کے سامنے دھوپ پڑی تھی‘ آنکھیں چندھیا رہی تھیں‘ میں نے دھوپ سے بچنے کے لیے سر پر ٹوپی رکھ لی‘ آنکھیں ٹوپی کے چھجے کے نیچے آ گئیں اور اس کے ساتھ ہی ماحول بدل گیا‘ آسمان پر باسفورس کے سفید بگلے تیر رہے تھے‘ دائیں بائیں سیکڑوں سیاح تھے اور ان سیاحوں کے درمیان ....مزید پڑھئے‎

آیا صوفیہ کے سامنے دھوپ پڑی تھی‘ آنکھیں چندھیا رہی تھیں‘ میں نے دھوپ سے بچنے کے لیے سر پر ٹوپی رکھ لی‘ آنکھیں ٹوپی کے چھجے کے نیچے آ گئیں اور اس کے ساتھ ہی ماحول بدل گیا‘ آسمان پر باسفورس کے سفید بگلے تیر رہے تھے‘ دائیں بائیں سیکڑوں سیاح تھے اور ان سیاحوں کے درمیان ....مزید پڑھئے‎