پاکستان سالانہ 67 ارب روپے کاریشم درآمد کر تا ہے ، رپورٹ

  بدھ‬‮ 27 اپریل‬‮ 2022  |  17:04

اسلام آباد(این این آئی)پاکستان سالانہ 67 ارب روپے کاریشم درآمد کر تا ہے ، اگر یہ ریشم مقامی طور پر تیار کیا جائے تو اس سے 670,000 خاندانوں کو گھر بیٹھے روزگار ملے گا، دیہی علاقوں میں غربت میں نمایاں کمی آئے گی، پاکستان کو برآمدات کے لیے بھی زیادہ مواقع میسر ہیں، پاکستان میں سلک فارمنگ کے روشن امکانات ہیں ۔ گوادر پرو کے مطابق ڈپٹی ڈائریکٹر سیریکلچر

محکمہ جنگلات پنجاب محمد فاروق بھٹی طویل عرصے سے پنجاب میں سلک فارمنگ کو فروغ دینے کے لیے پرعزم ہیں، اور انھوں نے گوادر پرو کو بتایا کہ پاکستان میں سلک فارمنگ کے امکانات بہت زیادہ ہیں۔ بھٹی نے کہاٹیکسٹائل سیکٹر کو خام مال فراہم کرنے کے لیے 2014 میں ہمارے محکمہ پی اینڈ ڈی کی رپورٹ کے مطابق خام ریشم کی سالانہ مانگ 500 میٹرک ٹن ہے۔ لیکن اگر ہم پاکستان کے اقتصادی سروے کی تازہ ترین رپورٹ پر غور کریں تو ہم سالانہ 67 ارب روپے کاریشم درآمد کر رہے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر یہ ریشم مقامی طور پر تیار کیا جائے تو اس سے 670,000 خاندانوں کو گھر بیٹھے روزگار ملے گا، جن میں زیادہ تر دیہی خواتین ہوں گی، اور خاص طور پر دیہی علاقوں میں غربت میں نمایاں کمی آئے گی۔ سازگار آب و ہوا کی وجہ سے سلک فارمنگ 80 فیصد ایشیا میں ہے۔ کافی اور سستی مزدوری کے ساتھ، پاکستان کو برآمدات کے لیے بھی زیادہ مواقع میسر ہیں۔ مثال کے طور پر کچھ چینی نجی کمپنیوں نے 2018 میں چھانگا مانگا کا دورہ کیا اور ریشم کی پیداوار کے لیے بہت زیادہ امکانات تلاش کیے اور مقامی کسانوں کے ساتھ آرڈرز دیے۔ سلک فارمنگ کے لیے پنجاب حکومت نے 500 ایکڑ پر شہتوت کاشت کیا ہے جس سے 2000 سے 3000 خاندانوں کی کفالت ہو سکتی ہے اور 10 بلین ٹری سونامی پراجیکٹ میں مزید منصوبہ بندی کی گئی ہے، اس میں چینی شہتوت بھی شامل ہے جو کہ بہت چھوٹا اور پتے توڑنے میں آسان ہے۔ بھٹی نے کہا ہر ضلع میں 50 ایکڑ شہتوت نہروں پر اور 50 ایکڑ سرکاری جنگلات میں لگائے جائیں گے۔ اس طرح ہر ضلع میں 500 یا 600 مزید خاندان شہتوت کے پتے حاصل کر سکیں گے اور ریشم کے کیڑے پال سکیں گے۔ اب سلک وارم سیڈ اچھی پیداوار اور مزاحمت کی وجہ سے چین سے درآمد کیے جاتے ہیں۔ عہدیدار نے تجویز پیش کی کہ زیادہ ٹیکسوں اور دونوں ممالک کے درمیان زیادہ تکنیکی تبادلے اور تعاون کو مدنظر رکھتے ہوئے غریب لوگوں کو سبسڈی والے نرخوں پر بیج دیے جائیں۔ ریشم کے شعبے میں عملہ محدود ہے۔ تکنیکی عملے کی تعداد تقریباً 106 ہے۔ انہیں پورے پنجاب اور دور دراز کے دیہی علاقوں میں گھر گھر جانا پڑتا ہے ہمیں اس شعبے میں مزید تربیت کی امید ہے۔ قصور کے کسان محمد اسلم نے گوادر پرو کو بتایا کہ دیکھیں ہم نے ان ریشم کے کیڑوں کو پالا ہے،میرے بچے میرے ساتھ ہیں۔ اس سے پہلے ہم ایک پیکٹ 35,000 روپے میں فروخت کرتے تھے، ایک پیکٹ باقی ہے۔ اس کی قیمت بھی تقریباً 35,000 روپے ہوگی۔ ہم ایک مہینے میں 70,000 کما لیتے ہیں ،

میرے بچوں کی اس بار عید مبارک ہو گی۔ رمضان بھی خوشحال ہے۔ بچے صحیح طریقے سے روزہ رکھ رہے ہیں۔ ان کے روزے بھی اچھے گزریں گے،” اس نے خوش دلی سے کہا۔ اسلم کے ساتھ قصور میں اس وقت لگ بھگ 1300 گھر اس کاروبار سے منسلک ہیں، جن میں سے ہر ایک خاندان ایک سے دو پیکٹ اٹھاتا ہے۔ محمد اسلم نے کہابہت سے لوگ سائیکل رکھتے تھے اور اب انہوں نے ریشم کے کیڑے پالنے کے بعد موٹر سائیکلیں خریدی ہیں۔ یہاں تک کہ کچھ خاندان ریشم کے کیڑے اکٹھے پالنے کے

بعد اپنے بچوں کی شادی کر دیتے ہیں۔ انہیں بہت زیادہ منافع ملتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ان کے تینوں بچے پہلے نابینا تھے، اور اب اس کاروبار کی بدولت مکمل طور پر ٹھیک ہو گئے ہیں۔ سیری کلچر کا آغاز 2600 قبل مسیح میں چین میں ہوا اور ہزاروں سال قبل شاہراہ ریشم کے ذریعے برصغیر میں متعارف ہوا۔ یہ 1947 میں اپنے قیام کے بعد سے پاکستان میں کاٹیج انڈسٹری کے طور پر رائج ہے۔ پنجاب پہلا صوبہ تھا جس نے سلک فارمنگ شروع کی۔



زیرو پوائنٹ

گھوڑا اور قبر

میرا سوال سن کر وہ ٹکٹکی باندھ کر میری طرف دیکھنے لگے‘ میں نے مسکرا کر سوال دہرا دیا‘ وہ غصے سے بولے ’’بھاڑ میں جائے دنیا‘ مجھے کیا لوگ آٹھ ارب ہوں یا دس ارب‘‘ میں نے ہنس کر جواب دیا’’ آپ کی بات سو فیصد درست ہے‘ ہمیں اس سے واقعی کوئی فرق نہیں پڑتا‘ ہمارے لیے صرف اپنی ....مزید پڑھئے‎

میرا سوال سن کر وہ ٹکٹکی باندھ کر میری طرف دیکھنے لگے‘ میں نے مسکرا کر سوال دہرا دیا‘ وہ غصے سے بولے ’’بھاڑ میں جائے دنیا‘ مجھے کیا لوگ آٹھ ارب ہوں یا دس ارب‘‘ میں نے ہنس کر جواب دیا’’ آپ کی بات سو فیصد درست ہے‘ ہمیں اس سے واقعی کوئی فرق نہیں پڑتا‘ ہمارے لیے صرف اپنی ....مزید پڑھئے‎