بارہ سو روپے

3  ‬‮نومبر‬‮  2016

بارہ سو روپے

قبر کھلی تھی‘ میں چلتے چلتے رک گیا اور اندر جھانکنے لگا‘ اندر کا منظرانتہائی وحشت ناک تھا‘ کفن کو دیمک چاٹ گئی تھی ‘ گوشت کو کیڑے کھا گئے جبکہ ہڈیاں آدھی آدھی مٹی میں دفن تھیں۔ میں نے گورکن کی تلاش میں نظر دوڑائی‘ دور بیری کے نیچے چارپائی تھی اور چارپائی پر… Continue 23reading بارہ سو روپے

برین ڈرین

3  ‬‮نومبر‬‮  2016

برین ڈرین

جاوید چودھری عرفان جاوید میرے قریبی دوست ہیں‘ یہ سول سرونٹ ہیں اور آج کل کراچی میں خدمات سرانجام دے رہے ہیں‘ عرفان نے لاہور کی انجینئرنگ یونیورسٹی سے انجینئرنگ میں گریجوایشن کی تھی‘ انہوں نے گریجوایشن کے بعد سی ایس ایس کا امتحان دیا‘ پاس کیا اور سرکاری ملازمت میں آگئے۔عرفان کے ساتھ سینکڑوں… Continue 23reading برین ڈرین

خوشی

3  ‬‮نومبر‬‮  2016

خوشی

جاوید چودھری یہ ٹیورن کی آخری رات تھی‘ ہماری کلاس کا اجتماعی ڈنر تھا‘ 35 طالب علم‘ طالبات اور اساتذہ اپنے بہترین سوٹ پہن کر‘ خوشبو لگا کر اور ہونٹوں پر مسکراہٹ سجا کر دریائے پو کے کنارے پہنچ گئے‘ یہ شاندار اطالوی ریستوران تھا‘ ریستوران کا صحن دریا کے پانی تک چلا جاتا تھا‘… Continue 23reading خوشی

میراث

3  ‬‮نومبر‬‮  2016

میراث

جاوید چودھری مسلم دنیا کا المیہ کیا ہے؟ یہ ہم مسلمانوں کیلئے آج کا سب سے بڑا سوال ہے اور اس سوال کے جواب کیلئے ہمیں تھوڑی سی ڈیٹیل میں جانا پڑے گا‘ فوزیہ علی آئی ایل او (انٹرنیشنل لیبر آرگنائزیشن) کی ملازم ہے‘ یہ کینیا میں پیدا ہوئی اور آج کل صومالیہ میں کام… Continue 23reading میراث

مٹھائیاں

3  ‬‮نومبر‬‮  2016

مٹھائیاں

جاوید چودھری ’’عام آدمی‘ جب تک عام آدمی کا دل آپ کے ساتھ ہوتا ہے اس وقت تک آپ کے اقتدار کا کوئی نہ کوئی معانی‘ کوئی نہ کوئی مقصد ہوتا ہے لیکن جب عام شہریوں کا دل آپ سے پھر جاتا ہے تو پھر تخت وتاج اور محل بوجھ بن جاتے ہیں اور آپ… Continue 23reading مٹھائیاں

محسن

3  ‬‮نومبر‬‮  2016

محسن

جاوید چودھری صدربارک حسین اوباما مسکرائے‘ آگے بڑھے‘ ویل چیئر پر جھکے اور میڈل اس کے گلے میں ڈال دیا۔ میں بے اختیار کھڑا ہو گیا اور تالیاں بجانا شروع کر دیں‘ میرے بچے اس بچپنے پر حیران رہ گئے لیکن میری آنکھوں میں آنسو تھے‘ میری نظرین ٹیلی ویژن سکرین پر جمی تھیں اور… Continue 23reading محسن

شیطان کی مستقل مزاجی سے

3  ‬‮نومبر‬‮  2016

شیطان کی مستقل مزاجی سے

جاوید چودھری ’’پانی نرم ہوتا ہے اور پتھر سخت‘ دونوں کو اپنی اپنی خصوصیت پر فخر ہے اور یہ فخر ازل سے دونوں کے درمیان جنگ کا باعث ہے‘‘ استاد رکا اور اس نے آبشار کی دھار پر نظریں گاڑھ دیں‘ شاگرد کی نگاہیں بھی آبشار کی طرف مڑ گئیں‘ پہاڑ کی چوٹی پر درختوں… Continue 23reading شیطان کی مستقل مزاجی سے

بھوک اور خوف کا لباس

3  اگست‬‮  2016

بھوک اور خوف کا لباس

جاوید چودھری ہم ان کے پاس بیٹھ گئے‘ وہ میٹھی نظروں سے ہماری طرف دیکھنے لگے‘ میں اپنے دوستوں کا ترجمان تھا‘ میرے دوست مختلف شعبوں سے تعلق رکھتے تھے‘ یہ بزنس مین بھی تھے‘ تاجر بھی‘ سیاستدان بھی‘ کھلاڑی بھی اور لکھاری بھی۔ ان سب کے ذہنوں میں سینکڑوں ہزاروں سوال ابھرتے‘ اٹھتے اور… Continue 23reading بھوک اور خوف کا لباس