ڈکیتی میں مزاحمت پر ماں بیٹے کو گولیاں مار دی گئیں، ماں کی حالت خطرے سے باہر

  بدھ‬‮ 19 جنوری‬‮ 2022  |  0:02

کراچی(این این آئی)کراچی میں ڈکیتی واردات کے دوران مزاحمت کرنے پر نامعلوم ملزمان نے ماں بیٹے کو گولیاں مار دیں۔پولیس کے مطابق فیڈرل بی ایریا بلاک 16 میں 20 سالہ مزمل اپنی والدہ نورالصباح کے ساتھ موٹر سائیکل پر جا رہا تھا کہ ملزمان نے انہیں دن دھاڑے یرغمال بنا کر نقدی،طلائی زیورات اور موبائل فونز چھین لیے تاہم مزاحمت کرنے پر ملزمان نے ماں بیٹے کو گولی مار کر زخمی کردیا اور موقع سے فرار ہوگئے۔پولیس کے مطابق زخمی ماں بیٹا لیاقت آباد صرافہ بازار سے طلائی زیورات خرید کر گھر جا رہے تھے، ملزمان ان سے طلائی زیورات،


نقدی اور موبائل فونز چھین کر فرار ہوگئے، ملزمان کی تعداد 2 تھی اور وہ پینٹ شرٹ پہنے ہوئے تھے۔پولیس حکام کے مطابق زخمی ماں بیٹے کو فوری طور پرطبی امداد کے لیے اسپتال منتقل کردیا گیا ،جہاں بیٹے کی حالت تشویش ناک بتائی جارہی ہے جبکہ ماں کی حالت خطرے سے باہر ہے۔پولیس حکام نے بتایاکہ جن دکانوں سے فیملی سے زیورات لیے تھے وہاں سے اور گھر کے باہر کی سی سی ٹی وی فوٹیج کی مدد سے ملزمان کی شناخت کی جائے گی۔


زیرو پوائنٹ

مقام فیض کوئی

میجر جنرل اکبر خان پاکستان کے پہلے چیف آف جنرل سٹاف تھے‘ یہ 1895ء میں امرتسر میں پیدا ہوئے تھے‘ والد چکوال کے بڑے زمین دار تھے‘ برطانوی فوج میں اس وقت گھڑ سواروں کی دو بڑی رجمنٹس ہوتی تھیں‘ ہڈسن ہارس اور پروبن ہارس‘ پاکستان کے پہلے کمانڈر انچیف جنرل والٹر میسوری ہڈسن ہارس سے تعلق رکھتے تھے جب ....مزید پڑھئے‎

میجر جنرل اکبر خان پاکستان کے پہلے چیف آف جنرل سٹاف تھے‘ یہ 1895ء میں امرتسر میں پیدا ہوئے تھے‘ والد چکوال کے بڑے زمین دار تھے‘ برطانوی فوج میں اس وقت گھڑ سواروں کی دو بڑی رجمنٹس ہوتی تھیں‘ ہڈسن ہارس اور پروبن ہارس‘ پاکستان کے پہلے کمانڈر انچیف جنرل والٹر میسوری ہڈسن ہارس سے تعلق رکھتے تھے جب ....مزید پڑھئے‎