ڈی جی آئی ایس آئی کی تعیناتی کا نوٹیفکیشن جاری نہ کرنا عمران خان کے گلے پڑ گیا، وزارت عظمیٰ خطرے میں پڑ گئی، وزیر اعظم ہائوس میں کھلبلی

  اتوار‬‮ 17 اکتوبر‬‮ 2021  |  16:32

اسلام آباد ( آن لائن)ڈی جی آئی ایس کی تعیناتی کے معاملے پر حکمران جماعت تحریک انصاف کے اتحادیوں نے ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے وزیر اعظم عمران خان کاساتھ دینے سے انکار کر دیا ہے ،حکومتی ذرائع کا کہنا ہے کہ حکومتی اتحادی جماعتوں مسلم لیگ (ق)،جی ڈی اے ،ایم کیو ایم اور بلوچستان عوامی پارٹی کا موقف ہے کہ وزیر اعظم کو ڈی جی آئی ایس آئی کی تعیناتی کے معاملے کو ایشو نہیں بنانا چاہیے تھا اور نہ ہی اس معاملے کو مزید طول پکڑنا چاہیے کیونکہ اس سے پاک فوج کی بطور قومی ادارہ بدنامی ہو


رہی ہے ،ذرائع کے مطابق مسلم لیگ (ق) کے صدر چوہدری شجاعت ،سپیکر پنجاب اسمبلی چوہدری پرویز الٰہی نے بھی وزیرا عظم عمران خان کو پیغام بھجوایاہے کہ وہ افہام و تفہیم اور ماضی کی روایات کو دیکھتے ہوئے اس معاملے کو جلد از جلد حل کریں ،ایم کیو ایم پاکستان کا بھی موقف یہی ہے کہ جیسے معاملہ طول پکڑ رہا ہے غلط فہمیاں بڑھ رہی ہیں اور اس معاملے پر صرف حکومتی ترجمان کو بات کرنی چاہیے،ہر وزیر اس پر بات نہ کرے ۔جی ڈی اے اور باپ کے ذرائع کا کہنا ہے کہ انہیں موجودہ تمام صورت حال پر گہری تشویش ہے ،وزیرا عظم جس طرح ماضی میں سٹیبلشمنٹ کو ساتھ لیکر اہم نوعیت کے فیصلے کرتے رہے ہیں ابھی بھی قومی ادارے وسیع تر مفاد میں وہ جلد نوٹیفکیشن جاری کرے اور اس سلسلے میں عسکری قیادت کی سفارشات کو مد نظرر کھا جائے تا کہ کسی بھی ادارے کا پیشہ ورانہ وقار مجروح نہ ہو ،ان اتحادیوں نے وزیرا عظم سے ڈی جی آئی ایس آئی کی تعیناتی کا نوٹیفکیشن جلد جاری کرنے کا بھی مطالبہ کیا ہے ۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

پاکستان کے اصل ایٹمی اثاثے

سیلانی ویلفیئر ٹرسٹ پاکستان کے بڑے ویلفیئر ٹرسٹس میں شمارہوتا ہے‘ یہ ادارہ مولانا بشیر قادری صاحب نے 1999میں بنایا تھا‘ ملک بھر میں سیلانی کے دستر خوان بھی چل رہے ہیں اور فلٹریشن پلانٹس بھی‘ یہ لوگ روزانہ ضرورت مندوں کو ایک کروڑ روپے کا کھانا کھلاتے ہیں۔فلٹریشن پلانٹس‘ جہیز فنڈز‘ اجتماعی شادیاں اور مفت ادویات اس کے علاوہ ....مزید پڑھئے‎

سیلانی ویلفیئر ٹرسٹ پاکستان کے بڑے ویلفیئر ٹرسٹس میں شمارہوتا ہے‘ یہ ادارہ مولانا بشیر قادری صاحب نے 1999میں بنایا تھا‘ ملک بھر میں سیلانی کے دستر خوان بھی چل رہے ہیں اور فلٹریشن پلانٹس بھی‘ یہ لوگ روزانہ ضرورت مندوں کو ایک کروڑ روپے کا کھانا کھلاتے ہیں۔فلٹریشن پلانٹس‘ جہیز فنڈز‘ اجتماعی شادیاں اور مفت ادویات اس کے علاوہ ....مزید پڑھئے‎