عثمان بزدار تونسہ میں اربوں روپے پانی کی طرح بہارہے ہیں اورلاہور کو بدبودار بنارہے ہیں، وزیراعلیٰ پر الزام عائد

  اتوار‬‮ 17 جنوری‬‮ 2021  |  0:19

لاہور (این این آئی ) مسلم لیگ (ن) پنجاب کی سیکرٹری اطلاعات عظمی بخاری نے کہاہے کہ عثمان بزدار تونسہ میں اربوں روپے پانی کی طرح بہارہے ہیں،خوبصورت لاہور کو بدبودار بنانے میں پرچی والے وزرا میں ریس لگی ہے۔ اپنے بیان میں انہوںنے کہاکہ لاہور سے تین صوبائی وزرا اور دو وفاقی وزرا ہیں۔"تحریک کچراکنڈی"کاایک بھی وزیر اپنے حلقوں میں جانے کی ہمت نہیں کررہا،جس دن یہ لوگ اپنے حلقوں میں گئے عوام ان کا کچرے کے شاپروں سے استقبال کرینگے۔خادمہ جی راجکماری کے ایک ایک لفظ پر آپ کو مروڑ اٹھتے ہیں۔ہماری راجکماری جب بولتی ہیں تو اسلام


آباد سے لاہور تک چیخوں کی آوازیں سنائی جاتی ہیں،جس دن راجکماری نے اسلام آباد کا رخ کیا وہ دن جعلی حکومت کا آخری دن ہوگا۔  دوسری جانب مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف اور پنجاب اسمبلی میں قائد حزب اختلاف حمزہ شہباز کی احتساب عدالت میں پیشی کے موقع پر اظہار یکجہتی کیلئے آنے والے رہنماؤں اور کارکنوں کی پولیس سے ہاتھا پائی اور دھکم پیل ہوئی۔ قیادت سے اظہار یکجہتی کیلئے آنے والے لیگی رہنما اور کارکنان نے احتساب عدالت کی طرف جانے کی کوشش کی جس پر پولیس نے انہیں روک دیا۔ اس دوران لیگیوں اور پولیس کے درمیان شدید تلخ کلامی ہوئی جس کے بعد بات ہاتھا پائی اور دھکم پیل تک پہنچ گئی۔اس موقع پر لیگی رہنما خواجہ عمران نذیر اور چوہدری شہباز بھی موجود تھے جنہیں پولیس اہلکاروں نے دھکے دئیے۔ پولیس افسران نے حالات کو دیکھتے ہوئے خواتین اہلکاروں سمیت مزید نفری طلب کر لی۔واضح رہے کہ مسلم لیگ (ن) کے صدر محمد شہباز شریف سے احتساب عدالت میں پیشی کے موقع پر ان کی بھتیجی اور پارٹیکی نائب صدر مریم نواز نے ملاقات کی، مریم نواز نے اپنے کزن اور پنجاب اسمبلی میں قائد حزب اختلاف حمزہ شہباز سے بھی ملاقات کی، مریم نواز نے دونوں سے ان کی خیریت دریافت کی۔ ذرائع کے مطابق مریم نواز نے اس موقع پر شہباز شریف سے اہم امور پر مشاورت بھی کی۔ مریم نواز نے شہباز شریف سے کہاکہ آپ کی بڑی قربانی ہے،فیملی آپ کو بہت مس کرتی ہے۔ پارٹی کے دیگر رہنما بھی اس موقع پر موجود تھے۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

آخری موو

سینیٹ کا الیکشن کل اور پلاسی کی جنگ 23 جون 1757ءکو ہوئی اور دونوںنے تاریخ پر اپناگہرا نقش چھوڑا‘ بنگال ہندوستان کی سب سے بڑی اور امیر ریاست تھی‘پورا جنوبی ہندوستان نواب آف بنگال کی کمان میں تھا‘ سراج الدولہ بنگال کا حکمران تھا‘ دوسری طرف لارڈ رابرٹ کلائیو کمپنی سرکار کی فوج کا کمانڈر تھا‘ انگریز کے ....مزید پڑھئے‎

سینیٹ کا الیکشن کل اور پلاسی کی جنگ 23 جون 1757ءکو ہوئی اور دونوںنے تاریخ پر اپناگہرا نقش چھوڑا‘ بنگال ہندوستان کی سب سے بڑی اور امیر ریاست تھی‘پورا جنوبی ہندوستان نواب آف بنگال کی کمان میں تھا‘ سراج الدولہ بنگال کا حکمران تھا‘ دوسری طرف لارڈ رابرٹ کلائیو کمپنی سرکار کی فوج کا کمانڈر تھا‘ انگریز کے ....مزید پڑھئے‎