اپوزیشن تین چار مہینے ضرور شور شرابا کرے گی، مولانا صاحب یہ پرانا وقت نہیں، شیخ رشید احمد

  پیر‬‮ 3 اگست‬‮ 2020  |  19:43

راولپنڈی(این این آئی) وزیر ریلوے شیخ رشید احمد نے کہا ہے کہ اپوزیشن تین چار مہینے ضرور شور شرابا کرے گی، مولانا صاحب یہ پرانا وقت نہیں ، اپوزیشن سمجھ لے کی عمران خان کہیں نہیں جا رہے،نیب کے قانون میں ترمیم کرنے والا عمران خان آخری شخص ہو گا،بلاول روزانہ پریس کانفرنس کرے، ہمیں کوئی فرق نہیں پڑتا، بلاول کی باتیں بچگانہ ہیں۔وزیر ریلوے شیخ رشید احمد نےلیاقت باغ راولپنڈی میں نماز عید ادا کی ۔نماز کی ادائیگی کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے شیخ رشید نے کہا کہ بڑی عید پر بڑی احتیاط کی ضرورت ہے، میری


حالت کورونا کے بعد ابھی تک بہتر نہیں ہو سکی ۔شیخ رشید احمد نے کہا کہ پاکستان مشکل وقت سے گزر رہا ہے، ہم مانتے ہیں کہ ملک میں مہنگائی ہوئی ہے تاہم عمران خان حالات بہتر کرنا چاہتا ہے۔وفاقی وزیر نے کہا کہ چینی آٹا امپورٹ کر کے اس پر سبسڈی دیں گے، یوٹیلٹی اسٹورز کا اسکینڈل آگیا تو عمران خان انہیں معاف نہیں کرے گا۔انہوں نے کہا کہ جنہوں نے ملک کو لوٹا وہ چاہتے ہیں کہ نیب کے قانون میں ترمیم ہو، نیب کے قانون میں ترمیم کرنے والا عمران خان آخری شخص ہو گا۔ایک سوال کے جواب میں شیخ رشید نے کہا کہ اپوزیشن تین چار مہینے ضرور شور شرابا کرے گی، اگر کسی نے قانون ہاتھ میں لینے کی کوشش کی تو مولانا صاحب یہ پرانا وقت نہیں ہے، اپوزیشن سمجھ لے کی عمران خان کہیں نہیں جا رہے۔وزیر ریلوے نے کہا کہ شہباز شریف سے اْمید ہے کہ وہ تدبرکا مظاہرہ کریں گے جبکہ بلاول روزانہ پریس کانفرنس کرے، ہمیں کوئی فرق نہیں پڑتا، بلاول کی باتیں بچگانہ ہیں۔شیخ رشید نے کہا کہ کشمیری اپنی جان پر لاک ڈاؤن سہہ رہے ہیں، پاکستان کے سائنسدانوں نے کورونا کے حوالے سے کچھ بنا رکھا ہے لیکن بھارت نیست و نابود ہو جائے گا۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

سرعام پھانسی

مجھے چند سال پہلے اپنے ایک دوست کے ساتھ اس کے گاﺅں جانے کا اتفاق ہوا‘ یہ پنجاب کے ایک مشہور گاﺅں کے چودھری ہیں‘ میں ان کے مہمان خانے میں ٹھہرا ہوا تھا‘ سردیوں کے دن تھے‘ میں صبح اٹھا تو مہمان خانے کے صحن میں پنچایت ہو رہی تھی‘میں نے کھڑکی کھولی اور کارروائی دیکھنے لگا‘ ....مزید پڑھئے‎

مجھے چند سال پہلے اپنے ایک دوست کے ساتھ اس کے گاﺅں جانے کا اتفاق ہوا‘ یہ پنجاب کے ایک مشہور گاﺅں کے چودھری ہیں‘ میں ان کے مہمان خانے میں ٹھہرا ہوا تھا‘ سردیوں کے دن تھے‘ میں صبح اٹھا تو مہمان خانے کے صحن میں پنچایت ہو رہی تھی‘میں نے کھڑکی کھولی اور کارروائی دیکھنے لگا‘ ....مزید پڑھئے‎