شفقت محمود کیلئے نئی پریشانی،بڑا عہدہ ہاتھ سے جانے کا خدشہ ہائی کورٹ کا وفاق کو نوٹس ،2 ہفتے میں جواب طلب، وزیر تعلیم کے علاوہ ان کے پاس کون سا عہدہ ہے؟جانئے

  ہفتہ‬‮ 4 جولائی‬‮ 2020  |  13:04

اسلام آباد (این این آئی)وفاقی وزیر شفقت محمود کو بطور وزیر برائے قومی تاریخ و ادبی ورثہ کام سے روکنے کی اسلام آباد ہائی کورٹ میں درخواست دائرکر دی گئی، ڈائریکٹر جنرل پاکستان نیشنل کونسل آف آرٹس ڈاکٹر فوزیہ سعید کی تعیناتی بھی چیلنج کر دی گئی ۔اسلام آباد ہائی کورٹ نے وفاق کو نوٹس جاری کرکے دو ہفتے میں جواب طلب کرلیا۔ ہفتہ کو جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب کی جانب سے درخواست پر تحریری حکم جاری کر دیا ۔عدالت نے وفاقی وزیر شفقت محمود، اسٹیبلشمنٹ ڈویژن، سیکرٹری قومی ورثہ،نیب ،فوزیہ سعید کو نوٹس جاری کر دیا گیا ۔


درخواست میں موقف اختیار کیاگیاکہ ڈاکٹر فوزیہ سعید کی بطور چیئرمین تعیناتی وفاقی وزیر نے کی، وفاقی وزیر کو ایم پی ون سکیل میں تعیناتی کا اختیار نہیں، ڈاکٹر فوزیہ سعید تعیناتی کے لیے وضع کردہ معیار پر پورا نہیں اترتیں۔ درخواست میں استدعا کی گئی کہ ڈاکٹر فوزیہ سعید کی بطور چئیرمین پی این سی اے تعیناتی کالعدم قرار دی جائے، قومی تاریخ و ادبی ورثہ کا ادارہ اٹھارویں ترمیم کے بعد صوبوں کو منتقل ہو چکا ہے ۔ استدعا کی گئی کہ قومی تاریخ و ادبی ورثہ کا وفاق کا ادارہ ختم کرکے شفقت محمود کو کام سے روکا جائے، چیئرمین پی این سی اے کی غیر قانونی تعیناتی پر شفقت محمود کا کیس نیب کو بھیجا جائے۔درخواست گزار شہری عبدالطیف قریشی نے جی ایم چوہدری ایڈووکیٹ کے ذریعے درخواست دائر کی۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

کارٹرفارمولا

جمی کارٹر امریکا کے 39ویں صدر تھے‘ یہ 1977ءسے 1981ءتک دنیا کی سپر پاور کے سربراہ رہے‘ یہ 1924ءمیں جارجیا کے چھوٹے سے گاﺅں پلینز میں پیدا ہوئے ‘ زمین دار فیملی کے ساتھ تعلق تھا‘ والد مونگ پھلی اگاتے تھے‘ جوانی میں نیوی جوائن کر لی‘ والد کے انتقال کے بعد کھیتی باڑی شروع کر دی‘یہ بھی ....مزید پڑھئے‎

جمی کارٹر امریکا کے 39ویں صدر تھے‘ یہ 1977ءسے 1981ءتک دنیا کی سپر پاور کے سربراہ رہے‘ یہ 1924ءمیں جارجیا کے چھوٹے سے گاﺅں پلینز میں پیدا ہوئے ‘ زمین دار فیملی کے ساتھ تعلق تھا‘ والد مونگ پھلی اگاتے تھے‘ جوانی میں نیوی جوائن کر لی‘ والد کے انتقال کے بعد کھیتی باڑی شروع کر دی‘یہ بھی ....مزید پڑھئے‎