حکومت نے جدید سہولیات سے آراستہ دو نئے سپورٹس کمپلیکس تعمیر کرنے کا اعلان کر دیا

  پیر‬‮ 20 جنوری‬‮ 2020  |  23:27

پشاور(این این آئی)خیبر پختونخوا کے وزیر خزانہ تیمور سلیم جھگڑا نے کہا ہے کہ حکومت نے صوبائی دارالحکومت کی بڑھتی ہوئی آبادی کے مد نظرشہر میں مثبت سرگرمیوں کے فروغ اور نوجوانوں کو آگے بڑھنے کے بھرپور مواقع فراہم کرنے کے لئے ناصر باغ روڈاور جی ٹی روڈ پشاور پر کھیلوں کی جدید سہولیات سے آراستہ دو نئے سپورٹس کمپلیکس تعمیر کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔سپورٹس کمپلیکس کی تعمیر کی بدولت نوجوانوں اور باالخصوص بچیوں کو کھیل کے شعبے میں آگے بڑھنے اور اپنی صلاحیتیں اجاگر کرنے کے بھرپور مواقع میسر آسکیں گے۔اس امر کا اعلان وزیر خزانہ نے محکمہ


کھیل کے حکام کے ساتھ سول سیکرٹریٹ پشاور میں منعقدہ ایک اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔اجلاس میں ڈائریکٹر جنرل سپورٹس اسفندیار خٹک کے علاوہ محکمہ خزانہ و محکمہ کھیل کے متعلقہ حکام نے شرکت کی۔اس موقع پر سپورٹس کمپلیکس کی تعمیر کے حوالے سے مختلف امور کا جائزہ لیا گیا۔ڈی جی سپورٹس نے اجلاس کو سپورٹس کمپلیکس کی تعمیرسے متعلق تفصیلی بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ سپورٹس کمپلیکس کی تعمیر کے لئے جگہ کا انتخاب کرلیا گیا ہے جبکہ اراضی کے حصول،انفراسٹرکچر کی تعمیر اور منصوبے کی لاگت کے حوالے سے متعلق تمام امور پر کام کا آغاز کردیا گیا ہے اور اس سلسلے میں فزیبلٹی رپورٹ جلد حکومت کو پیش کی جائے گی۔وزیر خزانہ نے ڈی جی سپورٹس کی جانب سے دی جانے والی بریفنگ پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے تمام متعلقہ محکموں کو سپورٹس کمپلیکس کی تعمیر کے حوالے سے ترجیحی بنیادوں پر اقدامات اٹھانے کی ہدایت کی.انہوں نے کہا کہ منصوبے کی تعمیرکے لئے ہر ممکن وسائل بروئے کار لائے جائیں گے۔تیمور سلیم نے کہا کہ موجودہ حکومت نوجوان نسل پر سرمایہ کاری کررہی ہے کیونکہ یہ نوجوانان، ہمارے روشن مستقبل کی ضمانت ہیں۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

قاسم پاشا کی گلیوں میں

آیا صوفیہ کے سامنے دھوپ پڑی تھی‘ آنکھیں چندھیا رہی تھیں‘ میں نے دھوپ سے بچنے کے لیے سر پر ٹوپی رکھ لی‘ آنکھیں ٹوپی کے چھجے کے نیچے آ گئیں اور اس کے ساتھ ہی ماحول بدل گیا‘ آسمان پر باسفورس کے سفید بگلے تیر رہے تھے‘ دائیں بائیں سیکڑوں سیاح تھے اور ان سیاحوں کے درمیان ....مزید پڑھئے‎

آیا صوفیہ کے سامنے دھوپ پڑی تھی‘ آنکھیں چندھیا رہی تھیں‘ میں نے دھوپ سے بچنے کے لیے سر پر ٹوپی رکھ لی‘ آنکھیں ٹوپی کے چھجے کے نیچے آ گئیں اور اس کے ساتھ ہی ماحول بدل گیا‘ آسمان پر باسفورس کے سفید بگلے تیر رہے تھے‘ دائیں بائیں سیکڑوں سیاح تھے اور ان سیاحوں کے درمیان ....مزید پڑھئے‎