سعودی حکومت کا پرائیویٹ ملازموں کو2 سال تک نصف تنخواہ دینے کااعلان خواتین اور معذور ملازمین کو نصف تنخواہ کے ساتھ ساتھ کیا بڑا فیصلہ کر لیا گیا ؟ جانئے

  جمعرات‬‮ 4 جون‬‮ 2020  |  22:28

ریاض (این این آئی )سعودی عرب میں کورونا وائرس کے باعث لاک ڈاؤن سے معیشت کے استحکام اور کمپنیوں کو دیوالیہ ہونے سے بچانے کے لیے نجی ملازمین کو آئندہ دو سال تک نصف تنخواہ حکومت کی جانب سے دینے کا اعلان کر دیا گیا ہے۔سعودی عرب کی وزارت انسانی وسائل و سماجی ترقی نےنجی اداروں کے 4 ہزار سے 15 ہزار ریال تنخواہ لینے والے ملازمین کو دو سال تکحکومت کی جانب سے آدھی تنخواہ دینے کا اعلان کیا۔عرب ویب سائٹ عاجل کے مطابق وزارت انسانی وسائل و سماجی ترقی نے واضح کیا کہ مذکورہ ریلیف ملازمین کو کورونا


ریلیف پروگرام کے تحت دیا جائے گا اور اس میں حکومت ملازمین کو ان کی نصف تنخواہ ادا کرے گا۔سعودی وزارت انسانی وسائل و سماجی ترقی نے مزید کہا کہ حکومت نے ریاض، جدہ، دمام اور الخبر کے نجی اداروں میں کام کرنے والی خواتین اور معذور ملازمین کو نصف تنخواہ کے ساتھ ساتھ 10 فیصد اضافی رقم دینے کا بھی اعلان کیا ہے۔سعودی وزارت کی جانب سے یہ بھی کہا گیا ہے کہ یہ اقدامات ملازمین کو بیروزگار ہونے سے بچانے کے لیے کیے گئے ہیں اور کورونا وائرس کی وبا کے دوران عوام، مزدوروں اور ملازمین کی بہبود اور تحفظ کے لیے ایسے مزید اقدامات اُٹھاتے رہیں گے۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

نئی سیاسی کھچڑی

’’کرکٹ اگر مذہب ہوتا تو پورا برصغیر اس مذہب کا پیروکار ہوتا‘‘ یہ فقرہ کسی نے کہا تھا اور سچ کہا تھا‘ یہ واقعی حقیقت ہے سارک ممالک کرکٹ کے جنون میں مبتلا ہیں اور یہ خواہ کتنے ہی منقسم کیوں نہ ہوں یہ لوگ کرکٹ پر ایک ہو جاتے ہیں‘ پاکستان بھی اس جنون کی اعلیٰ ترین مثال ہے‘ ....مزید پڑھئے‎

’’کرکٹ اگر مذہب ہوتا تو پورا برصغیر اس مذہب کا پیروکار ہوتا‘‘ یہ فقرہ کسی نے کہا تھا اور سچ کہا تھا‘ یہ واقعی حقیقت ہے سارک ممالک کرکٹ کے جنون میں مبتلا ہیں اور یہ خواہ کتنے ہی منقسم کیوں نہ ہوں یہ لوگ کرکٹ پر ایک ہو جاتے ہیں‘ پاکستان بھی اس جنون کی اعلیٰ ترین مثال ہے‘ ....مزید پڑھئے‎