تحریک انصاف نے آج یوم سیاہ منانے کا اعلان کر دیا

  پیر‬‮ 20 جون‬‮ 2022  |  14:17

اسلام آباد (این این آئی)چیئرمین تحریک انصاف عمران خان نے نیب قانون میں ترامیم کی مزاحمت کی ہدایت کی ہے ۔ پیر کو چیئرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان کی زیر صدارت اجلاس ہوا جس میں نیب قانون میں ترامیم پر مفصل بریفنگ دی گئی ۔

اجلاس کے دوران پارٹی رہنماؤں کی جانب سے کالی پٹیاں باندھی گئیں۔اجلاس کے دوران عمران خان نے نیب قانون میں ترامیم کی بھر پور مزاحمت کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ نظامِ احتساب کی تباہی کی کوشش بھر پور انداز میں اجاگر کریں۔عمران خان نے فواد چوہدری اور دیگر کو نیب قانون میں ترامیم کی سازش اور اس کے اہداف سے قوم کو آگاہ کرنے اور جماعت کے ترجمانوں کو بھی معاملے کو سیاسی مباحثے کا حصہ بنانے کی خصوصی ہدایت کی۔ چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان نے کہا کہ چوروں کو این آر او دوم دے کر نظام احتساب کو باضابطہ طور پر دفن کرنے کا اہتمام کیا گیا ہے۔عمران خان  نے کہا کہ نظامِ احتساب کی تباہی سازش سے مسلط ہونے والی کٹھ پتلیوں کا کلیدی ہدف تھا، روزِ اوّل سے نشاندہی کر رہا ہوں کہ ان کے آنے کا واحد مقصد خود کو این آر او دلوانا ہے، انہوں نے نیب قانون بدل کر قوم کے لوٹے گئے1200 ارب ہضم کرنے کی شرمناک کوشش کی ہے۔انہوں نے کہا کہ بڑے چوروں کو لوٹ مارکی کھلی آزادی تیسری دنیا میں غربت کی بڑی وجہ ہے، 26 سال بڑے چوروں کو قانون کے تابع کرنے، احتساب کا نظام مضبوط بنانے کے لیے جدوجہد کی۔عمران خان نے کہا کہ ایک طرف ملک نہیں سنبھل رہا دوسری طرف چوری معاف کروانے کی ان کی کوششیں گوارا کی جارہی ہیں، اس کرپٹ سفاک گروہ نے پاکستان کی اخلاقیات تباہ کر دی ہیں۔عمران خان نے کہا ہے کہ اقتدارمیں آ کر لوٹ مارکرنا اور ادارے تباہ کر کے اس لوٹ مار کو بچانا کلچر بنا دیا گیا ہے، مجرموں کے ٹولے کی اس شرمناک کوشش کی ہرسطح پر مزاحمت کریں گے۔



زیرو پوائنٹ

چودھری برادران میں پھوٹ کیسے پڑی؟

میں نے مونس الٰہی سے پوچھا ’’خاندان میں اختلافات کہاں سے شروع ہوئے؟‘‘ ان کا جواب تھا’’جائیداد کی تقسیم سے‘ ظہور الٰہی فیملی نے اپنے اثاثے ہمارے بچپن میں آپس میں تقسیم کر لیے تھے صرف لاہور کا گھر رہ گیا تھا‘ یہ گھر ہمارے نانا چودھری ظہور الٰہی نے بنانا شروع کیا تھا لیکن مکمل ہونے سے قبل ہی ....مزید پڑھئے‎

میں نے مونس الٰہی سے پوچھا ’’خاندان میں اختلافات کہاں سے شروع ہوئے؟‘‘ ان کا جواب تھا’’جائیداد کی تقسیم سے‘ ظہور الٰہی فیملی نے اپنے اثاثے ہمارے بچپن میں آپس میں تقسیم کر لیے تھے صرف لاہور کا گھر رہ گیا تھا‘ یہ گھر ہمارے نانا چودھری ظہور الٰہی نے بنانا شروع کیا تھا لیکن مکمل ہونے سے قبل ہی ....مزید پڑھئے‎