سیاسی جماعتوں نے سینیٹ کی اہم کمیٹیوں کی سربراہی پر نظررکھ لی حکومت اور اپوزیشن کے درمیان خفیہ سمجھوتہ بھی ہونے کا انکشاف

  منگل‬‮ 13 اپریل‬‮ 2021  |  10:49

اسلام آباد (این این آئی)سینیٹ انتخابات کے ایک ماہ بعد پارلیمنٹ کے ایوان بالا میں نمائندگی رکھنے والی سیاسی جماعتوں کی نظریں اہم کمیٹیوں پر ،حکومت اور اپوزیشن کے درمیان بات چیت جاری ہے کہ ہر جماعت کو افہام و تفہیم سے اس کا حصہ مل سکے۔میڈیا رپورٹ کے مطابق حکومت اور اپوزیشن جماعتوں کے ذرائع نے بتایا کہ قائمہ اور فنکشنل کمیٹیوں کی تعداد اور ان میںچیئرمین شپ کی ذمہ داریوں کی تقسیم کے بارے میں دونوں فریقین (حکومت اور اپوزیشن) کے درمیان پہلے ہی ایک سمجھوتہ ہوچکا ہے، تاہم کمیٹیوں کی تقسیم ابھی باقی ہے۔ذرائع کے مطابق دونوں


فریقین کے نمائندوں کے درمیان حالیہ ملاقات میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ ایوان میں ان کی کل تعداد کےتناسب کے مطابق کْل 38 قائمہ اور فنکشنل کمیٹیوں کی سربراہی فریقین میں تقسیم کی جائے گی۔انہوں نے کہا کہ متفقہ فارمولے کے مطابق اپوزیشن جماعتوں کو 22 کمیٹیوں کی چیئرمین شپ ملے گی جبکہ حکمران اتحاد کی 16 کمیٹیوں کی چیئرمین شپ ہوگی۔ذرائع کے مطابق کمیٹیوں کی سربراہیکا فیصلہ سینیٹ کے چیئرمین صادق سنجرانی، قائد ایوان ڈاکٹر شہزاد وسیم اور اپوزیشن لیڈر سید یوسف رضا گیلانی کے درمیان اجلاس میں ہوگا۔اپوزیشن کے 27 سینیٹرز کے گروپ کی سربراہی کرنے والے پاکستان مسلم لیگ (ن) کے اعظم نذیر تارڑ کو بھی باضابطہ طور پر اجلاس میں مدعو کیاجاسکتا ہے تاکہ اتفاق رائے سے اس معاملے کا فیصلہ کیا جاسکے۔اعظم نذیر تارڑ کی سربراہی میں مسلم لیگ (ن) کے ایک وفد نے حال ہی میں صادق سنجرانی سے ملاقات کی اور ان سے کمیٹیوں کے قیام کے وقت اپوزیشن بینچز پر علیحدہ گروپ کی طرح سلوک کرنے کو کہا۔رابطہ کرنے پر حکمرانجماعت پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیف وہیپ فدا محمد نے تصدیق کی کہ کمیٹیوں کی تعداد کو تقسیم کرنے کے لیے حکومت اور اپوزیشن کے مابین مفاہمت ہوگئی ہے۔انہوں نے کہا کہ جب سینیٹ کے چیئرمین سعودی عرب سے وطن واپس آئیں گے تو دونوں فریقین کے درمیان ایک اور ملاقاتمتوقع ہے۔انہوں نے بتایا کہ پارٹیز کو ہر 3 سینیٹرز پر ایک کمیٹی کی سربراہی حاصل ہوگی۔قوانین کے تحت کمیٹیوں کی تشکیل کے بعد ایوان انہیں باضابطہ منظوری دے گا۔اس کے بعد ہر کمیٹی کے اراکین اپنا چیئرمین منتخب کریں گے تاہم پارلیمانی روایات کے مطابق کمیٹیوں کے چیئرمینز کو پارٹیز کےدرمیان افہام و تفہیم سے انتخابات کے بغیر متفقہ طور پر نامزد کیا جاتا ہے۔ذرائع کے مطابق حکومت اور اپوزیشن کو فیصلہ کرنا ہے کہ آیا اہم کمیٹیوں کی سربراہی ان پارٹیز کے پاس رہے گی جن کے پاس 2018 سے موجود ہیں یا اس میں تبدیلیاں آئیں گی کیونکہ حکومت یقینی طور پر چند اہمکمیٹیوں کی سربراہی حاصل کرنا چاہے گی جو اس سے قبل گزشتہ 6 سالوں سے اپوزیشن کے پاس تھی۔اس سے قبل اپوزیشن کے ارکان قانون اور انصاف، داخلہ، خزانہ، انسانی حقوق، استحقاق، امور خارجہ اور کابینہ سیکرٹریٹ سمیت متعدد اہم کمیٹیوں کی سربراہی کر رہی تھی۔ذرائع نے بتایا کہحکومت اس بار خزانہ، داخلہ اور قانون و انصاف سے متعلق کمیٹیوں کی سربراہی حاصل کرنا چاہتی ہے۔معاملے پر حکومت سے مذاکرات کے بعد پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) کی سربراہی میں دو اپوزیشن گروپس کو بھی کمیٹیوں کی صدارت کے بارے میں ایک سمجھوتہ کرنے کی ضرورت ہوگی۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

درمیان

یہ ایک ڈاکٹر کی کہانی ہے‘ ڈاکٹر صاحب اس وقت آسٹریلیا میں ہیں اور یہ وہاں ایسی شان دار زندگی گزار رہے ہیں جس کا ان کے کسی کلاس فیلو نے خواب تک نہیں دیکھا تھا‘ ہم سب لوگ زندگی میں ٹاپ کرنا چاہتے ہیں‘ ہم ہر کلاس میں اول آنا چاہتے ہیں‘ ہم بازار کا مہنگا ترین لباس خریدنا ....مزید پڑھئے‎

یہ ایک ڈاکٹر کی کہانی ہے‘ ڈاکٹر صاحب اس وقت آسٹریلیا میں ہیں اور یہ وہاں ایسی شان دار زندگی گزار رہے ہیں جس کا ان کے کسی کلاس فیلو نے خواب تک نہیں دیکھا تھا‘ ہم سب لوگ زندگی میں ٹاپ کرنا چاہتے ہیں‘ ہم ہر کلاس میں اول آنا چاہتے ہیں‘ ہم بازار کا مہنگا ترین لباس خریدنا ....مزید پڑھئے‎