مسئلہ کیا ہے؟ ڈپٹی چیئرمین سینیٹ نے وزیر اطلاعات شبلی فراز کو بات کرنے سے روک دیا، دونوں کے درمیان نوک جھونک

  جمعہ‬‮ 30 اکتوبر‬‮ 2020  |  0:33

اسلام آباد (این این آئی)سینیٹ کے اجلاس میں ڈپٹی چیئرمین سینیٹ سلیم مانڈوی والا اور وزیر اطلاعات شبلی فراز کے درمیان نوک جھونک ہوئی ہے اور ڈپٹی چیئرمین سینیٹ نے وزیر اطلاعات کو بات کرنے سے روک دیا۔جمعرات کو سینیٹ میں جاری اجلاس کے دوران وزیر اطلاعات نے گفتگو شروع کرتے ہوئے پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ(پی ڈی ایم) کے جلسوں اور ان کی کارروائیکو تنقید کا نشانہ بنانا شروع کیا جس پر اجلاس کی سربراہی کرنے والے ڈپٹی چیئرمین سینیٹ سلیم مانڈوی والا نے انہیں درمیان میں ٹوکتے ہوئے کہا کہ میں سمجھا تھا آپ کو کوئی اہم بات کرنی ہے


تاہم یہ تو ایک عام مباحثے کی بات ہے۔سینیٹر شبلی فراز نے کہا کہ میں وزیر اطلاعات ہوں اور ہمارا مخالف ملک ایک بیانیہ چلا رہا ہے میں اس کے بارے میں بات کرنا چاہتا ہوں، چاہے کوئی بھی مسئلہ ہو تاہم سب سے اہم ایشو ملک ہے، اگر اس پر بات نہیں کرنے دی جائے گی تو کیسے چلے گا۔ڈپٹی چیئرمین سینیٹ نے کہا کہ آپ سیشن کے بعد بات کریں، پورا سیشن متاثر ہو رہا ہے تاہم شبلی فراز بات کرنے پر مصر رہے اور کہا کہ میں حکومت پاکستان کا ترجمان ہوں لہٰذا میں ایک پالیسی بیان دینا چاہتا ہوں۔چیئرمین آپ کو جو ایشو اہمیت کے حامل ہیں ان کو ترجیح دینی چاہیے، اگر اس سے کوئی اہم ایشو ہے تو بتائیں، جو ملک کے خلاف بیانیہ چل رہا ہے، اگر اس سے کوئی اہم چیز ہے تو مجھے بتا دیں۔اس موقع پر ایوان کے دونوں جانب موجود اراکین کی جانب سے شور شرابے کا سلسلہ جاری رہا۔اس مرحلے پر قائد ایوان شہزاد وسیم نے کہا کہ رول 265 کے تحت بات کرنا چاہتے ہیں، پالیسی بیان ایشو پر ہی ہوتا ہے۔سلیم مانڈوی والا نے کہا کہ وزیر جب تک چاہے بات کر سکتے ہیں لیکن ایجنڈا کے بعد کریں، میں انہیں کب منع کر رہا ہوں، ایجنڈے کے بعد بات کر لیں، اس میں مسئلہ کیا ہے۔سینیٹر شبلی فراز نے کہا کہ میرےبیان ایک اچھا پیغام جائے گا جس پر ڈپٹی چیئرمین نے کہا کہ میں کوئی صحیح یا غلط پیغام نہیں دے رہا، میں صرف یہ کہہ رہا ہوں کہ مجھے ایجنڈا مکمل کرنے دیں، آپ میری بات سنیں۔اس کے بعد اجلاس کی سربراہی کرنے والے ڈپٹی چیئرمین نے ایجنڈا پڑھ کر سنایا اور اراکین کی چھٹیوں کی درخواستیں منظور کیں۔اپوزیشن کے رکن عثمان کاکڑ نے بات کرنے کی اجازت نہ ملنے پر احتجاجکیا جس پر ڈپٹی چیئرمین نے انہیں خبردار کیا کہ وہ ایجنڈا چلنے دیں، میں آپ کو بات کرنے کا موقع فراہم کروں گا۔قائد ایوان شہزاد وسیم نے شبلی فراز کو گفتگو کا موقع فراہم کرنے کیلئے دلیل پیش کرتے ہوئے کہا کہ ایجنڈا ختم ہونے کے بعد کوئی بات سننے کو تیار ہوتا، یہ اس ایوان کی روایت بن چکی ہے، کوئی سچ سننے کو تیار نہیں ہے، بات ترجیحات کی ہے۔سلیم مانڈوی والانے قائد ایوان کو باور کرایا کہ میں وزیر کو ہر حالت میں بولنے دوں گا لیکن اجلاس کے درمیان میں ہرگز نہیں، میں چاہتا ہوں کہ سیشن چلتا رہے۔شہزاد سیم نے کہا کہ اس وقت ملک میں جو ماحول بنایا جا رہا ہے وہ اس بات کا متقاضی ہے کہ اس پر بات کی جائے جس پر ڈپٹی چیئرمین نے پھر کہا کہ قائد ایوان آپ براہ مہربانی ایجنڈا چلنے دیں، آپ مزید تاخیر کرا رہے ہیں۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

بڑے چودھری صاحب

انیس سو ساٹھ کی دہائی میں سیالکوٹ میں ایک نوجوان وکیل تھا‘ امریکا سے پڑھ کر آیا تھا‘ ذہنی اور جسمانی لحاظ سے مضبوط تھا‘ آواز میں گھن گرج بھی تھی اور حس مزاح بھی آسمان کو چھوتی تھی‘ یہ بہت جلد کچہری میں چھا گیا‘ وکیلوں کے ساتھ ساتھ جج بھی اس کے گرویدا ہو گئے‘ اس ....مزید پڑھئے‎

انیس سو ساٹھ کی دہائی میں سیالکوٹ میں ایک نوجوان وکیل تھا‘ امریکا سے پڑھ کر آیا تھا‘ ذہنی اور جسمانی لحاظ سے مضبوط تھا‘ آواز میں گھن گرج بھی تھی اور حس مزاح بھی آسمان کو چھوتی تھی‘ یہ بہت جلد کچہری میں چھا گیا‘ وکیلوں کے ساتھ ساتھ جج بھی اس کے گرویدا ہو گئے‘ اس ....مزید پڑھئے‎