منگل‬‮ ، 28 مئی‬‮‬‮ 2024 

ورنہ ہم اسی طرح

2  مارچ‬‮  2023

لیاقت چٹھہ اس وقت راولپنڈی میں کمشنر ہیں‘ یہ 2014ء میں گجرات میں ڈپٹی کمشنر تھے‘ انہوں نے اس وقت گجرات شہر میں ’’جم خانہ کلب‘‘ بنانے کا فیصلہ کیا‘ انگریز نے تقسیم سے قبل ہر ضلع میں کلب کے لیے زمینیں مختص کی تھیں‘ پاکستان بنا اور یہ گرتا پڑتا 75 برس کا ہو گیا لیکن یہ زمینیں خالی پڑی رہیں یا ان پر مختلف محکموں نے قبضہ کر لیا یا پھر یہ طاقتور لوگوں کے قابو آگئیں

مگر ان پر کلب نہیں بن سکے‘ گجرات میں بھی زمین موجود تھی‘ لیاقت چٹھہ نے زمین خالی کرائی‘ جم خانہ بنانے کا اعلان کیا‘ بورڈ بنایا اور ممبر شپ لانچ کر دی‘ شہر کے لوگوں نے قطار میں لگ کر ممبر شپ لے لی‘ رقم جمع ہوئی اور اس رقم سے شہر میں شان دار کلب بن گیا‘ اس کلب میں وہ تمام سہولتیں موجود تھیں جو بڑے شہروں کے کلبز میں ہوتی ہیں‘ اس میں سوئمنگ پول بھی بنے‘سکواش اور بیڈمنٹن کورٹس بھی ہیں‘ جم بھی ہے‘ ریستوران‘ کافی شاپ اور چائے خانہ بھی ہے اور رہائش کے لیے بہترین کمرے بھی ہیں‘ گجرات کے ممبرز اور ان کے مہمان بھی ان سہولتوں کو انجوائے کرنے لگے اور حکومت کو بھی ٹیکس کی شکل میں رقم ملنے لگی‘ میں یہاں آپ کو یہ بھی بتاتا چلوں اس جم خانہ پر حکومت کا ایک پیسہ خرچ نہیں ہوا‘ پورا کلب ممبرز کی رقم سے بنا اور اس کو ممبرز ہی چلا رہے ہیں‘ لیاقت چٹھہ اس کے بعدسرگودھا کے ڈی سی بن گئے‘ انہوں نے وہاں بھی ایک سال میں جم خانہ کلب بنا دیا اور یہ بھی پانچ برسوں سے ٹھیک ٹھاک چل رہا ہے‘سرگودھا کے لوگ بھی اس چھوٹے سے شہر میں بڑے شہروں کی سہولتیں انجوائے کر رہے ہیں‘ لیاقت چٹھہ2022ء میں کمشنر بن کر ڈی جی خان چلے گئے‘ یہ وہاں صرف ایک سال رہے اور انہوں نے وہاں بھی کلب کھڑا کر دیا اور یہ اب راولپنڈی آ گئے ہیں اور یہ یہاں بھی کلب بنا رہے ہیں‘ یہ کلب چودھری پرویز الٰہی نے اپنے پہلے دور (2002ء سے 2007ء )میں شروع کیا تھا‘ حکومت نے اس پر اس زمانے میں آٹھ کروڑ روپے بھی خرچ کیے تھے لیکن یہ آج تک مکمل نہیں ہو سکا‘ لیاقت چٹھہ اب اسے مکمل کر رہے ہیں اور اس پر بھی حکومت کا ایک پیسہ خرچ نہیں ہوگا۔

یہ بیوروکریسی کے صرف ایک افسر کے چار’’ اینی شیٹوز‘‘ہیں‘ آپ دیکھ لیں ایک افسر نے سرکار کے خزانے پر بوجھ ڈالے بغیر کس طرح چار اضلاع میں چار جدید ترین کلبز بنا دیے‘ اب سوال یہ ہے یہ کام ملک کے باقی 170اضلاع میں کیوں نہیں ہو سکتا؟ منصوبہ بندی کے وفاقی وزیر احسن اقبال ملک بھر کے ڈی سیز کو اکٹھا کریں‘ کمشنر راولپنڈی لیاقت چٹھہ سے انہیں بریفنگ دلا ئیں‘

یہ اس کے بعد کلبز کا بورڈ بنائیں‘ لیاقت چٹھہ کو اس کا ہیڈ بنائیں اور ایک سال میں ملک کے تمام اضلاع میں جم خانہ کلب بن جائیں گے‘ ان کلبز سے عوام کو بھی سہولتیں ملیں گی اور حکومت کی آمدن میں بھی اضافہ ہو گا‘ دوسرا ملک کے تمام اضلاع میں سرکٹ ہائوسز ہیں‘ یہ سرکاری ریسٹ ہائوسز ہیں‘ حکومت ان پر سالانہ اربوں روپے خرچ کرتی ہے لیکن یہ اس کے باوجود رہائش کے قابل نہیں ہیں‘ حکومت جم خانہ کلبز بنا کر تمام ضلعوں کے سرکٹ ہائوسز ختم کر دے یا یہ بھی کلبز کے حوالے کر دے‘

اس سے اخراجات میں بھی کمی آ جائے گی اور کوالٹی میں بھی اضافہ ہو جائے گا‘تیسرا ہم ہر سال دوسرے ملکوں سے اربوں ڈالر قرض لے کر نئے منصوبوں میں جھونک دیتے ہیں اور پھر ہمیں قرض کی قسطیں ادا کرنے کے لیے بھی قرضے لینا پڑتے ہیں‘ ہم اس مصیبت سے بھی آسانی سے جان چھڑا سکتے ہیں‘ ہم یہ فیصلہ کر لیں ہم اگلے دس سال تک کوئی نیا منصوبہ شروع نہیں کریں گے‘

ہم سب سے پہلے اپنے تمام پرانے منصوبے مکمل اور ایکٹو کریں گے‘ ہم نے جتنی سڑکیں‘ پل‘ انڈر پاسز‘ نہریں اور جھیلیں بنا لی ہیں ہم پہلے انہیں مکمل کریں گے اور اس کے بعد اگر پیسے ہوئے تو ہم نئے منصوبے شروع کریں گے‘ ہم اب قرض کی مے پی کر فاقہ مستی کا جشن نہیں منائیں گے‘ میرا خیال ہے ہم اس سے بھی ملک کو دوبارہ ٹریک پر لے آئیں گے‘

ہمارے پاس ملک میں لاکھوں سکول اور کالجز ہیں‘ آپ کسی دن جا کر ان کی حالت دیکھ لیں آپ کو رونا آئے گا‘ ان میں استاد نہیں ہیں اگر استاد ہیں تو لائبریریاں اور لیبارٹریاں نہیں ہیں اور اگر یہ ہیں تو ان میں گرائونڈز نہیں ہیں لیکن ہم ان پر توجہ دینے کی بجائے ’’سکول آف ویلز‘‘ بنا رہے ہیں‘ وزیراعظم نے دو دن قبل اسلا آباد میں 8بسوں پر مشتمل ایک سکول کا افتتاح کیا‘

یہ سکول بسوں میں بنائے گئے ہیں اور ان پر یقینا دس بیس کروڑ روپے خرچ ہو گئے ہوں گے‘ مجھے یقین ہے یہ منصوبہ بھی بمشکل سال چھ مہینے چلے گا اور اس کے بعد بسیں کسی کباڑ خانے میں اینٹوں پر کھڑی ہوں گی اور عملہ گھر میں بیٹھ کر تنخواہیں اینٹھ رہا ہو گا اور اس کے برعکس اگر یہ منصوبہ سال دو سال چل گیا تو بھی سرکار کے پاس پٹرول‘ بسوں کی مینٹی ننس اور تنخواہوں کی رقم نہیں ہو گی

چناں چہ آپ خودسوچیے اس منصوبے کا کیا فائدہ ہوا؟ کیا ہم نے صرف ایک تختی لگانے یا فیتا کشی کے لیے ڈیفالٹ کے شکار ملک کے مزید دس بیس کروڑ روپے ضائع نہیں کر دیے؟ حکومت اگر یہ رقم اسلام آباد کے نواحی سکولوں کو دے دیتی تو ان میں واش رومز‘ لیبارٹریاں اور لائبریریاں بن جاتیں یا ان کے بجلی کے بل ادا ہو جاتے یا نئے طالب علموں کو نئے استاد مل جاتے لیکن ہم نوٹوں کو آگ لگا کر ہاتھ سینکتے چلے جا رہے ہیں۔

ہمیں اب یہ بھی دیکھنا ہو گا حکومت اربوں روپے سالانہ لگاکر بھی سرکاری سکول نہیں چلا پا رہی جب کہ الخدمت‘ ریڈ فائونڈیشن اور تعمیر ملت جیسی درجنوں این جی اوز تھوڑے سے سرمائے سے ہزاروں سکول بنا اور چلا رہی ہیں‘ کیا یہ لوگ پاکستانی نہیں ہیں اگر ہیں تو پھر یہ کام یاب اور حکومت ناکام کیوں ہے؟ میرا مشورہ ہے حکومت سرکاری سکول بھی مختلف این جی اوز میں تقسیم کر دے‘

یہ کیمپس عملے سمیت این جی اوزکے حوالے کر دے‘یہ سکول چل جائیں گے‘ ملک میں اس وقت 1282ہسپتال بھی موجود ہیں‘ ان میں بھی ڈاکٹرز اور نرسز کی کمی ہے‘ آپریشن تھیٹرز میں بجلی اور سرجیکل آلات تک نہیں ہوتے لیکن حکومت انہیںچلانے کی بجائے دھڑادھڑ نئے ہسپتال بنا رہی ہے‘ کیا یہ قرضوں سے حاصل ہونے والی رقم کا زیاں نہیں ہے؟حکومت کو فوری طور پر یہ سلسلہ بھی بند کر دینا چاہیے‘

یہ نئے ہسپتال بنانے کی بجائے پرانوں کو آپریشنل کرے‘ یہ وہاں ڈاکٹرز اور طبی عملہ پورا کرے اور پھر ہیلتھ سیکٹر کو سینٹرلائزڈ کر دے‘ مریض اپنے موبائل فون سے دیکھ لے اس کی بیماری کا ڈاکٹر کس ہسپتال میں موجود ہے اور یہ کس اور کس وقت فارغ ہو گا‘ مریض یہ بھی دیکھ لیں کس ہسپتال میں کمرہ موجود ہے تاکہ یہ صرف اسی ہسپتال میں جائیں‘ حکومت اس کے بعد 1122 سروس امپروو کر دے تاکہ

مریضوں کو دوسرے شہروں کے ہسپتالوں تک پہنچایا جا سکے‘یہ مسئلہ بھی حل ہو جائے گا‘ حکومت اسی طرح ایک ہی بار بلدیاتی ادارے بھی مضبوط کر کے گلیوں‘ محلوں‘ سڑکوں اور بازاروں کی ذمہ داری انہیں سونپ دے‘ حکومت کوئی اضافی بجٹ نہ دے‘ یہ لوگ مقامی ٹیکسوں کے ذریعے وسائل پیدا کر کے کام چلائیں‘ اس سے بھی ملک چل پڑے گا۔

ہم بجلی اور گیس کے وسائل بڑھانے کے خبط میں بھی مبتلا ہیں جب کہ ہم روز 20 فیصد بجلی اور گیس ضائع کر دیتے ہیں‘ حکومت اگر یہ لیکج روک لے تو بھی مزید بجلی اور گیس کی ضرورت نہیں رہے گی مگر ہم اس پر توجہ کی بجائے قرض لے کر نئے پلانٹ لگا رہے ہیں‘ ہم نئے ڈیمز بھی بنارہے ہیں جب کہ پرانے ڈیمز کھنڈر بن چکے ہیں‘ ہم نئی نہریں بھی کھود رہے ہیں لیکن پرانی نہریں خشک پڑی ہیں‘

ملک میں بیس بیس سال پرانے ترقیاتی منصوبے ادھورے پڑے ہیں لیکن ہم ان پر توجہ کی بجائے روز نیا فیتا کاٹ دیتے ہیں‘ اس سے کیا فائدہ ہو رہا ہے؟ میری درخواست ہے وزارت منصوبہ بندی ملک بھر کے ادھورے منصوبوں کا ڈیٹاجمع کرے اور پھر بیوروکریٹس سے درخواست کرے جناب آپ ان منصوبوں کو فوری طور پر مکمل بھی کر دیں اور ایکٹو بھی‘ ہم نے جس زمین پر زیتون کاشت کرنا تھا اس پر زیتون کے پودے ہونے چاہییں‘

ہم نے جہاں نہر کھودی تھی اس میں پانی ہونا چاہیے اور ہم نے جو سکول‘ کالج اور ہسپتال بنایا تھا اسے آباد ہونا چاہیے اوراگر یہ عمارتیں فنکشنل نہیں ہیں تو پھر انہیں فوری طور پر نیلام کر دیں یا پھر کسی دوسرے محکمے کے حوالے کر دیں‘ ملک میں اب آگا دوڑ اور پیچھا چھوڑ کا یہ سلسلہ بندہونا چاہیے۔

میری حکومت سے درخواست ہے آپ مہربانی فرما کر نئے ترقیاتی منصوبوں پر پابندی لگا دیں‘آپ پہلے پرانے مکمل کریں‘ بیوروکریسی کو ٹارگٹ دیں اور ان سے تکمیل کرائیں‘ لیاقت چٹھہ جیسے لوگوں کے کام یاب ماڈلز کی ترویج کریں‘ملک پھر چلے گا ورنہ ہم اسی طرح قبرستانوں میں سولر پینل لگاتے رہیں گے اور ملک قرضوں میں ڈوبتا چلا جائے گا۔



کالم



ٹینگ ٹانگ


مجھے چند دن قبل کسی دوست نے لاہور کے ایک پاگل…

ایک نئی طرز کا فراڈ

عرفان صاحب میرے پرانے دوست ہیں‘ یہ کراچی میں…

فرح گوگی بھی لے لیں

میں آپ کو ایک مثال دیتا ہوں‘ فرض کریں آپ ایک بڑے…

آئوٹ آف دی باکس

کان پور بھارتی ریاست اترپردیش کا بڑا نڈسٹریل…

ریاست کو کیا کرنا چاہیے؟

عثمانی بادشاہ سلطان سلیمان کے دور میں ایک بار…

ناکارہ اور مفلوج قوم

پروفیسر سٹیوارٹ (Ralph Randles Stewart) باٹنی میں دنیا…

Javed Chaudhry Today's Column
Javed Chaudhry Today's Column
زندگی کا کھویا ہوا سرا

Read Javed Chaudhry Today’s Column Zero Point ڈاکٹر ہرمن بورہیو…

عمران خان
عمران خان
ضد کے شکار عمران خان

’’ہمارا عمران خان جیت گیا‘ فوج کو اس کے مقابلے…

بھکاریوں کو کیسے بحال کیا جائے؟

’’آپ جاوید چودھری ہیں‘‘ اس نے بڑے جوش سے پوچھا‘…

تعلیم یافتہ لوگ کام یاب کیوں نہیں ہوتے؟

نوجوان انتہائی پڑھا لکھا تھا‘ ہر کلاس میں اول…

کیا یہ کھلا تضاد نہیں؟

فواد حسن فواد پاکستان کے نامور بیوروکریٹ ہیں‘…